Friday | 20 April 2018 | 4 Shabaan 1439

Fatwa Answer

Question ID: 116 Category: Social Dealings
Covering Head in Front of Mehram

Assalamualaikum Warahmatullah 

I have heard that it is not permissible for women to uncover their head in front of their mehrams and should be covered at all times even at home. Please let me know as soon as possible if this is the correct ruling in this matter.

JazakAllahu Khaira

الجواب وباللہ التوفیق

Walaikumassalam Warahmatullah

If namehram relatives are living in the same house, such as cousin brothers (maternal or paternal) then you should always cover your head in the house as well. It is impermissible to come in front of them without covering your head. However, if only your husband or other mehram relatives are living in your house, then there is provision of the permissibility to keep your head uncovered. This permissibility is provided that one is safe from the lust of the mehram individuals. Since it is an era full of fitnah, keeping one’s head uncovered constantly leads to becoming a habit which can lead to a feeling of forgetfulness altogether and the differentiation between mehram and namehram becomes faded. Therefore, it is recommended and the path of caution to cover your head while you are at home.

’’ ینظرالرجل ۔۔۔ من محرمہ الی الرأس و الوجہ ألخ‘‘ (۱) الدر المختار مع الرد : ۹/۵۲۴ )

ومن محرمہ ہي من لا یحل لہ نکاحہا أبدًا بنسب أو سبب․․ إلی الرأس والوجہ والصدر والساق والعضد إن أمن شہوتہ وشہوتہا أیضًا․․․ وإلا لا (درمختار)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 116 Category: Social Dealings
محرم کے سامنے سر ڈھکنے کا حکم

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

میں نے یہ سنا ہے کہ خواتین کو ننگے سر اپنے نا محرموں کے سامنے بھی نہیں آنا چاہئے، اور سر ہر وقت ڈھک کر رکھنا چاہئے، حتی کہ گھر پر بھی۔ جلد از جلد اس بات کا جواب دے دیں کہ کیا یہ صحیح ہے یا اس سلسلے میں فتوی کچھ مختلف ہے۔

جزاک اللہ خیرا 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

اگر گھر میں غیر محرم جیسے چچازاد ، خالہ زاد ، ماموں زاد بھائی رہتے ہوں ، تو گھر میں سر ڈھک کر ہی رہنا چاہیے،کھلے سر ان کے سامنے آنے کی اجازت نہیں۔ہاں اگر گھر میں صرف شوہر اور محرم رشتہ دار ہوں تو سر کھلا رکھنے کی گنجائش ہے ۔یہ اس وقت ہے جب کہ محارم کی شہوت سے مامون ہوں،لیکن چونکہ فتنوں کا زمانہ ہے، اس کےعلاوہ اگر کھلے سر رہنے کی عادت بن جائےتو پھر بے خیالی کی کیفیت پیدا ہوجاتی ہے، اور محرم و غیر محرم کا فرق بھی رخصت ہوجاتا ہے۔ اس لئے احتیاط گھر کے اندر بھی سر ڈھک کر رہنے میں ہی ہے ۔

’’ ینظرالرجل ۔۔۔ من محرمہ الی الرأس و الوجہ ألخ‘‘ (۱) الدر المختار مع الرد : ۹/۵۲۴ )

ومن محرمہ ہي من لا یحل لہ نکاحہا أبدًا بنسب أو سبب․․ إلی الرأس والوجہ والصدر والساق والعضد إن أمن شہوتہ وشہوتہا أیضًا․․․ وإلا لا (درمختار)فقط واللہ اعلم بالصواب، محمد عطاء الرحمن۔ مفتی محمد عطاء الرحمن۔۱۷ محرم الحرام،۱۴۳۹ھ۔