Monday | 19 August 2019 | 18 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 148 Category: Business Dealings
Divorce through Figurative Speech

Assalamualaikum Warahmatullah

Almost an year back, I said something to my husband over a phone call which made him mad and he made the statement “By Allah, if you did it again, those words will come out of my mouth. He then made a few more statements e.g. I had told you not to repeat it but why did you repeat it again? Then he said that if you repeat this then those three words. After a few moments he also said, you will listen to something that you will have to cry for the rest of your life, cry for the rest of your life. Please guide me regarding this situation. Was this just a warning from him or was it a conditional divorce? If this is a conditional divorce then how many divorces will take effect, one or more? I tried to inquire regarding his intention from him but he does not remember this incident. Please guide me regarding this situation, should I push him further to try and recall or should I now keep quite?

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

The statement made by your husband i.e. ““By Allah, if you did it again, those words will come out of my mouth” is a threat, a divorce does not take effect as a result of a threat. The sentences uttered by him after that are ambiguous i.e. it is unclear if they are threats, talaq-e-mu‘allaq (conditional divorce) or something else, until the clarification for those statements is provided, a ruling cannot be rendered.

Therefore, you should try and think of what those sentences actually were and then resend a question to get an answer accordingly.

فقط واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 148 Category: Business Dealings
اشارے یا کنائے کے ذریعہ دی گئی طلاق کا حکم

السلام علیکم

قریب ایک سال پہلے میں نےاپنے شوہر کے فون آنے پر کچھ ایسا کیا یا کہاجس سے وہ غصہ میں آگئے اور انہوں نے یہ الفاظ کہے کہ خدا کی قسم اب تم نے یہ کیا تو وہ لفظ میرے منھ سے نکل جائیں گے پھر انہوں نے غصہ میں چند جملے کہے مثلا  کہا بھی تھا کہ اس طرح مت کرنا تم نے پھر ویسا ہی کیا پھر انہوں نے کہا کہ اب تم نے کیا تو وہ تین لفظ ،چند لمحوں بعد انہوں نے یہ بھی کہا کہ تم کچھ ایسا سن لوگی پھر تمہیں ساری زندگی رونا پڑے گا ،ساری عمر رونا پڑے گا ۔ برائے کرم اس سلسلہ میں رہنمائی فرما دیجئے۔ کیا یہ صرف ایک دھمکی تھی یا واقعتا یہ طلاق معلق ہے یا ایسی طلاق ہے جس میں کوئی کنڈیشن یا شرط لگادی گئی ہو طلاق کے واقع ہونے کیلئے اور اگر یہ کنڈیشنل طلاق ہے تو اس میں کتنی طلاقیں واقع ہوئیں کیا ایک یا ایک سے زائد ، میں ان سے ان کی نیت کے بارے میں پوچھنا چاہا لیکن ان کو یہ واقعہ یاد ہی نہیں ہے برائے مہربانی اس سلسلہ میں میری رہنمائی فرمادیجئے ۔اور ان کو میں کتنا مجبور کروں اس چیز پے کہ اس واقعہ کو یاد کریں اپنے ذہن پر زور ڈال کر یا پھر اس سلسلہ میں خاموشی اختیار کی جائے۔

 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ

الجواب وباللہ التوفیق

صورت مسؤلہ میں مندرجہ بالا جملہ(اب تم نے یہ کیا تو وہ لفظ میرے منھ سے نکل جائیں گے) دھمکی ہےاس سے طلاق واقع نہیں ہوتی،،اور اس کے بعد کے جملے غیر واضح ہیں،وہ دھمکی ہیں یا طلاق ِمعلق ،یا کچھ اور ،جب تک ان کی وضاحت نہ ہوان کا حکم بتانا مشکل ہے،اس لئے ان کو یاد کیاجائےاگر یاد آجائیں توان جملوں کی وضاحت کرکے مسئلہ معلوم کرلیں۔

فقط واللہ اعلم بالصواب