Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 330 Category: Permissible and Impermissible
Working at a smoke shop or gas station for a student

Assalamualaikum,

I have a question regarding working at a smoke shop or gas station. My friends and few room mates work at smoke shop and their job is to sell tobacco related products, cigar and CBD's(medicinal drug). The income that they earn throught selling those products, is it considered to be halal or haram? Basically the reason they work over there is to collect money for their university's tution fees and also for rent and other purpose. Can you please provide help regarding this issue?

Jazakallahu khayr

  الجواب وباللہ التوفیق

Though selling tobacco and cigarettes and its income is not Haram but it’s not without کراہت (Karahat) either. Therefore, if one could avoid selling then it would be better otherwise there is room for selling it. And if some person is employee at such shop then there is no harm for him selling these products.

’’ و یمنع من بیع الدخان و شربہ ‘‘ (رد المحتار :۵/۲۹۵)

ومن أکل ما یتأذیٰ بہ: أي برائحتہ کثوم وبصل، ویؤخذ منہ أنہ لو تأذیمن رائحۃ الدخان المشہور لہ منعہا من شربہ۔ (الدر المختار مع الشامي، کتاب النکاح,۴؍۳۸۸ زکریا.و کتاب الاشربہ، ۱۰/۴۴)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 330 Category: Permissible and Impermissible
طلبا کا سگریٹ بیچنے والی دکانوں پر کام کرنا

السلام علیکم

میرے کچھ دوست اور ساتھ رہنے والے تمباکو سگریٹ کی دوکان یا پیٹرول پمپ میں کام کرتے ہیں اور ان کو اپنی ملازمت  میں تمباکو سے متعلقہ چیزیں  اور دوائیاں بیچنی پڑتی ہیں۔ایسی چیزیں بیچنے سے ان کی آمدنی حلال ہے یا حرام ؟

جزاک اللہ خیرا

 

الجواب وباللہ التوفیق

تمباکو اور سگریٹ کی خریدوفروخت اور اس کی آمدنی اگرچہ حرام نہیں ہے لیکن کراہت سے خالی بھی نہیں ہے، اس لئے اگر اس کو چھوڑسکتے ہیں توبہتر ہے ورنہ اس کی گنجائش ہے۔اور اگر کوئی شخص ایسی دوکان میں ملازم ہے تو  اس کے لئے بھی ان چیزوں کو بیچنے میں حرج  نہیں ہے۔

’’ و یمنع من بیع الدخان و شربہ ‘‘ (رد المحتار :۵/۲۹۵)

ومن أکل ما یتأذیٰ بہ: أي برائحتہ کثوم وبصل، ویؤخذ منہ أنہ لو تأذیمن رائحۃ الدخان المشہور لہ منعہا من شربہ۔ (الدر المختار مع الشامي، کتاب النکاح,۴؍۳۸۸ زکریا.و کتاب الاشربہ، ۱۰/۴۴)

واللہ اعلم بالصواب