Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 310 Category:
Using interest earned on savings to pay taxes in India

Assalamualaikum,

1.       Can I use the INTEREST earned on money in my SAVINGS bank account in a PRIVATE bank to pay TAXES?

2.       Can I use the INTEREST earned on money in my SAVINGS bank account in a GOVERNMENT bank to pay TAXES?

3.       Can I use the INTEREST earned on money in my PROVIDENT FUND (PF) account to pay TAXES?

4.       Can I use the INTEREST earned on NATIONAL SAVINGS CERTIFICATE BOND to pay TAXES?

Kindly reply to the above queries as early as possible. 

Jazakallah Khair

 

الجواب وباللہ التوفیق

  1. It is necessary to give the interest received on the amount deposited in the non-government private banks to the poor, it is not correct to use it to pay the taxes.
  2. The interest received on the amount deposited in the government banks can be used to pay those government taxes through which no benefit is derived from the government, e.g., income tax, sales tax, etc. However, it is not correct to use it to pay those government taxes through which benefit is derived from the government, e.g., water tax, road tax, electricity tax, etc.

In the P.F. Fund one amount from the government is personal and the other is the prize money. It is permissible to receive it and use it. Other than the prize money if any interest money is received the ruling for its use is the same as described in # 2 above.

صرح الفقہاء بأن من اکتسب مالاً بغیر حق، فإما أن یکون کسبہ بعقد فاسد، کالبیوع الفاسدۃ والاستئجار علی المعاصي والطاعات، أو بغیر عقد، کالسرقۃ والغصب والخیانۃ والغلول، ففي جمیع الأحوال المال الحاصل لہ حرام علیہ، ولکن إن أخذہ من غیر عقد ولم یملکہ یجب علیہ أن یردہ علی مالکہ إن وجد المالک، وإلاَّ ففي جمیع الصور یجب علیہ أن یتصدق بمثل تلک الأموال علی الفقراء۔ (بذل المجہود، کتاب الطہارۃ / باب فرض الوضوء ۱؍۳۵۹ مرکز الشیخ أبي الحسن الندوي مظفرفور أعظم جراہ)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 310 Category:
سیونگز اکائونٹ پر ملنے والے سود سے ٹیکس ادا کرنا

 

السلام علیکم

۔ کیا میں نجی بینک میں  اپنے سیونگز اکاؤنٹ میں جمع شدہ رقم  پر  حاصل شدہ سود سے  ٹیکس ادا کر سکتا ہوں؟

۔ کیا میں حکومتی  بینک میں  اپنے سیونگز اکاؤنٹ میں جمع شدہ رقم  پر  حاصل شدہ سود سے  ٹیکس ادا کر سکتا ہوں؟

۔ کیا میں  اپنےپراویڈنٹ فنڈ اکاؤنٹ میں جمع شدہ رقم  پر  حاصل شدہ سود سے  ٹیکس ادا کر سکتا ہوں؟

۔ کیا میں  نیشنل سیونگز سرٹیفیکیٹ بانڈ پر  حاصل شدہ سود سے  ٹیکس ادا کر سکتا ہوں؟

برائے مہربانی مجھے جلد از جلد بتائیے   

جزاک اللہ خیرا

الجواب وباللہ التوفیق

جو بینک غیر سرکاری یعنی پرائیویٹ بینک ہوں ،ان میں جمع شدہ رقم پر حاصل ہونے والے سود کو غریبوں پر صدقہ کرنا ضروری ہے۔کسی ٹیکس میں اس سودی رقم کا استعمال درست نہیں ہے۔

اور جو بینک سرکاری ہوں اور ان میں جمع شدہ رقم پر حاصل ہونے والا سود کو سرکار کے ان ٹیکسوں میں ادا کیا جاسکتا ہے جن میں سرکار کی طرف سے کوئی  منفعت حاصل نہ ہو،مثلا انکم ٹیکس،سیل ٹیکس، وغیرہ،اور جو ٹیکس ایسے ہوں جن میں گورنمنٹ کی طرف سے منفعت حاصل ہوتی ہے،جیسے واٹر ٹیکس،روڈ ٹیکس،بجلی ٹیکس وغیرہ تو ان میں سودی کا رقم کا استعمال درست نہیں ہے۔

اور پی ایف فنڈمیں سرکار کی جانب سے ایک رقم ذاتی ہوتی ہے،اورایک گورنمنٹ کی طرف سےانعامی ہوتی ہے،اس کا لینا اور استعمال کرنا جائز ہے،اس انعام کے علاوہ مزید سودی رقم  حاصل ہوتو  اس کے ٹیکس میں استعمال کا وہی حکم ہے جو دوسری شق میں موجود ہے۔

صرح الفقہاء بأن من اکتسب مالاً بغیر حق، فإما أن یکون کسبہ بعقد فاسد، کالبیوع الفاسدۃ والاستئجار علی المعاصي والطاعات، أو بغیر عقد، کالسرقۃ والغصب والخیانۃ والغلول، ففي جمیع الأحوال المال الحاصل لہ حرام علیہ، ولکن إن أخذہ من غیر عقد ولم یملکہ یجب علیہ أن یردہ علی مالکہ إن وجد المالک، وإلاَّ ففي جمیع الصور یجب علیہ أن یتصدق بمثل تلک الأموال علی الفقراء۔ (بذل المجہود، کتاب الطہارۃ / باب فرض الوضوء ۱؍۳۵۹ مرکز الشیخ أبي الحسن الندوي مظفرفور أعظم جراہ)

واللہ اعلم بالصواب