Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 309 Category:
Special Needs School job.

Assalamualaikum,

I work at a special needs school for autistic students. It is both boys and girls school. I sometimes have to take boy students to the bathroom. Some know how to do everything in the bathroom. I just stand far. But some need diaper change and i have to help with the changing sometimes. Does this make my job haram? Please let me know asap. Jazakallah

                                         الجواب وباللہ التوفیق

There is room to provide this service at the time of need and compulsion. The job doesn’t become Haraam due to providing this service. However, make sure to use gloves while providing this service, don’t touch the private parts without any medium between your hands and the private parts. As much as you can keep your gaze down. Glance can be cast per necessity but not any longer, as soon as the disabled person has relieved himself cover the private parts immediately.

{ما أبیح للضرورۃ یقدر بقدرہا}۔ (أحکام الجراحۃ الطبیۃ :ص۵۷۴- ۵۷۸)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 309 Category:
مخصوص ضروریات والے سکول میں ملازمت

 

اسلام علیکم 

میں ذہنی معذور طلبا کی مخصوص ضروریات کے سکول میں کام کرتا ہوں، یہ لڑکے لڑکیوں دونوں کے لیے ہے۔ مجھے کبھی کبھار لڑکوں کو بیت الخلاء لے جانا پڑتا ہے۔ وہاں میں کچھ دور کھڑا ہو جاتا ہوں۔ لیکن ان میں سے کچھ کو ڈائیپر بدلنے کی ضرورت ہوتی ہے  اور کبھی کبھار مجھے ڈائیپر بدلنے میں مدد بھی کرنی پڑتی ہے۔ کیا اس سے میری ملازمت حرام ہو جاتی ہے؟ برائے مہربانی مجھے جلد از جلد بتائیے۔

  جزاک اللہ.

لجواب وباللہ التوفیق

ضرورت  اورمجبوری کے وقت اس  عمل کو انجام دینے کی گنجائش ہےاس عمل کی وجہ سے ملازمت حرام نہیں ہوتی ہے،فقط واللہ اعلم بالصواب ،محمد رضاء الرحمن عابد ،۱۴، جنوری ۲۰۱۹ ء

البتہ اس عمل کو انجام دیتے وقت گلووز کا اہتمام کریں،بغیر حائل کے ستر کو نہ  چھو ئیں،جہاں تک ہوسکے نظر نیچی رکھیں،ضرورت پڑنے پر بقدر ضرورت ستر پر نگاہ ڈالی جاسکتی ہے،اس سے زیادہ نہیں۔

ضرورت پوری ہوتے ہی فورا ستر کو ڈھانک دیں۔

{ما أبیح للضرورۃ یقدر بقدرہا}۔ (أحکام الجراحۃ الطبیۃ :ص۵۷۴- ۵۷۸)

واللہ اعلم بالصواب