Monday | 19 August 2019 | 18 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 281 Category: Social Dealings
Maan ko Manaana

Meri apni Maan (Mother) se kisi baat pe behes ho gai aur phir badtameezi karte hoye ye jumla nikal giya ke "Ammi pata nahi aap kab sudhren gee".

Mujhe ahsaas ho giya he ke ye jumlah apni maa se badzabani aur badtameezi ke zumre me aata he. Me Allah se khoob m'aafi maang raha hoon aur apni Maa se bhi m'aafi maang raha hoon. Lekin meree Ammi mujh se bilkul baat cheet nahi kar raheen hen. Mujhe is situation me kia karna chahiye and kese apni ki hoi ghalti ka madawa kar sakoon ga?

JazaakAllaah

 

الجواب وباللہ التوفیق

It’s your responsibility to do حسن سلوک (best of the treatment) with her to the utmost and keep asking forgiveness and keep trying to get her pleased with you.

إِمَّا يَبْلُغَنَّ عِنْدَكَ الْكِبَرَ أَحَدُهُمَا أَوْ كِلَاهُمَا فَلَا تَقُلْ لَهُمَا أُفٍّ وَلَا تَنْهَرْهُمَا وَقُلْ لَهُمَا قَوْلًا كَرِيمًا  {الاسراء: ۲۳}

 [فرع] في فصول العلامي: إذا رأى منكرا من والديه يأمرهما مرة، فإن قبلا فبها، وإن كرها سكت عنهما واشتغل بالدعاء والاستغفار لهما فإن الله تعالى يكفيه ما أهمه من أمرهما{المحتار:کتاب الحدود ،باب التعزیر}

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 281 Category: Social Dealings
ماں کو منانا

میری اپنی ماں سے کسی بات پر بحث ہو گئی اور پھر میرے منہ سے بدتمیزی کرتے ہوئے یہ جملہ نکل گیا "امی پتہ نہیں آپ کب سدھریں گی۔" مجھے احساس ہو گیا  ہے کہ یہ جملہ اپنی ماں سے بدزبانی اور بدتمیزی کے ذمرہ میں آتا ہے، میں اللہ سے بھی معافی مانگ رہا ہوں  اور اپنی ماں سے بھی، لیکن میری ماں   مجھ سے بالکل بات چیت نہیں کر رہی ہیں۔ مجھے ان حالات میں کیا کرنا چاہئے؟ میں کیسے اپنی کی ہوئی غلطی کا مداوا کرسکوں گا؟

 

الجواب وباللہ التوفیق

آپ کی ذمہ داری ہے کہ ان کے ساتھ حسن سلوک کا  اہتمام کرتے رہیں اور معافی  مانگتے رہیے اور راضی کرنے کی کوشش کرتے رہیں۔

وَقَضَى رَبُّكَ أَلَّا تَعْبُدُوا إِلَّا إِيَّاهُ وَبِالْوَالِدَيْنِ إِحْسَانًا إِمَّا يَبْلُغَنَّ عِنْدَكَ الْكِبَرَ أَحَدُهُمَا أَوْ كِلَاهُمَا فَلَا تَقُلْ لَهُمَا أُفٍّ وَلَا تَنْهَرْهُمَا وَقُلْ لَهُمَا قَوْلًا كَرِيمًا  {الاسراء: ۲۳}

 

 [فرع] في فصول العلامي: إذا رأى منكرا من والديه يأمرهما مرة، فإن قبلا فبها، وإن كرها سكت عنهما واشتغل بالدعاء والاستغفار لهما فإن الله تعالى يكفيه ما أهمه من أمرهما{المحتار:کتاب الحدود ،باب التعزیر} ۔

واللہ اعلم بالصواب