Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 106 Category: Permissible and Impermissible
Should We Call it Haleem?

Assalamualaikum Warahmatullah 

Dear mufti sahib, there is a video and message circulating on the social media in which people are telling others that calling this dish “Haleem” as Haleem is considered incorrect and sinful. They are making the case that since Haleem is the name of Allah Subhanahu Wa Ta‘ala, it is incorrect to call a food with the same name, instead they are suggesting to call it “Daleem”. The issue is, we have been eating this dish Haleem for so long especially during the month of Ramadhan, but are now worried that are we being sinful and should we not call this dish by this name anymore?

JazakAllahu Khaira

Walaikumassalam Warahmatullah

الجواب وباللہ التوفیق

Haleem is a common noun and such words can have several different meanings. The context in which a word is used defines its true and appropriate meanings. Since Haleem is a name of a dish, the use of the word Haleem in that context is correct. Such examples can be found in general Arabic language as well is in the Quran. Allah Subhanahu Wa Ta‘ala has used this word for his creation in the Quran as well, which is a proof in itself that this word can be used for things or objects and not just with Allah Subhanahu Wa Ta‘ala. However, out of taqwa (being precautious) and the respect and reverence for the name of Allah Subhanahu Wa Ta‘ala, if someone wants to use another name for this dish, then that will be considered preferable. A similar question as this has been answered in much detail previously, please search for Question ID 118 for more details.

من الأسماء التوقیفیۃ عَلَم، ومنہا ألقاب وأوصاف وترجمۃ اللفظ بمنزلتہ، فالأسماء العجمیۃ ترجمۃ تلک الألقاب والأوصاف، ولذا انعقد الإجماع علی إطلاقہا، نعم لا یجوز ترجمۃ العَلَم، فاللّٰہ علم والباقي ألقاب وأوصاف بخلاف المرادف العربي للأسماء العربیۃ؛ لأنہا لا ضرورۃ إلی إطلاقہا فلا یؤذن فیہا، أما العجم فیحتاجون إلی الترجمۃ للسہولۃ في الفہم۔ (الیواقیت والجواہر لعبد الوہاب الشعراني ص: ۷۸ مصر، وکذا في إمداد الفتاویٰ / مسائل شتی ۴؍۵۱۳ دار العلوم کراچی)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 106 Category: Permissible and Impermissible
کیا اس کھانے کی ڈش کو حلیم کہنا صحیح ہے؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

مفتی صاحب آج کل سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو اور میسج چلایا جا رہا ہے جس میں "حلیم" نامی کھانے کو حلیم کہنا غلط اور گناہ بتایا جا رہا ہے۔ ان لوگوں کا کہنا یہ ہے کہ چونکہ حلیم اللہ تعالی کے ناموں میں سے ایک ہے لہذا ہمیں اک کھانے کو اسی نام سے نہیں پکارنا چاہئے بلکہ اس کو "دلیم " کے نام سے پکارنا چاہئے۔ ہم لوگ اک زمانے سے یہ ڈش کھاتے آ رہے ہیں خاص کر رمضان شریف میں اور اب یہ پریشانی لاحق ہے کہ ہم سے کوئی گناہ سرزد ہوگیا اور کیا واقعی ہمیں اس کو حلیم کے نام سے نہیں پکارنا چاہئے۔

جزاک اللہ خیرا ۔

 

 

 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

”حلیم“ اسمائے مشترکہ میں سے ہے، اور ایک لفظ کے متعدد معنی ہوسکتے ہیں،البتہ جہاں جو قرینہ ہوتا ہے وہاں وہی معنیٰ مراد ہوتے ہیں،چونکہ یہ ایک قسم کی ڈش کا نام ہے اس لئے اس کےلئے اس لفظ کا استعمال درست ہے، ، عربی میں اور قرآن پاک میں اس کی نظیریں موجود ہیں،االلہ پاک نے قرآن مجید میں یہ لفظ اپنی مخلوق کے لئے بھی استعمال کیا ہے،جو خود اس اسم کےا للہ کے علاوہ کسی اور کے لئے استعمال کے جواز کی دلیل ہے۔ہاں اگر کوئی شخص از راہِ تقویٰ للہ پاک اسم مبارک کے احترام اور عظمت کی وجہ سے حلیم کی جگہ کوئی اور نام، استعمال کرے تو یہ بہتر ہے۔اس طرح کےسوال کا قدرے تفصیلی جواب سوال نمبر ۱۱۸ میں موجود ہے،کچھ تفصیل وہاں بھی ملاحظہ کرسکتے ہیں۔

من الأسماء التوقیفیۃ عَلَم، ومنہا ألقاب وأوصاف وترجمۃ اللفظ بمنزلتہ، فالأسماء العجمیۃ ترجمۃ تلک الألقاب والأوصاف، ولذا انعقد الإجماع علی إطلاقہا، نعم لا یجوز ترجمۃ العَلَم، فاللّٰہ علم والباقي ألقاب وأوصاف بخلاف المرادف العربي للأسماء العربیۃ؛ لأنہا لا ضرورۃ إلی إطلاقہا فلا یؤذن فیہا، أما العجم فیحتاجون إلی الترجمۃ للسہولۃ في الفہم۔ (الیواقیت والجواہر لعبد الوہاب الشعراني ص: ۷۸ مصر، وکذا في إمداد الفتاویٰ / مسائل شتی ۴؍۵۱۳ دار العلوم کراچی)

فقط واللہ اعلم بالصواب