Wednesday | 24 April 2019 | 18 Shabaan 1440

Fatwa Answer

Question ID: 103 Category: Business Dealings
Did Divorce Take Effect?

Assalamualaikum Warahmatullah 

If a person tells his wife that “There is no need for you, and you are not needed”, what effect would that statement have over their Nikah. Would a divorce take place due to this statement? If yes, what should be done in that situation?

Walaikumassalam Warahmatullah

الجواب وباللہ التوفیق

It has been mentioned in Fatawah Darululoom that such statements are considered figurative speech and the ruling about them in the Islamic Shari‘ah is if the person had an accompanying intention to divorce his wife by making this statement, the divorce would take effect. If he did not have an intention to divorce his wife thorugh this statement then the divorce would not take effect. The husband should be enquired about his statement and if he did not have an intention to divorce then the divorce would not take place. If however, he did have the intention to divorce then the wife will become divorced through one Talaq-e-Ba‘in (irrevocable divorce). In this case, there is no ruju (i.e. reconciliation) however if you want to live together, you can do so by performing Nikah with a new mehr amount.

لایقع الطلاق بشي من الکنایات إلابالنیۃکذا لوقال لا حاجۃ لی فیک (خانیۃ علی ہامش الہندیۃ زکریا ۱/۴۶۸)جدید۱/۲۸۴)

وَمِثْلُهُ قَوْلُهُ لَمْ أَتَزَوَّجْك أَوْ لَمْ يَكُنْ بَيْنَنَا نِكَاحٌ ، أَوْ لَا حَاجَةَ لِي فِيك بَدَائِعُ لَكِنْ فِي الْمُحِيطِ ذَكَرَ الْوُقُوعَ فِي قَوْلِهِ عِنْدَ سُؤَالِهِ .قَالَ : وَلَوْ قَالَ : لَا نِكَاحَ بَيْنَنَا يَقَعُ الطَّلَاقُ وَالْأَصْلُ أَنَّ نَفْيَ النِّكَاحِ أَصْلًا لَا يَكُونُ طَلَاقًا بَلْ يَكُونُ جُحُودًا وَنَفْيُ النِّكَاحِ فِي الْحَالِ يَكُونُ طَلَاقًا إذَا نَوَى وَمَا عَدَاهُ فَالصَّحِيحُ أَنَّهُ عَلَى هَذَا الْخِلَافِ (رد المحتار:۱۱/۱۲۴)

قولہ لایلحق البائن البائن۔ (ہندیۃ، کتاب الطلاق، الفصل الخامس، فی الکنایات، قدیم۱/۳۷۷)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 103 Category: Business Dealings
کیا طلاق واقع ہو گئی؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

اگر کوئی شخص اپنی بیوی سے یہ کہے کہ "تمہاری ضرورت نہیں ہے اور تم نہیں چاہئے ہو"، تو ایسے جملے کا نکاح کے اوپر کیا اثر پڑے گا؟ کیا اس جملے سے طلاق واقع ہو جاتی ہے؟ اگر ہاں تو براہ کرم راہنمائی فرمائیے کہ ہمیں اس صورت میں کیا کرنا چاہئے۔ 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

فتاویٰ دارالعلوم میں لکھا ہے کہ یہ جملے الفاظِ کنائی میں سے ہیں،اور اس طرح کے جملوں کے بارے میں شرعی حکم یہ ہےکہ اگر ان الفاظ کے کہنے کے وقت طلاق کی نیت ہو تو طلاق واقع ہوجاتی ہے،اور اگر طلاق کی نیت نہ ہو تو طلاق واقع نہیں ہوتی۔شوہر سے اس بابت دریافت کرلیاجائے ،اگر اس کی نیت طلاق کی نہ ہوتو طلاق واقع نہیں ہوگی،اور طلاق کی نیت کی ہوتو ایک طلاق بائن زوج مذکور کی بیوی پر واقع ہوگی،اس صورت میں رجوع تو نہیں کیا جاسکتا البتہ اگر آپ دونوں ساتھ رہنا چاہ رہے ہوں تو مہر جدید کے ساتھ دوبارہ نکاح کیا جاسکتا ہے۔

لایقع الطلاق بشي من الکنایات إلابالنیۃکذا لوقال لا حاجۃ لی فیک (خانیۃ علی ہامش الہندیۃ زکریا ۱/۴۶۸)جدید۱/۲۸۴)

وَمِثْلُهُ قَوْلُهُ لَمْ أَتَزَوَّجْك أَوْ لَمْ يَكُنْ بَيْنَنَا نِكَاحٌ ، أَوْ لَا حَاجَةَ لِي فِيك بَدَائِعُ لَكِنْ فِي الْمُحِيطِ ذَكَرَ الْوُقُوعَ فِي قَوْلِهِ عِنْدَ سُؤَالِهِ .قَالَ : وَلَوْ قَالَ : لَا نِكَاحَ بَيْنَنَا يَقَعُ الطَّلَاقُ وَالْأَصْلُ أَنَّ نَفْيَ النِّكَاحِ أَصْلًا لَا يَكُونُ طَلَاقًا بَلْ يَكُونُ جُحُودًا وَنَفْيُ النِّكَاحِ فِي الْحَالِ يَكُونُ طَلَاقًا إذَا نَوَى وَمَا عَدَاهُ فَالصَّحِيحُ أَنَّهُ عَلَى هَذَا الْخِلَافِ (رد المحتار:۱۱/۱۲۴)

قولہ لایلحق البائن البائن۔ (ہندیۃ، کتاب الطلاق، الفصل الخامس، فی الکنایات، قدیم۱/۳۷۷)

فقط واللہ اعلم بالصواب