Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 258 Category: Permissible and Impermissible
Selling Non-Zabiha Meat at my restaurant

Assalaamualaikum,

I live in the United States. Is it halal for me to own a restaurant business that sells meat that is not zabiha? The restaurant is not labeled as zabiha and the customers are non-Muslims. I am confused as to whether this is okay or not. There is no pork sold in the restaurant.

Also, the restaurant also sells cigarettes. Is this haraam?

JazakAllah Khair.

الجواب وباللہ التوفیق

It is not permissible to run such restaurant or work in it as a cashier in which meat of the animals slaughtered in a non Shar’i method is sold. As far as the issue of selling cigarettes is concerned, its income is not Haraam, however is not devoid of کراہت (karahat) either.  

إِنَّمَا حَرَّمَ عَلَيْكُمُ الْمَيْتَةَ وَالدَّمَ وَلَحْمَ الْخِنْزِيرِ وَمَا أُهِلَّ لِغَيْرِ اللَّهِ بِهِ فَمَنِ اضْطُرَّ غَيْرَ بَاغٍ وَلَا عَادٍ فَإِنَّ اللَّهَ غَفُورٌ رَحِيمٌ (النحل:115)

ولا تصح الإجارۃ لعسب التیس ولا لأجل المعاصي مثل الغناء، والنوح، والملاہي۔ (شامي، کتاب الإجارۃ، بالإجارۃ الفاسدۃ، مطلب في الاستیجارعلی المعاصي، کراچی ۶/ ۵۵، زکریا ۹/ ۷۵)

(ولا تعاونوا علی الإثم والعدوان} ۔ (المائدۃ : ۲)ما في ’’ أحکام القرآن للجصاص ‘‘ : قولہ تعالی : {ولا تعاونوا علی الإثم والعدوان} نہي عن معاونۃ غیرنا علی معاصي اللہ تعالی ۔ (۲/۳۸۱)

ما في  ’’ التفسیر المنیر ‘‘ : ولا تتعاونوا علی الإثم وہو الذنب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ والمعصیۃ : وہي کل ما منعہ الشرع ، أو حاک في الصدر وکرہت أن یطلع علیہ الناس، ولا تتعاونوا علی التعدي علی حقوق غیرکم ، والإثم والعدوان یشمل کل الجرائم التي یأثم فاعلہا ، ومجاوزۃ حدود اللہ بالاعتداء علی القوم ، واتقوا اللہ بفعل ما أمرکم بہ واجتناب ما نہاکم {إن اللہ شدید العقاب} لمن عصی وخالف ۔  

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 258 Category: Permissible and Impermissible
غیر ذبیحہ گوشت بیچنا

السلام علیکم

میں امریکہ میں رہتا ہوں، کیا میرے لئے یہ جائز ہو گا کہ میں ایک ایسا ریسٹورینٹ چلاؤں جہاں غیر ذبیحہ گوشت بیچا جاتا ہے۔ اس  ریسٹورینٹ کو  ذبیحہ کے نام سے نہیں چلایا جاتا اور اس کے کسٹمر بھی غیر مسلم ہیں۔ مجھے اس سلسلے میں کافی الجھن کا سامنا ہے کہ آیا یہ درست ہے یا نہیں۔ اس ریسٹورینٹ پر خنزیر نہیں بیچا جاتا۔ اس ریسٹورینٹ میں سگریٹ بھی بیچی جاتی ہے، کیا یہ حرام ہے؟   جزاک اللہ خیر

 

 

 الجواب وباللہ التوفیق

جس ہوٹل میں غیر شرعی ذبیحہ یعنی مردار جیسی ناجائز چیزیں بیچی جاتی ہیں ایسی ہوٹل  چلانا یا اسمیں کیشیر بن کر کام کرنا جائز نہیں ہے۔

رہا سگریٹ کی فروخت کا مسئلہ تو اس کی آمدنی حرام نہیں ہے لیکن کراہت سے بھی خالی نہیں ہے۔

إِنَّمَا حَرَّمَ عَلَيْكُمُ الْمَيْتَةَ وَالدَّمَ وَلَحْمَ الْخِنْزِيرِ وَمَا أُهِلَّ لِغَيْرِ اللَّهِ بِهِ فَمَنِ اضْطُرَّ غَيْرَ بَاغٍ وَلَا عَادٍ فَإِنَّ اللَّهَ غَفُورٌ رَحِيمٌ (النحل:115)

ولا تصح الإجارۃ لعسب التیس ولا لأجل المعاصي مثل الغناء، والنوح، والملاہي۔ (شامي، کتاب الإجارۃ، بالإجارۃ الفاسدۃ، مطلب في الاستیجارعلی المعاصي، کراچی ۶/ ۵۵، زکریا ۹/ ۷۵)

(ولا تعاونوا علی الإثم والعدوان} ۔ (المائدۃ : ۲)ما في ’’ أحکام القرآن للجصاص ‘‘ : قولہ تعالی : {ولا تعاونوا علی الإثم والعدوان} نہي عن معاونۃ غیرنا علی معاصي اللہ تعالی ۔ (۲/۳۸۱)

ما في  ’’ التفسیر المنیر ‘‘ : ولا تتعاونوا علی الإثم وہو الذنب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ والمعصیۃ : وہي کل ما منعہ الشرع ، أو حاک في الصدر وکرہت أن یطلع علیہ الناس، ولا تتعاونوا علی التعدي علی حقوق غیرکم ، والإثم والعدوان یشمل کل الجرائم التي یأثم فاعلہا ، ومجاوزۃ حدود اللہ بالاعتداء علی القوم ، واتقوا اللہ بفعل ما أمرکم بہ واجتناب ما نہاکم {إن اللہ شدید العقاب} لمن عصی وخالف ۔  فقط واللہ اعلم بالصواب،مفتی محمد عطاء الرحمن ساجد۔۱۸ محرم الحرام، ۱۴۴۰ھ۔

واللہ اعلم بالصواب