Tuesday | 23 October 2018 | 14 Safar 1440

Fatwa Answer

Question ID: 228 Category: Miscellaneous
Dealing with Inner Insecurities

Assalamualaikum

I am trying my best to walk on the right path however, I can not refrain myself from making comments that might hurt others. I really want to stop doing that. I make comments that I know might hurt the person infront of me and yet I still do it. How should I stop?

I am dealing with inferority complex. Please help me overcome it. I want to be positive and think positive but at times I can't. 

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

Any statement that you make in front of someone, if it is necessary to make and is the truth, and by keeping quiet (or not mentioning it) there is a possibility of facing loss from a worldly or hereafter standpoint, then it should be mentioned. However, you should maintain positive mannerism, be polite, use kind words and consider the stature (and due respect) of the person you are talking to. InshahAllah, in this manner, the conflict will not arise. If however, there is no loss (from this world or hereafter standpoint) in keeping quite then one can remain quiet and distance one’s self from such a gathering.

A person who suffers from inferiority complex, only him (or her) is to blame for it. Allah Subhanahu Wa Ta‘ala has provided the rectification of such inferiority complex in a person’s own hands. The first step towards such rectification is to remove the fear and unnecessary concern regarding makhlooq (creation) from your heart. Ensure that when you are taking a step towards righteousness, then you should not be worried about others’ objections. Remain steadfast, keep your braveness at its peak, bring firmness in your intentions and actions, InshahAllah this issue will get rectified.

Wasallam

Question ID: 228 Category: Miscellaneous
اندرونی خلفشار سے مقابلے کا طریقہ

السلام علیکم

میں سیدھے راستے پر چلنے کی اپنی طرف سے پوری کوشش کر رہا ہوں ، البتہ میں اس چیز سے نہیں رک پاتا ہوں کہ دوسروں کے بارے میں ایسی بات کہہ دوں جو ان کو تکلیف پہنچا دے، میں اپنے اس رویے کو فوری تبدیل کرنا چاہتا ہوں۔ حالانکہ ایسی بات کہنے سے قبل مجھے اندازہ بھی ہوتا ہے کہ میری بات سے سامنے والے کو تکلیف پہنچ سکتی ہے، پھر بھی وہ بات کہہ گزرتا ہوں۔ میں اس عمل سے اپنے آپ کو کیسے روک سکتا ہوں؟ میں احساس کمتری کا بھی شکار ہوں، براہ کرم میری اس مسئلے پر قابو پانے میں مدد فرما دیں۔ میں مثبت انداز سے سوچنا اور عمل کرنا چاہتا ہوں لیکن اکثر ایسا نہیں کر پاتا ہوں۔

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

جو بات آپ کسی کے سامنے کہتے ہیں اگر وہ ضروری اورحق بات ہے اس پر خاموش ہونے میں دین یا دنیا کا نقصان ہے تو اس کو کہنا چاہیے،لیکن اس کے کہنے میں نرمی اختیار کریں،لہجہ مودبانہ ہو،الفاظ شائستہ ہوں،اور سامنے والے کی عزت اور احترام بھی ہوتو ان شاء اللہ جھگڑا پیدا نہیں ہوگا۔اگر اس سے دین یا دنیا کا نقصان نہیں ہے اور اس پر خاموشی اختیار کی جاسکتی ہے تو خا موش ہوجائیں اور جھگڑے سے بچنے کے لئے اس مجلس کو چھوڑدیں۔

احساس کمتری آدمی کا ذمہ دار خود انسان ہوتا ہے،اور اس کا توڑ بھی اللہ نے اسی کے ہاتھ میں رکھا ہے،اس کے لئے آپ اولا مخلوق کا ڈر اور بےجا ان کی رعایت دل سے نکالیں،اپنے کسی عمل میں جب کہ وہ حق ہو کسی طعنہ اور اعتراض کرنے والوں پر توجہ نہ دیں،اور اس پر استقامت کے ساتھ جمے رہیں،اپنی ہمت بلند رکھیں، ارادوں میں پختگی پیدا کریں،اور اس پر مضبوطی سے جم کر عمل پیراں ہوجائیں ،انشاء اللہ آپ کی یہ شکایت دور ہوجائے گی۔

فقط والسلام