Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 302 Category: Worship
Dishwashing water splash/Permissibly of charging for teaching Quran

Assalaamualaikum، 

I have the following questions:

1) If dishwashing detergent falls/splashes on my clothes do I have to change them before offering salah? I don’t know if it has any animal ingredients.

2) I know it is not allowed to teach the Quran and take money, but I heard that you are allowed to take it for the time you spent on teaching. I teach some kids but don't charge them so please clarify and provide some Hadiths and Ayaats if possible. What if I charge, but put the money in sadaqah because these kids’ parents don’t take it seriously. They think it’s for free and don’t force the child to put in an effort.

3) The masjid Hifdh program needs a female teacher to teach the girls in the Hifdh department. I am going to volunteer for now but I want to know if it is okay to teach because if I do then we get a monthly salary and I don’t know if it is permissible for me to take that salary. Is it permissible for me to teach and take the salary? 

Lastly, I asked a question 2 times 2 months back but still didn't receive a reply, is there any way I can get that questioned answered?

JazakAllah and May Allah reward you all for this amazing effort!

Aameen!

الجواب وباللہ التوفیق

  • It’s not necessary to change clothes for the Salah due to the splash of dishwashing detergent, Salah will be correct without changing clothes although the soap ingredients are not known.
  • The فقہاء متاخرین (jurists of this time) have declared permissible to take wages for teaching Qur'aan Majeed per necessity, therefore, there is no harm in taking fees from the children and after taking the fees whether you use it yourself or give in Sadaqah, both are correct.
  • Your teaching as a lady teacher in the Hifz program run in the Masjid without the wages or with the wages, both are correct, to take a salary is also correct, however, the intention should be to teach and the pleasure of Allaah T’aalaa.
  • We have updated responses to all previous questions online. May Allaah T’aalaa reward you for your patience.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 302 Category: Worship
برتن دھوتے ہوئے پانی کے چھینٹے/قرآن شریف پٹھانے پر معاوضہ

السلام علیکم

۱- برتن دھونے کے صابن کی اگر چھینٹیں میرے اوپر آجائیں، یا یہ صابن میرے کپڑوں پر لگ جائے، تو کیا مجھے نماز سے قبل کپڑے تبدیل کرنا ہوں گے؟ مجھے اس کا علم نہیں ہے کہ اس میں کسی قسم کے جانور کے کوئی اجزاء وغیرہ استعمال ہوئے ہیں یا نہیں۔

۲- مجھے اس بات کا علم ہے کہ قرآن پڑھانے کے  لئے اجرت لینا جائز نہیں ہے، لیکن یہ بھی سنا ہے کہ پیسہ اس وقت کے عوض لیا جا سکتا ہے جو قرآن پڑھانے پر صرف کیا گیا۔ میں کچھ بچوں کو پڑھاتی ہوں لیکن ان سے کچھ نہیں لیتی، براہ کرم اس سلسلے میں  قرآن و حدیث کی روشنی میں راہنمائی فرمائیے۔ کیا کہ جائز ہے کہ میں ان بچوں سے پیسے تو لوں لیکن پھر اس کو صدقہ کر دوں، کیونکہ جب پیسے نہ لئے جائیں تو ماں باپ اس عمل کو سنجیدگی سے نہیں لیتے، چونکہ یہ فری ہے تو وہ اپنے بچوں کو محنت کی ترغیب نہیں دیتے۔

۳- ہماری مسجد میں چلنے والے حفظ کے پروگرام میں ، لڑکیوں کو پڑھانے کے لئے استانی کی ضرورت ہے، میں فی الحال کسی اجرت کے بغیر یہ کام کرنا چاہتی ہوں، لیکن میں یہ  جاننا چاہتی ہوں کہ کیا پڑھانا جائز ہو گا کیونکہ پڑھانے والوں کو ماہانہ تنخواہ دی جاتی ہے۔ مجھے علم نہیں کہ یہ تنخواہ لینا جائز ہے یا نہیں۔ کیا میرے لئے پڑھانا اور اس کے عوض تنخواہ لینا جائز ہو گا؟

آخر میں یہ عرض ہے کہ میں نے دو مہینے قبل دو سوال پوچھے تھے جس کا جواب اب تک موصول نہ ہوا، کیا اس سلسلے میں میری مدد کی جا سکتی ہے۔

جزاک اللہ خیرا ، اللہ آپ  کو تمام تر محنتوں کے لئے خوب نوازے، آمین۔

لجواب وباللہ التوفیق

برتن دھونے کے صابن کی چھینٹیں اڑنے کی وجہ سے نماز کیلئے کپڑے تبدیل کرنا ضروری نہیں ہے، بغیر کپڑے تبدیل کئے ہوئے نماز درست ہے اگرچہ صابن میں ملے ہوئے اجزاء کا علم نہ ہو۔

فقہاء متاخرین نے قرآن  پاک کے پڑھانے پر اجرت لینے کو ضرورۃ جائز قرار دیا  ہے لہذا بچوں سے فیس لینے میں کوئی حرج نہیں ہے اور لینے کے بعد آپ خود استعمال کریں یا صدقہ کردیں دونوں درست ہے۔

مسجد میں چلنے والے حفظ پروگرام میں بطور استانی آپ کا پڑھانا بغیر اجرت کے اور اجرت کے ساتھ دونوں جائز ہے، تنخواہ لینا بھی جائز ہے۔ البتہ اصل نیت پڑھانے کی رضائے الہی ہونی چاہئے۔

واللہ اعلم بالصواب