Thursday | 15 November 2018 | 7 Rabiul-Awal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 252 Category: Worship
Using Toothpaste During Fasting

Assalamualaikum

Is its permissible to use regular toothpaste for brushing our teeth while we are fasting?

JazakAllah 

الجواب وباللہ التوفیق

To use toothpaste while fasting is considered makrooh-e-tanzeehi due to the abundant risk of it getting swallowed and thus invalidating the fast. Therefore, one should avoid its use while fasting. Instead, it is better to use miswak from all perspectives i.e. cleanliness, medical standpoint and earning reward for using it.

عن عطاء قال: ولا یمضغ العلک ، فإن ازدردریق العلک لا أقول أنہ یفطر ، ولکنہ ینہی عنہ ۔

(صحیح البخاری ، کتاب الصوم ، باب قول النبیﷺ إذا توضأ فلیستنشق بمنحرہ الماء ۱/۲۵۹)

عَنْ عَامِرِ بْنِ رَبِیْعَۃَ ص قَالَ: رَأَیْتُ النَّبِیَّ ا مَا لاَ أُحْصِیْ یَتَسَوَّکُ وَہُوَ صَائِمٌ۔ (سنن الترمذي ۱؍۱۵۴، سنن أبي داؤد ۱؍۳۲۲)

وکرہ لہ ذوق شییٔ وکذا مضغہ وفی الشامیۃ الظاہر أن الکراہۃ في ہذہ الأشیاء تنزیہیۃ ۔

(الدر المختار مع الشامی، کتاب الصوم ، باب مایفسد الصوم وما لایفسدہ ، ۲/۴۱۶)

وفی الفقہ الحنفی(۳۹۵/۱):من ذاق شیئا بفمہ فی نھار رمضان وھو صائم ولم یبتلع ماذاق لم یفطر، لعدم وصول المفطر الی جوفہ، ویکرہ لہ ذلک لما فیہ من تعریض الصوم علی الفساد مضغ العلک الذی لایصل منہ شییٔ الی الجوف مع الریق لایفطر الصائم لعدم وصول شیٔ منہ الی الجوف ویکرہ ذلک لانہ یتھم بالافطار، والعلک المقصود المصطکی (المسکۃ) اما العلک الملوّن المحلی بالسکر فانہ یفطر الصائم۔

ولا بأس بالسواک الرطب بالغداۃ والعشی للصّائم لقولہ ﷺ ا: ’’خیر خلال الصائم السواک‘‘۔

(ہدایہ ۱؍۲۲۱، ہندیہ ۱؍۱۹۹)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 252 Category: Worship
روزے کی حالت میں ٹوتھ پیسٹ کا استعمال

 

السلام علیکم 

کیا روزے کی حالت میں عام ٹوتھ پیسٹ سے دانت صاف کرنے کی اجازت ہے؟

 

الجواب وباللہ التوفیق

روزہ کی حالت میں ٹوتھ پیسٹ کا استعمال مکروہ تنزیہی ہے،چونکہ اس کے حلق میں جانے اوراس سے روزہ ٹوٹنے کا امکان زیادہ ہوتا ہےاس لئے اس سے بچنا چاہئے،البتہ مسواک کا استعمال بہتر ہے،صفائی کے اعتبار سے بھی، طبی اعتبار سے بھی اور ثواب کے اعتبار سے بھی۔

عن عطاء قال: ولا یمضغ العلک ، فإن ازدردریق العلک لا أقول أنہ یفطر ، ولکنہ ینہی عنہ ۔

(صحیح البخاری ، کتاب الصوم ، باب قول النبیﷺ إذا توضأ فلیستنشق بمنحرہ الماء ۱/۲۵۹)

عَنْ عَامِرِ بْنِ رَبِیْعَۃَ ص قَالَ: رَأَیْتُ النَّبِیَّ ا مَا لاَ أُحْصِیْ یَتَسَوَّکُ وَہُوَ صَائِمٌ۔ (سنن الترمذي ۱؍۱۵۴، سنن أبي داؤد ۱؍۳۲۲)

وکرہ لہ ذوق شییٔ وکذا مضغہ وفی الشامیۃ الظاہر أن الکراہۃ في ہذہ الأشیاء تنزیہیۃ ۔

(الدر المختار مع الشامی، کتاب الصوم ، باب مایفسد الصوم وما لایفسدہ ، ۲/۴۱۶)

وفی الفقہ الحنفی(۳۹۵/۱):من ذاق شیئا بفمہ فی نھار رمضان وھو صائم ولم یبتلع ماذاق لم یفطر، لعدم وصول المفطر الی جوفہ، ویکرہ لہ ذلک لما فیہ من تعریض الصوم علی الفساد مضغ العلک الذی لایصل منہ شییٔ الی الجوف مع الریق لایفطر الصائم لعدم وصول شیٔ منہ الی الجوف ویکرہ ذلک لانہ یتھم بالافطار، والعلک المقصود المصطکی (المسکۃ) اما العلک الملوّن المحلی بالسکر فانہ یفطر الصائم۔

ولا بأس بالسواک الرطب بالغداۃ والعشی للصّائم لقولہ ﷺ ا: ’’خیر خلال الصائم السواک‘‘۔

(ہدایہ ۱؍۲۲۱، ہندیہ ۱؍۱۹۹)

فقط واللہ اعلم بالصواب