Friday | 16 November 2018 | 8 Rabiul-Awal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 251 Category: Worship
Arrangement for Salah for Ladies

Assalamualaikum,

May I please know if there are any arrangments of salah for ladies in Northwestern masjid?

JazakAllah

الجواب وباللہ التوفیق 

We have no knowledge about the details of this mosque you have mentioned in your question. However, it should be noted that it is unadvisable for females to go to the mosques during this era which is full of fitnah (trials and tribulations), immodesty and prevalance of wrongdoings and sins. The permissibility for women to come to the mosque during the time of Rasulullah Sallallaho 'Alyhi Wasallam was conditional, and Rasulullah Sallallaho 'Alyhi Wasallam had specified the details of those conditions. Those conditions are absolutely missing nowadays from the societies we are living in. Furthermore, that era is considered khairul-quroon (i.e. the best of the times there ever will be). Due to the spread of perversion and corruption in later times, even the Sahabah Kiram Rizwanullah Ta'ala 'Alyhim Ajma'een used to stop the women from coming to the mosque. Hazrat Umar RaziAllah Ta'ala 'Anhu had announced during his time that women shall not come to the mosque. In addition, the statement of Hazrat Ayesha RaziAllah Ta'ala 'Anha as mentioned in Saheeh al-Bukhari is that if Rasulullah Sallallaho 'Alyhi Wasallam saw these conditions, then he would have stopped the women from coming to the mosque. It is the goal of the Islamic Shari’ah that the women should only pray their salah at home and not in the mosque, there is more reward in it for them. Therefore, the women should perform their salah in their homes. 

عن عائشة رضي الله عنها قالت : لو أدرك رسول الله صلى الله عليه و سلم ما أحدث النساء لمنعهن كما منعت نساء بني إسرائيل . قلت لعمرة أو منعهن ؟ قالت نعم

ت:( ما أحدث النساء ) من إظهار الزينة ورائحة الطيب وحسن الثياب ونحو ذلك . ( لمنعهن ) في نسخة ( لمنعهن المسجد ) أي لمنعهن من الخروج إلى المساجد وهن على هذه الحالة . ( أو منعهن ) أي نساء بني إسرائيل ](صحیح بخاری:کتاب صفہ الصلاۃ،۸۳۱)

’’عن عبداللہ عن النبی صل اللہ علیہ وسلم قال صلوۃ المرأۃ فی بیتہاافضل من صلاتہا فی حجرتہا وصلوتہا فی مخدعہا افضل من صلاتہافی بیتہا ’’ … ( سنن ابی داؤد : ۹۴/۱ )

ولایباح للشواب منھن الخروج الی الجماعات بدلیل ماروی عن عمر ؓ انہ نھی الشواب عن الخروج.

(بدائع الصنائع: کتاب الصلوۃ -فصل فی بیان من یصلح للإمامۃ فی الجملۃ- ۱؍۳۸۸)

’’ وکرہ لہن حضورالجماعۃ الاللعجوز فی الفجر والمغرب والعشاء والفتوی الیوم علی الکراہۃ فی کل الصلوات لظہورالفساد کذافی الکافی وہوالمختارکذافی التبیین

’’ … ( فتاویٰ الہندیۃ : ۸۹/۱ ) ’’ ( ویکرہ حضورہن الجماعۃ ) ولولجمعۃ وعیدووعظ ( مطلقا ) ولوعجوزا لیلا ( علی المذہب ) المفتی بہ لفساد الزمان ’’ …

( درمختار : ۴۱۹ ، ۴۱۸/۱ )

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 251 Category: Worship
خواتین کے لئے نماز کا انتظام

السلام علیکم 

کیا میں یہ جان سکتی ہوں کہ خواتین کے لئے نارتھ ویسٹرن مسجد میں انتظام ہے یا نہیں۔جزاک اللہ خیرا۔ 

الجواب وباللہ التوفیق

اس کا ہمیں علم نہیں ہے لیکن خواتین کو اس پر فتن ،بے حیائی اور منکرات و معاصی کے دور میں مسجد میں نہیں جانا چاہئے۔اور دورِ نبی میں خواتین کو جو مساجد آنے کی اجازت تھی تو اللہ کے نبی نے اس کے شرائط بھی بیان فرمائے تھے، جو آج کے زمانے میں بالکل مفقود ہیں،اور پھر وہ خیر القرون کا بھی زمانہ تھا،بعد میں حالات کے بگاڑ کی وجہ سے بعض صحابہ خواتین کو مسجد آنے سے روکتے تھے،اور حضرت عمرؓ نے اپنے زمانے میں اعلان بھی فرمادیا تھاکہ اب خواتین مسجد میں نہ آئیں،نیز حضرت عائشہ کا فرمان صحیح بخاری میں ہے کہ اگر نبی مکرم ان احوال کو دیکھتے تو خواتین کو مسجد آنے سے روک دیتے تھے،اور پھر شریعت کامنشا بھی یہی ہےکہ عورت نمازگھر ہی میں ادا کرے مسجد میں نہیں،اسی میں ثواب بھی زیادہ ہے،اس لئے خواتین کو گھروں ہی میں نماز ادا کرنے کا اہتمام کرنا چاہئے۔

عن عائشة رضي الله عنها قالت : لو أدرك رسول الله صلى الله عليه و سلم ما أحدث النساء لمنعهن كما منعت نساء بني إسرائيل . قلت لعمرة أو منعهن ؟ قالت نعم

ت:( ما أحدث النساء ) من إظهار الزينة ورائحة الطيب وحسن الثياب ونحو ذلك . ( لمنعهن ) في نسخة ( لمنعهن المسجد ) أي لمنعهن من الخروج إلى المساجد وهن على هذه الحالة . ( أو منعهن ) أي نساء بني إسرائيل ](صحیح بخاری:کتاب صفہ الصلاۃ،۸۳۱)

’’عن عبداللہ عن النبی صل اللہ علیہ وسلم قال صلوۃ المرأۃ فی بیتہاافضل من صلاتہا فی حجرتہا وصلوتہا فی مخدعہا افضل من صلاتہافی بیتہا ’’ … ( سنن ابی داؤد : ۹۴/۱ )

ولایباح للشواب منھن الخروج الی الجماعات بدلیل ماروی عن عمر ؓ انہ نھی الشواب عن الخروج.

(بدائع الصنائع: کتاب الصلوۃ -فصل فی بیان من یصلح للإمامۃ فی الجملۃ- ۱؍۳۸۸)

’’ وکرہ لہن حضورالجماعۃ الاللعجوز فی الفجر والمغرب والعشاء والفتوی الیوم علی الکراہۃ فی کل الصلوات لظہورالفساد کذافی الکافی وہوالمختارکذافی التبیین

’’ … ( فتاویٰ الہندیۃ : ۸۹/۱ ) ’’ ( ویکرہ حضورہن الجماعۃ ) ولولجمعۃ وعیدووعظ ( مطلقا ) ولوعجوزا لیلا ( علی المذہب ) المفتی بہ لفساد الزمان ’’ …

( درمختار : ۴۱۹ ، ۴۱۸/۱ )

فقط واللہ اعلم بالصواب