Friday | 24 May 2019 | 19 Ramadhan 1440

Fatwa Answer

Question ID: 339 Category: Worship
Woman Salah with Jamaat

Assalamualaikum,

May Allaah سبحانه وتعالى gives you all tremendous good rewards in this world and the hereafter. Aameen
Please let me know what is more preferable or virtuous for a woman, to pray individually/separately or to pray salah ba jamaat if the men pray salah ba jamaat in outdoor picnics or get-together in homes.

Also please tell me if a woman is at outdoor place where other non muslims are around too , does a woman have to offer her salah in a standing position? Or she can offer her salah in a sitting position? Jazakumullah! ‬

 

الجواب وباللہ التوفیق

It’s افضل (superior) for a woman to pray Salaat individually whether she is at home or outside, and as much she would pray hiding and away from the people that much it is the point of superiority and reward for her. Further, when the woman prays outside she should pray standing and  پردہ کے ساتھ (covering herself). It’s not correct to pray sitting due to the presence of any people until some excuse prevents from standing.

Hazrat Umm e Hamid رضی اﷲ عنہا came in the presence of Nabi ﷺ and entreated that she had zeal for praying Salaat with him ﷺ. Nabi ﷺ said, “Your zeal is very good (and is a religious passion) but your Salaat in the inner closet is better than the Salaat in the room, and the Salaat in the room is better than the Salaat in the احاطہ (premises) of the house, and the Salaat in the احاطہ (premises) of the house is better than the Salaat in the Masjid of your street, and the Salaat in the Masjid of your street is better than the Salaat in my Masjid (Masjid e Nabawi). Therefore, Hazrat Umm e Hamid رضی اﷲ عنہا by making the requisition had the Masjid (the place to pray Salaat) made in the last corner of her room where it used to be the most darkness. She used to pray her Salaat there till she passed away and she presented in the sublime presence of her Lord. (الترغیب والترہیب ص ۱۸۷جلد اول)  

عن ام حمید امرائۃ ابی حمید الساعدی رضی اﷲ عنہما انھا جاء ت الی النبی ﷺفقالت یا رسول اﷲ ! انی احب الصلوٰۃ معک قال ’’ قد علمت انک تحبین الصلوۃ معی وصلوتک فی بیتک خیر من صلوٰتک فی حجرتک ، وصلوٰتک فی حجر تک خیر من صلوٰتک فی دارک ، وصلوٰتک فی دارک خیر من صلوٰتک فی مسجد قومک وصلوٰتک فی مسجد قومک خیر من صلوٰتک فی مسجدی‘‘ قال : فامرت فبنی لھا مسجد فی اقصیٰ شیئی من بیتھا واظلمہ وکانت تصلی فیہ حتی  لقیت اﷲ عزوجل۔ رواہ احمد وابن خزیمۃ وابن حبان فی صحیحیھما۔

عن ام سلمۃ رضی اﷲ عنہا عن رسول اﷲ ﷺقال خیر مساجد النساء قعر بیو تھن۔رواہ احمد والطبرانی فی الکبیر… الی ۔وقال الحاکم صحیح الا سناد۔

Translation: Hazrat Umm e Salmah رضی اﷲ عنہا narrates from Rasool e Kareem ﷺ that Rasool e Kareem ﷺ  said, “The best Masjid of the women is the depth of their home (i.e., the most closed dark closet) (الترغیب والترھیب ج۱ ص ۱۸۸ للعلامۃ المنذری رحمہ اﷲ )

عن ام سلمۃ رضی اﷲ عنہا قالت قال رسول اﷲ ﷺصلوٰۃ المرأ ۃ فی بیتھا خیر من صلوٰتھا فی حجرتھاوصلاتھا فی حجر تھا خیر من صلاتھا فی دارھا وصلاتھا فی دارھا خیر من صلوٰتھا فی مسجدقومھا۔ رواہ الطبرانی فی الا وسط باسناد جید۔

Translation: Hazrat Umm e Salmah رضی اﷲ عنہا narrates that Rasool e Kareem ﷺ  said, “Salaat in the closed closet is better than the Salaat in the room, and the Salaat in the room is better than the Salaat in the احاطہ (premises) of the house, and the Salaat in the احاطہ (premises) of the house is better than the Salaat in the Masjid of your street. (الترغیب والترھیب ج۱ ص۱۸۸)

عن ابن مسعود رضی اﷲ عنہ قال ما صلت امرأۃ من صلوٰۃ احب الی اﷲ من اشد مکان فی بیتھا ظلمۃ۔رواہ الطبرانی فی الکبیر۔

Translation: The most beloved Salaat of a woman in the sight of Allaah T’aalaa is that Salaat which she would have prayed in a very dark closet. (التر غیب والترہیب ج۱ ص ۱۸۹)

وقال صل اللہ علیہ وسلم صلاتہافی قعربیتہا افضل من صلاتہافی صحن دارہاوصلاتہافی صحن دارہا افضل من صلاتہافی مسجدہاوبیوتہن خیرلہن ، ولانہ لایؤمن الفتنۃ من خروجہن ، اطلقہ فشمل الشابۃ والعجوزوالصلاۃ النہاریۃ واللیلیۃ ، قال المصنفؒ فی الکافی والفتوی الیوم علی الکراہۃ فی الصلوۃ کلہالظہورالفساد ’’ … ( البحر : ۱ ؍ ۶۲۸ ، ۶۲۷ )

والفتویٰ الیوم علی المنع فی الکل فلذلک اطلق المصنف ویدخل فی قولہ الجماعات الجمع والا عیاد والا ستسقاء ومجالس الوعظ ولا سیما عند الجھال الذین تحلوابحلیۃ العلماء وقصدھم الشھوات وتحصیل الدنیا۔

Translation: And the Fatwa nowadays is this that to go for the five times Salaat whether those are in the day time or the night, is forbidden for both a young woman and an old woman, and in the statement الجماعات (Al Jama’aat) of the author of کنز الدقائق Kanz ud Daqaaiq جمعہ Jumu’ah, عیدین Eidain, استسقاء Istisqa, and the gatherings of sermons are also included, especially the gatherings of those ignorant preachers who make the appearance like the ‘Ulama but their objective is to fulfill their lust desires and earn the world. (عینی شرح کنز ج۱ ص ۴۰ باب الا مامۃ)

وھذا التجویز انما کان بحسب زمانھم واما الآن فالفتنۃ لا ختلاط النساء والرجال غالبۃ لفساد اھل الزمان۔ الی قولہ فما ظنک بھذا الزما الذی ھو زمان الفتنۃ فھذا الزمان احریٰ لسقوط الجماعۃ عنھن فھذا الزمان احریٰ بالمنع عن الخروج الی الجما عۃ لان الجماعۃ غیر لازمۃ علیھن بالنص والتحرز عن الفتنۃ واجب للعمومات لا نعقاد الا جماع علی حرمۃ الباب الحرام الخ (رسائل الارکان ص ۱۰۰فصل فی الجماعۃ)

واﷲ اعلم بالصواب

 

Question ID: 339 Category: Worship
عورت کا جماعت سے نماز پڑھنا

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

اللہ سبحانہ وتعالیٰ دنیا وآخرت میں آپ کو بے انتہاجزیائے خیر عطا فرمائے۔ آمین

ایک عورت کے لیے اپنی، انفرادی،علیحدہ نماز پڑھنا زیادہ افضل، زیادہ اجر والی ہے یا جماعت کے ساتھ جب کہ ہم باہر سیروتفریح،پکنک کے لیے گئے ہوئے ہوں یا کسی کے گھر جمع ہوں،برائے مہربانی یہ بھی بتادیجئے کہ اگر ایک عورت کہیں باہر نماز پڑھ رہی ہے  جہاں اور غیر مسلم بھی موجود ہوں، کیا اسے کھڑے ہوکر ہی نماز پڑہنی پڑے گی یا وہ بیٹھ کر بھی نماز پڑہ سکتی ہے؟

جزاکم اللہ خیر وبارک اللہ فیکم وجعلہ اللہ فی میزان حسناتکم

الجواب وباللہ التوفیق

عورت کا گھر ہو یا باہر تنہا نماز پڑھنا افضل ہے، اور جتنا چھپ کر اور لوگوں سے دور ہوکر وہ نماز پڑھے اتنا ہی اس کے لئے فضیلت اور اجر کی بات ہے۔نیز عورت جب باہر پڑھے تو کھڑے ہوکر پردہ کے ساتھ نماز پڑھے،کسی کی موجودگی کی وجہ سے بیٹھ کر نماز ادا کرنا صحیح نہیں ہے۔تاآنکہ کھڑے ہونے سے کوئی عذر مانع بن جائے۔

حضرت ام حمید رضی اﷲ عنہا نے بارگاہ نبویﷺمیں  حاضر ہو کر عرض کیا کہ مجھے آپ کے ساتھ نماز پڑھنے کا شوق ہے ، آپﷺ نے فرمایا، تمہارا شوق بہت اچھا ہے (اور دینی جذبہ ہے ) مگر تمہاری نماز اندورنی کوٹھری میں  کمرہ کی نماز سے بہتر ہے، اور کمرہ کی  نماز گھر کے احاطہ کی نماز سے بہتر ہے ، اور گھر کی احاطہ کی نماز محلہ کی مسجد کی نماز سے بہتر ہے اور محلہ کی مسجد کی نماز میری مسجد (یعنی مسجد نبوی ) کی نما ز سے بہتر ہے ،چنانچہ حضرت ام حمید رضی اﷲ عنہا نے فرمائش کر کے اپنے کمرے (کوٹھے) کے آخری کونے میں  جہاں  سب سے زیادہ اندھیرا رہتاتھا مسجد (نماز پڑھنے کی جگہ ) بنوائی ، وہیں  نماز پڑھاکرتی تھیں  ، یہاں  تک کہ ان کا وصال ہوگیا اور اپنے خدا کے حضور میں حاضر ہوئیں  ۔(الترغیب والترہیب ص ۱۸۷جلد اول)

عن ام حمید امرائۃ ابی حمید الساعدی رضی اﷲ عنہما انھا جاء ت الی النبی ﷺفقالت یا رسول اﷲ ! انی احب الصلوٰۃ معک قال ’’ قد علمت انک تحبین الصلوۃ معی وصلوتک فی بیتک خیر من صلوٰتک فی حجرتک ، وصلوٰتک فی حجر تک خیر من صلوٰتک فی دارک ، وصلوٰتک فی دارک خیر من صلوٰتک فی مسجد قومک وصلوٰتک فی مسجد قومک خیر من صلوٰتک فی مسجدی‘‘ قال : فامرت فبنی لھا مسجد فی اقصیٰ شیئی من بیتھا واظلمہ وکانت تصلی فیہ حتی  لقیت اﷲ عزوجل۔ رواہ احمد وابن خزیمۃ وابن حبان فی صحیحیھما۔

عن ام سلمۃ رضی اﷲ عنہا عن رسول اﷲ ﷺقال خیر مساجد النساء قعر بیو تھن۔رواہ احمد والطبرانی فی الکبیر… الی ۔وقال الحاکم صحیح الا سناد۔

ترجمہ:۔حضرت ام سلمہ رسول کریم ﷺ سے روایت کرتی ہیں  ، کہ حضور اکرمﷺنے فرمایا ’’ عورتوں  کی سب سے بہترین مسجد ان کے گھر کی گہرائی ہے (یعنی سب سے زیادہ بند تاریک کوٹھری)(الترغیب والترھیب ج۱ ص ۱۸۸ للعلامۃ المنذری رحمہ اﷲ )

عن ام سلمۃ رضی اﷲ عنہا قالت قال رسول اﷲ ﷺصلوٰۃ المرأ ۃ فی بیتھا خیر من صلوٰتھا فی حجرتھاوصلاتھا فی حجر تھا خیر من صلاتھا فی دارھا وصلاتھا فی دارھا خیر من صلوٰتھا فی مسجدقومھا۔ رواہ الطبرانی فی الا وسط باسناد جید۔

ترجمہ:۔حضور اقدسﷺنے فرمایا، عور ت کی نماز بند کوٹھری میں  کمرہ کی نماز سے بہتر ہے ، اور کمرہ کی نماز گھر (کے احاطہ) کی نماز سے بہتر ہے ، اور گھر کے احاطہ کی نماز محلہ کی مسجد کی نماز سے بہتر ہے۔(الترغیب والترھیب ج۱ ص۱۸۸)

عن ابن مسعود رضی اﷲ عنہ قال ما صلت امرأۃ من صلوٰۃ احب الی اﷲ من اشد مکان فی بیتھا ظلمۃ۔رواہ الطبرانی فی الکبیر۔

ترجمہ:۔عورت کی سب سے زیادہ محبوب نماز خدا کے نزدیک وہ نماز ہے جو اس نے بہت ہی تاریک کوٹھری میں  پڑھی ہو (التر غیب والترہیب ج۱ ص ۱۸۹)

وقال صل اللہ علیہ وسلم صلاتہافی قعربیتہا افضل من صلاتہافی صحن دارہاوصلاتہافی صحن دارہا افضل من صلاتہافی مسجدہاوبیوتہن خیرلہن ، ولانہ لایؤمن الفتنۃ من خروجہن ، اطلقہ فشمل الشابۃ والعجوزوالصلاۃ النہاریۃ واللیلیۃ ، قال المصنفؒ فی الکافی والفتوی الیوم علی الکراہۃ فی الصلوۃ کلہالظہورالفساد ’’ … ( البحر : ۱ ؍ ۶۲۸ ، ۶۲۷ )

والفتویٰ الیوم علی المنع فی الکل فلذلک اطلق المصنف ویدخل فی قولہ الجماعات الجمع والا عیاد والا ستسقاء ومجالس الوعظ ولا سیما عند الجھال الذین تحلوابحلیۃ العلماء وقصدھم الشھوات وتحصیل الدنیا۔ ترجمہ:۔اور آج کل فتویٰ اس پر ہے کہ تمام نمازوں  میں  جاناخواہ دن کی ہو یا رات کی ، جو ان اور ضعیفہ دونوں  کے لئے ممنوع ہے ، اور مصنف (کنز الدقائق کے مصنف) کے قول ’’ الجماعات‘‘ میں  جمعہ، عیدین ،استسقاء اور وعظ کی مجلسیں  بھی شامل ہیں  ، بالخصوص ان جاہل واعظوں  کی مجلسیں  جو علماء جیسی صورتیں  بنا لیتے ہیں ، اور مقصود ان کا اپنی خواہشات نفسانی پورا کرنا اور دنیا کمانا ہے (عینی شرح کنز ج۱ ص ۴۰ باب الا مامۃ)

وھذا التجویز انما کان بحسب زمانھم واما الآن فالفتنۃ لا ختلاط النساء والرجال غالبۃ لفساد اھل الزمان۔ الی قولہ فما ظنک بھذا الزما الذی ھو زمان الفتنۃ فھذا الزمان احریٰ لسقوط الجماعۃ عنھن فھذا الزمان احریٰ بالمنع عن الخروج الی الجما عۃ لان الجماعۃ غیر لازمۃ علیھن بالنص والتحرز عن الفتنۃ واجب للعمومات لا نعقاد الا جماع علی حرمۃ الباب الحرام الخ (رسائل الارکان ص ۱۰۰فصل فی الجماعۃ)

واﷲ اعلم بالصواب