Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 298 Category: Business Dealings
Speculation and Gambling in Stock Market

Assalaamualaikum,

I have two questions, related to investment in stocks and certain types of funds:

Question 1.

My first question is about investment in "Equity" stock, and certain practices in it, that could be termed gambling.

So, this is my understanding that, all financial derivative products (like options, futures) are not allowed, and one of the reasons is because there is an element of gambling in them.

However, trading in "Equity" is allowed, under certain conditions. And those conditions do not mention anything about the possibility of gambling in "Equity" stock trading.

But, there are certain practices in "equity" stock trading that could be regarded as gambling, like speculation, and day-trading.

So my question is what is the exact definition of "Gambling" from fiqh perspective, and how it applies to "Equity" stock trading. And is there something written about "Speculation" and "Day-Traing" as well, in relation to "Equity" stock trading?

Question 2.

What is the fiqh position about investments in "Exchange Traded Funds (ETF)" and "Real estate investment trusts (REITs)"?


Thank you very much for your time, and reply.

JazakAllah

الجواب وباللہ التوفیق

The Shar’ai ruling about Equity Stock, Real Estate Investment, and Exchange Trade Funds can’t be advised until their details are in front of us. Normally these dealings are not devoid of interest, therefore, please send their procedure and their details in writing to inquire Shar’ai ruling about them.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 298 Category: Business Dealings
سرمایہ کاری میں اندازے لگانا اور جوا

السلام علیکم

میرے دو سوال ہیں، اسٹاک اور دیگر اقسام کے فنڈز میں سرمایہ کاری سے متعلق۔

سوال ۱: میرا پہلا سوال "ایکوٹی اسٹاک" میں سرمایہ کاری سے متعلق ہے، اور  اس میں موجود چند ایسے امور سے جن کو جوے کے ذمرہ میں لایا جا سکتا ہے۔ میرے علم کے مطابق ، کسی بھی قسم کے مالی پراڈکٹ جو کسی اور چیز سے اخذ کئے گئے ہوں، مثلا آپشنز، مستقبل وغیرہ، جائز نہیں ہیں اور اس کی اک وجہ یہ ہے کہ ان میں جوے کا عنصر موجود ہوتا ہے۔  جب کہ "ایکوٹی" کی تجارت  کچھ صورتوں میں جائز  ہے۔ اور ان صورتوں میں ایکوٹی  اسٹاک کی تجارت میں جوے کے بارے میں کسی شبہ کا ذکر نہیں ہے۔ لیکن کچھ چیزیں  ایکوٹی ٹریڈنگ میں جوے کے طور پر تسلیم ہو سکتی ہیں مثلا  مختلف اندازے لگانا،ڈے ٹریڈنگ وغیرہ۔ لہذا میرا سوال یہ ہے کہ فقہ کے اعتبار سے جوے کی اصل تعریف کیا ہے۔ اور ایکوٹی اسٹاک ٹریڈنگ کس طرح جوے  سے متعلق ہے۔ او رکیا ایسے اندازے لگانے اور ڈے ٹریڈنگ سے متعلق کوئی تفصیل ایکوٹی اسٹاک ٹریڈنگ سے متعلق لکھی ہوئی ہے۔

سوال ۲: ایکسچینج ٹریڈ فنڈز اور رئیل اسٹیٹ انوسٹمنٹ ٹرسٹ کے بارے میں شریعت کیا کہتی ہے؟

آپ کے وقت اور جواب دینے کے لئے بہت شکریہ

۔جزاک اللہ

 

الجواب وباللہ التوفیق

ایکوٹی اسٹاک اور ریل اسٹیٹ انوسٹمنٹ اور ایکسچینج ٹریڈ فنڈز کا شرعی حکم اس وقت نہیں بتایاجاسکتا جب تک کہ اس کی تفصیلات سامنے نہ آئیں،عموما یہ معاملات سود سےخالی نہیں ہوتے اس لئے ان کا شرعی حکم جاننے کے لئے ان کا طریقۂ  کار اور ان کی  تفصیلات لکھ کر بھیجیں۔

والسلام