Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 271 Category: Worship
Printing Quranic verses by Non-Muslims

Assalaamualaikum,

I have a book containing Qur'aanic verses with Urdu and English translation and explanation of those verses. I want to print more copies of that book for distribution. Can I hand the book over to a Non-Muslim person/printing agency for making copies?

الجواب وباللہ التوفیق

First of all, please have this translation and the Tafseer of the Quranic Aayaat checked by some Ahle’ Haq Scholar whether these are correct or not. As far as the issue of having it copied is concerned, if the non-Muslim has the reverence and the respect of the Qur’aan in his heart and there is no apprehension of the contempt and disrespect of the Qur’aan Majeed and he holds or touches the Aayaat of the Holy Qur’aan only with Wudu (Ablution) or Ghusl (Bath) then there is room for it, otherwise not. However, in current times it is necessary to stay away from such people.

لما في ’’ القرآن الکریم ‘‘ : {لا یمسّہ إلا المطہّرون} ۔ (سورۃ الواقعۃ : ۷۹)

وفی حدیث عمرو بن حزم أن رسول اللہ ﷺ کتب إلی أہل الیمن کتاباً وکان فیہ : ’’ لا یمسّ القرآن إلا طاہر ‘‘ ۔ رواہ الدار قطني والحاکم في المعرفۃ والبیہقي في الخلافیات ۔ وروی الطبراني من حدیث حکیم بن حزام قال : لما بعثني رسول اللہ ﷺ إلی الیمن قال : ’’ لا یمسّ القرآن إلا وأنت طاہر ‘‘ ۔ (۹/۱۶۲ ، سورۃ الواقعۃ ، مکتبہ زکریا بکڈپو دیوبند)

والنصراني إذا تعلم القرآن یعلم والفقہ کذلک؛لأنہ عسی یہتدي لکن لایمس المصحف، وإذاغتسل ثم مس لابأس بہ، في قول محمد۔ (البحرالرائق، کتاب الطہارۃ، باب الحیض فروع، مکتبہ زکریا دیوبند ۱/۳۵۰، کوئٹہ ۱/۲۰۲)

و في الخانیۃ: من بحث القرا ء ۃ الحربي، أو الذمي، إذا طلب تعلم القرآن، والفقہ،والأحکام یعلم رجاء أن یہتدي؛ لکن یمنع من مس المصحف إلا إذاغتسل فلا یمنع بعد ذلک۔ (حاشیۃ الطحطاوي علی مراقي الفلاح، کتاب الطہارۃ، باب دارالکتاب دیوبند ۱/۱۴۳)

عن عبداﷲ بن عمر -رضي اﷲ عنہ- عن رسول اﷲ ﷺ أنہ کان ینہی أن یسافر بالقرآن إلی أرض العدو مخافۃ أن ینالہ العدو۔ الحدیث (صحیح مسلم : کتاب الأمارۃ، رقم: ۱۸۶۹)

والحاصل: مما سبق أن وقوع المصحف بأیدی الکفار إنما یمنع منہ إذا خیف منہم إہانتہ، أما إذا لم یکن مثل ہذا الخوف فلابأس بذلک۔ (تکملۃ فتح الملہم، مسألۃ تعلیم الکافر القرآن، أشرفیہ دیوبند ۳/ ۳۸۶)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 271 Category: Worship
قرآنی آیات و تفسیر کی غیر مسلموں کے ہاتھ سے کاپی کروانا

السلام علیکم

میرے پاس ایک کتاب ہے جس میں قرآن پاک کی آیات اردو اور انگلش ترجمے اور تفسیر کے ساتھ ہیں۔ میں اس کتاب کی مزید کاپیاں چھاپنا چاہتا ہوں تاکہ لوگوں میں بانٹ سکوں۔ کیا اس کام کے لئے کسی غیر مسلم کو یہ کتاب دی جا سکتی ہے تاکہ وہ اس کی کاپیاں بنا کے مجھے دے سکے؟

 

الجواب وباللہ التوفیق

قرآنی جن آیات کا ترجمہ اور تفسیر آپ کے پاس ہے اولا وہ صحیح ہے یا نہیں اس کی کسی اہل حق  عالم سے جانچ کروائیں، رہا چھپوانے کا مسئلہ تو اگر غیر مسلم کے دل میں قرآن کی عظمت اور احترام ہو اور قرآن مجید کی اہانت اور بے ادبی کا اندیشہ نہ ہواوروہ قرآن پاک کی آیات کو وضو یا غسل کے  ساتھ ہی پکڑتا ہو یا چھوتا ہوتو اس کی گنجائش ہے،ورنہ نہیں۔تاہم موجودہ زمانے میں ان سے احتیاط ہی ضروری ہے ۔

لما في ’’ القرآن الکریم ‘‘ : {لا یمسّہ إلا المطہّرون} ۔ (سورۃ الواقعۃ : ۷۹)

وفی حدیث عمرو بن حزم أن رسول اللہ ﷺ کتب إلی أہل الیمن کتاباً وکان فیہ : ’’ لا یمسّ القرآن إلا طاہر ‘‘ ۔ رواہ الدار قطني والحاکم في المعرفۃ والبیہقي في الخلافیات ۔ وروی الطبراني من حدیث حکیم بن حزام قال : لما بعثني رسول اللہ ﷺ إلی الیمن قال : ’’ لا یمسّ القرآن إلا وأنت طاہر ‘‘ ۔ (۹/۱۶۲ ، سورۃ الواقعۃ ، مکتبہ زکریا بکڈپو دیوبند)

والنصراني إذا تعلم القرآن یعلم والفقہ کذلک؛لأنہ عسی یہتدي لکن لایمس المصحف، وإذاغتسل ثم مس لابأس بہ، في قول محمد۔ (البحرالرائق، کتاب الطہارۃ، باب الحیض فروع، مکتبہ زکریا دیوبند ۱/۳۵۰، کوئٹہ ۱/۲۰۲)

و في الخانیۃ: من بحث القرا ء ۃ الحربي، أو الذمي، إذا طلب تعلم القرآن، والفقہ،والأحکام یعلم رجاء أن یہتدي؛ لکن یمنع من مس المصحف إلا إذاغتسل فلا یمنع بعد ذلک۔ (حاشیۃ الطحطاوي علی مراقي الفلاح، کتاب الطہارۃ، باب دارالکتاب دیوبند ۱/۱۴۳)

عن عبداﷲ بن عمر -رضي اﷲ عنہ- عن رسول اﷲ ﷺ أنہ کان ینہی أن یسافر بالقرآن إلی أرض العدو مخافۃ أن ینالہ العدو۔ الحدیث (صحیح مسلم : کتاب الأمارۃ، رقم: ۱۸۶۹)

والحاصل: مما سبق أن وقوع المصحف بأیدی الکفار إنما یمنع منہ إذا خیف منہم إہانتہ، أما إذا لم یکن مثل ہذا الخوف فلابأس بذلک۔ (تکملۃ فتح الملہم، مسألۃ تعلیم الکافر القرآن، أشرفیہ دیوبند ۳/ ۳۸۶)

 واللہ اعلم بالصواب