Friday | 03 July 2020 | 11 Dhul-Qidah 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4992.75$354.57$886.43

Fatwa Answer

Question ID: 1000 Category: Social Dealings
Division of Property

Assalamualaikum,

 I have a question of divide the Property, Cash and My elder brother belongings.

My Elder brother died on duty in the last month. He was employed of Central Govt and there is no Pention or any amount to recieve  on monthly basis from Government, for his wife.

He don't have childrens, and his nearest family members are Mother & Father (Father retired Govt employee getting monthly incme of Pention), 2 Brothers married and one Sister married all are settled.

Propety Holding are

(1) House ground floor + 1 (G+1).

In Ground floor My elder brother Widow and our or  Elder brother Mother and Father are staying in Ground Floor.  They are getting Rent monthly basis for First floor.

(2) Open plot or land without construction, no income.

(3) Since my Elder brother was employeed. We will get Benefit on shape of Cash, but how much so for not confirmed.

There is some credit to pay also.

Please send answer the above question (Urdu and English Language) with the reference of Islamic Shariah. 

الجواب وباللہ التوفیق

In the situation inquired about, after taking care of حقوق متقدمہ علی الارث (the payment of the expenses of the shroud and the burial, payment of any debt, and enforcement of the will for any permissible work from one third of the inheritance), the remaining wealth will be divided into twelve portions, of which the wife would get three portions, the mother sixth portion, the remaining seven portions should be given to the father. The brothers and sisters will not be eligible of receiving share in the inheritance in the presence of the closest relatives (i.e., in the presence of the mother and father). The amount to be received afterwards due to the deceased being the government employee is to be distributed according to the same way.

وَلِأَبَوَيْهِ لِكُلِّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَكَ إِنْ كَانَ لَهُ وَلَدٌ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ لَهُ وَلَدٌ وَوَرِثَهُ أَبَوَاهُ فَلِأُمِّهِ الثُّلُثُ فَإِنْ كَانَ لَهُ إِخْوَةٌ فَلِأُمِّهِ السُّدُسُ مِنْ بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِي بِهَا أَوْ دَيْنٍ  ۔  وَلَهُنَّ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْتُمْ إِنْ لَمْ يَكُنْ لَكُمْ وَلَدٌ ۔ (سورہ نساء :۱۱ -۱۲ )۔

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 1000 Category: Social Dealings
جائیداد کی تقسیم

السلام علیکم

میرا سوال جائیداد ، نقدی اور میرے بڑے بھائی کی ملکیتی چیزوں کی تقسیم کے بارے میں ہے میرے بڑے بھائی کا پچھلے مہینے ملازمت پر انتقال ہوگیا۔ وہ مرکزی حکومت کے ملازم تھے اور ان کی بیوہ کے لیے ماہانہ کوئی پنشن یا کوئی اور رقم موصول ہونے کی کوئی صورت نہیں، ان کے بچے نہیں ہیں اور ان کے قریبی رشتہ داروں  میں والد (گورنمنٹ کے ریٹائرڈ ملازم، انہیں ماہانہ پنشن مل رہی ہے) والدہ، دو شادی شدہ بھائی اور ایک شادی شدہ بہن جو سب اپنے پاؤں پر کھڑے ہیں ، جائیداد : ایک دو منزلہ گھر، نچلی منزل میں بڑے بھائی کی بیوہ اور ہمارے والدین رہتے ہیں اور وہ دوسری منزل کا ماہانہ کرایہ حاصل کررہے ہیں ۔ (۲)زمین کا ایک پلاٹ غیر تعمیر شدہ جس سے کوئی آمدنی نہیں ۔(۳)کیونکہ ہمارے بڑے بھائی ملازم تھے انہیں نقد کچھ رقم ملے گی لیکن ابھی پتہ نہیں کتنی۔(۴)کچھ قرض ادا کرنا باقی ہے۔

برائے مہربانی اسلامی شریعت کی روشنی میں جواب دیجئے۔

    الجواب وباللہ التوفیق

بشرطِ صحتِ سوال بعد ادائے حقوقِ متقدمہ(تجہیز و تکفین،قرض ہو تو قرض کی ادائیگی اور وصیت کی ہو تو اس کے نفاذ کےبعد)میت کے کل مال  (جائداد،نقد روپیہ ،سازوسامان  اور کرایہ )کے کل  12حصے کئے جائیں، جن میں سے زوجہ کو 3 حصے ،والدہ کو چھٹا حصہ، مابقیہ  سات حصے والد کو دیے جائیں۔میت کے بھائی بہن اقرب (ماں باپ کی موجودگی )کے سبب وراثت کے حقدار نہیں ہوں گے۔سرکاری ملازم ہونے کی وجہ سے جو رقم بعد میں ملنے والی ہے  اس کی تقسیم بھی اسی مذکورہ ترتیب کے مطابق ہوگی۔

وَلِأَبَوَيْهِ لِكُلِّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَكَ إِنْ كَانَ لَهُ وَلَدٌ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ لَهُ وَلَدٌ وَوَرِثَهُ أَبَوَاهُ فَلِأُمِّهِ الثُّلُثُ فَإِنْ كَانَ لَهُ إِخْوَةٌ فَلِأُمِّهِ السُّدُسُ مِنْ بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِي بِهَا أَوْ دَيْنٍ  ۔  وَلَهُنَّ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْتُمْ إِنْ لَمْ يَكُنْ لَكُمْ وَلَدٌ ۔ (سورہ نساء :۱۱ -۱۲ )

واللہ اعلم بالصواب