Friday | 22 February 2019 | 17 Jamadiul-Thani 1440

Fatwa Answer

Question ID: 332 Category: Miscellaneous
Divorce from sinning husband

Assalaamualaikum,

Last year my Nikah was done. I am a Canadian Citizen. The boy whom I got Nikah with is from India but resides in Dubai. 

I came to know he watches PORN stuff. I told him to stop. I told him not to ruin his Aakhirah. He says not to worry about his Aakhirah.

What should I do?

Should I keep my Nikah or should I Divorce him?

Please guide me.

JazaakAllah Khair

الجواب وباللہ التوفیق

Though it’s a very big sin in the Shari’at, but do not take divorce just on this basis.

In the Ahadith, the Wa’eeds (warnings) have been mentioned about such a person, and Allaah T’aalaa will not talk to such a person on the Day of Judgment and will not render His Mercy on him who doesn’t fulfill his desire in a natural way.

Furthermore, the worldly and medical harm and damage this heinous habit causes is that very soon such people become impotent and do not remain capable for their wives. Therefore, explain to him and keep making Du’aa to Allaah T’aalaa.

However, if it gets unbearable/unlivable due to the deficiency in the fulfillment of your rights then consult with some Darul Qazaa where some Mufti can conclude the matter between you two.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 332 Category: Miscellaneous
گنا۰ میں ملوث خاوند سے طلاق لینا

السلام علیکم

میں کینڈین شہری ہوں پچھلے سال میرا نکاح انڈیا کے ایک لڑکے سے ہوا جو دبئی میں رہتا ہے، مجھے پتہ چلا ہے کہ وہ ننگی عورتوں کی فلمیں ؍ تصویریں وغیرہ  دیکھتا ہے، میں نے اسے کہا کہ وہ یہ دیکھنا ختم کردے اور اپنی آخرت خراب نہ کرے وہ کہتا ہے کہ میری آخرت کی فکر نہ کرو۔

مجھے کیا کرنا چاہئے؟ کیا مجھے اپنا نکاح باقی رکھنا چاہئے  یا اس سے طلاق  لے لوں؟ برائے مہربانی میری رہنمائی کیجئے۔

جزاک اللہ خیرا۔

الجواب وباللہ التوفیق

شریعت میں  اگرچہ یہ بہت بڑاگناہ  ہے،لیکن محض اس بنیاد پر آپ ان سے طلاق نہ لیں،احادیث میں ایسے شخص پر وعیدیں بیان کی گئی ہیں،اور قیامت میں حق تعالیٰ ایسے شخص سے بات نہیں کریں گےاور اس پر نظرِ رحمت نہیں فرمائیں گے جو اپنی خواہش کو فطری طریقہ پر پورا نہ کریں،نیز اس کا دنیوی اور طبی نقصان یہ ہوتا ہےکہ دنیا میں ایسے لوگ بہت جلد نامرد ہوجاتے ہیں،اور کسی قابل نہیں رہتے،اس لئے ان کو سمجھائیں اور حق تعالیٰ سے دعاکرتے رہیں ،اگرپھر بھی حقوق  میں کوتاہی کی وجہ سے معاملہ انتہائی ناگزیر ہوجائے تو کسی دارالقضاء سے رجوع ہوکر مسئلہ کی یکسوئی کرلیں۔

واللہ اعلم بالصواب