Thursday | 15 November 2018 | 7 Rabiul-Awal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 243 Category: Worship
Fasting While in Travel

Assalamualaikum,

I am traveling from Chicago to Las Vegas during the month of Ramadhan for a conference, which will last for 3 days. I will be standing on my company's booth speaking with several visitors. My plane journey will start a little late in the day and I will land late at night in Las Vegas and after spending 3 days I will board a plane around the Iftar time for coming back to Chicago.

My question is, is it permissible to skip fasting for these day 4 days while I will be in travel?

JazakAllahu Khaira

 

الجواب وباللہ التوفیق

There is a provision of permissibility to not fast while in travel however the missed fasts shall be made up for later by keeping that number of fasts. However, if there is a chance of refraining from excessive difficulty during the travel, then it is better to fast. Second point is that the day you are starting your travel from home, if your intention is to travel after dawn, then you will be considered muqeem at that time (i.e. stationed at your location of origin and not in transit), and therefore, it is necessary to fast that day and to take it to completion. If one has to break a fast due to hardship in one's travel then only qadha (of that one fast) will be mandatory and not the kaffarah.

منها السَّفَرُ الذي يُبِيحُ الْفِطْرَ وهو ليس بِعُذْرٍ في الْيَوْمِ الذي أَنْشَأَ السَّفَرَ فيه كَذَا في الْغِيَاثِيَّةِ فَلَوْ سَافَرَ نَهَارًا لَا يُبَاحُ له الْفِطْرُ في ذلك الْيَوْمِ وَإِنْ أَفْطَرَ لَا كَفَّارَةَ عليه

(فتاویٰ ہندیۃ: الْبَابُ الْخَامِسُ في الْأَعْذَارِ التي تُبِيحُ الْإِفْطَارَ ،1/۲۰۶)

المسافر سفرا شرعیا ولو بمعصیۃ ۔۔۔۔ الفطر ۔۔۔۔ویندب لمسافر الصوم لاٰیۃ : ’’ وان تصوموا خیر لکم‘‘ والخیر بمعنی البر ، لا أفعل تفضیل ان لم یضرہ فان شق علیہ ۔۔۔۔ فاطر أفضل ۔

( الدر المختار ، ج:۲،ص:۴۲۱،۴۲۳)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 243 Category: Worship
سفر کے دوران روزہ رکھنے کا حکم

السلام علیکم

میں ماہ رمضان میں سفر پر جا رہا ہوں جہاں مجھے ایک کانفرنس کے دوران ۳ روز تک ایک بوتھ پر کھڑے رہ کر لوگوں کو تکنیکی تفصیلات وغیرہ سے آگاہ کرنا ہوگا۔ میرا سفر دن کے دوسرے حصے میں شروع ہو گا اور میں اپنے مقام پر رات دیر سے پہنچوں گا۔ ۳ روز بعد، گھر آنے کے لئے میں پھر جہاز میں افطار سے قبل چڑھوں گا۔ سوال یہ ہے کہ کیا ان ۴ دنوں میں سفر کے دوران میرے لئے روزے چھوڑنا جائز ہوگا؟

الجواب وباللہ التوفیق

اگر آپ حالت سفر میں روزے ترک کردیں تو اس کی گنجائش ہے لیکن بعد میں اتنے روزوں کی قضاء ضروری ہے، لیکن اگر غیر معمولی مشقت کا اندیشہ نہ ہو تو روزہ رکھنا افضل ہے۔دوسری بات یہ ہےکہ جس دن آپ گھر سے سفر شروع کررہے ہیں اگر صبح صادق کے بعد سفر کا ارادہ ہے تو چونکہ اس وقت آپ مقیم ہوں گے اس لئے اس دن روزہ رکھنا اور اس کو پورا کرنا ضروری ہے،اگر سفر میں مشقت کی وجہ سے روزہ توڑدیاجائے تو اس کی صرف قضاء لازم ہوگی کفارہ نہیں۔

منها السَّفَرُ الذي يُبِيحُ الْفِطْرَ وهو ليس بِعُذْرٍ في الْيَوْمِ الذي أَنْشَأَ السَّفَرَ فيه كَذَا في الْغِيَاثِيَّةِ فَلَوْ سَافَرَ نَهَارًا لَا يُبَاحُ له الْفِطْرُ في ذلك الْيَوْمِ وَإِنْ أَفْطَرَ لَا كَفَّارَةَ عليه

(فتاویٰ ہندیۃ: الْبَابُ الْخَامِسُ في الْأَعْذَارِ التي تُبِيحُ الْإِفْطَارَ ،1/۲۰۶)

المسافر سفرا شرعیا ولو بمعصیۃ ۔۔۔۔ الفطر ۔۔۔۔ویندب لمسافر الصوم لاٰیۃ : ’’ وان تصوموا خیر لکم‘‘ والخیر بمعنی البر ، لا أفعل تفضیل ان لم یضرہ فان شق علیہ ۔۔۔۔ فاطر أفضل ۔

( الدر المختار ، ج:۲،ص:۴۲۱،۴۲۳)

فقط واللہ اعلم بالصواب