Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 287 Category: Worship
Difference between Zakat and Zakat ul Fitr

Assalaamualaikum, 

What is the different between zakat and zakat ul-fitr?

الجواب وباللہ التوفیق

There is a difference between the two in several ways some of which are mentioned below:

  • Zakat to be mandatory is proved from the Qur'aan and the Sadaqa tul Fitr to be compulsory from the noble Ahadith.
  • For Zakat the condition is that the wealth must be مال نامی (of the nature that it’s increasable, e.g., business investment), however, that’s not the condition for Sadaqa tul Fitr, rather all kind of wealth in excess of the necessities is added in the value, if it reaches the Nisab then Sadaqa tul Fitr is compulsory in it.
  • In Zakat the condition is that a year must pass on the wealth, however, that’s not the condition for the Sadaqa tul Fitr. To take Zakat out on one own’s behalf is Wajib (compulsory), however, it is even Wajib (compulsory) to take Sadaqa tul Fitr out on behalf of one’s non-adult children, etc. کذا فی کتب الفقہ}۔
  • Zakat is only Wajib (compulsory) on the صاحب نصاب (Saheb e Nisab) person and the Sadaqa tul Fitr on the صاحب نصاب  (Saheb e Nisab) person himself as well as his non-adult children whose expense is mandatory on him.
  • The amount of Zakat is 2.5% i.e.,40th part of the whole wealth, and the amount of Sadaqa tul Fitr is one kilo and 575 grams wheat or its value, and then according to dates and raisins, its amount is different.
  • Zakat is concerned with the wealth, and Sadaqa tul Fitr is concerned with the persons.
  • Zakat is Wajib (compulsory) on an adult and a sane person and Sadaqa tul Fitr is Wajib (compulsory) on non-adult and insane too, etc.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 287 Category: Worship
زکوۃ اور زکوۃ الفطر میں فرق

 

السلام علیکم

زکوۃ اور زکوۃ الفطر میں کیا فرق ہے؟

 

 

الجواب وباللہ التوفیق

دونوں میں کئی اعتبار سے فرق ہے   جن میں سے چند کو

بیان کیا جاتا ہے؛

زکوۃ کی فرضیت قرآن مجید سے ثابت ہے اور صدقۃ الفطر کا وجوب احادیث شریفہ سے۔

زکوۃ میں مال نامی ہونا شرط ہے جبکہ صدقۃ الفطر میں شرط نہیں،بلکہ ضرورت سے زائد ہر طرح کے مال کو قیمت میں جوڑ کر اگر وہ نصاب کو پہنچ جائے تو اس میں صدقۃ الفطر واجب ہے۔

زکوۃ  میں مال پر سال گزرنا شرط ہے جبکہ صدقۃ الفطر میں نہیں،زکاۃ اپنی جانب سے نکالنا واجب ہے جبکہ صدقۃ الفطر اپنی نابالغ اولاد کی طرف سے بھی نکالنا واجب ہے وغیرہ {کذا فی کتب الفقہ}۔

زکوۃصرف  صاحب نصاب شخص پر واجب ہوتی ہے اور صدقۃ الفطر صاحب نصاب پر خود اس کا اور اس کی نابالغ اولاد کا جن کا خرچ اس کے ذمہ ضروری ہے ان کا بھی واجب ہوتا ہے۔

زکوۃ کی مقدار ڈھائی فیصد یعنی کل مال کا چالیسواں حصہ ہے،اور صدقۃ الفطر کی مقدار ایک کلو پانچ سو پچھتر گرام گیہوں یا اس کی قیمت ہے ۔

اور پھرکھجور اور کشمش کے اعتبار سےاس کی مقدار بھی الگ ہے۔

زکوۃ کا تعلق مال سے ہوتا ہے،اور صدقۃ الفطر کا تعلق  ذات یعنی افراد سے ہوتا ہے۔

زکوۃ بالغ اور عاقل ہر واجب ہوتی ہے۔اور صدقۃ الفطر نابالغ اور مجنون پر بھی واجب ہوتا ہے۔وغیرہ۔

واللہ اعلم بالصواب