Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 348 Category: Permissible and Impermissible
Birth Control

Assalamualaikum,

I would like to if birth control such as interuterine devices (IUD) for female and birth control pill allowed in Islam? Why, or why not?

الجواب وباللہ التوفیق

If the birth control medicines are used for ever then it is not permissible. Doing this it is to bring change in the creation of Allaah T’aalaa, and if it is temporary but due to poverty and financial fears then it’s also not permissible, and the reason is apparent. If it is due to some reason, e.g., weakness or severe illness, or the danger for the mother or the baby then there is no کراہت (Karahat), and if it is without reason then it’s مکروہ (Makrooh) because it’s against the منشأ شریعت (desire of the Sharia’t i.e., large number of the Ummat) and in the Ahadith Nabi ﷺ has declared it to be وأد خفي (secretly burying alive).

عن ابن محیریز أنہ قال: دخلت المسجد فرأیت أبا سعید الخدريؓ فجلست إلیہ فسألتہ عن العزل، قال أبو سعید الخدري: خرجنا مع رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم في غزوۃ بني المصطلق فأصبنا سبیا من سبي العرب فاشتہینا النساء فاشتدت علینا العزبۃ وأحببنا العزل، فأردنا أن نعزل، وقلنا: نعزل ورسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم بین أظہرنا قبل أن نسألہ، فسألناہ عن ذلک، فقال ما علیکم ألا تفعلوا ما من نسمۃ کائنۃ إلی یوم القیامۃ إلا وہي کائنۃ۔ (بخاري شریف، کتاب المغازي، باب غزوۃ بني المصطلق من خزاعۃ، النسخۃ الہندیۃ ۲/ ۵۹۳، رقم: ۳۹۸۹، ف: ۴۱۳۸)

عن جُدامۃ بنت وہب قالت: حضرتُ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم في أناس وہو یقول: لقد ہممتُ أن أنہی عن الغیلۃ فنظرت في الروم وفارس، فإذا ہم یغیلون أولادہم فلا یضرُّ أولادہم ذٰلک شیئًا ثم سألوہ عن العزل، فقال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: ذٰلک الواد الخفي، وہي: {وَاِذَا الْمَوْئٗ دَۃُ سُئِلَتْ} (صحیح مسلم، مشکاۃ المصابیح ۲۷۶)

قال ابن الہمام: وصح عن ابن مسعود أنہ قال: ہي الموء ودۃ الصغریٰ، وصح عن أبي أمامۃ أنہ سئل عنہ، فقال: ما کنت أری مسلمًا یفعلہ۔ وقال نافع عن ابن عمر ضرب عمر علی العزل بعض بنیہ۔ وعن عمر وعثمان أنہما کانا ینہیان عن العزل، والظاہر أن النہي محمول علی التنزیہ۔ (مرقاۃ المفاتیح شرح مشکاۃ المصابیح ۶؍۳۱۸ دار الکتب العلمیۃ بیروت)

قال ابن الہمام: العزل جائز عند عامۃ العلماء، وکرہہ قوم من الصحابۃ وغیرہم، والصحیح الجواز۔ (فتح القدیر ۳؍۲۷۲ دار الفکر بیروت)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 348 Category: Permissible and Impermissible
مانع حمل ادویہ استعمال کرنا

السلام علیکم

میں یہ معلوم کرنا چاہتا ؍چاہتی ہوں کہ عورت کے لئے مانع حمل اشیا مثلاً  : شرم گاہ کے اندر IUD(آئی یو ڈی) اور مانع حمل گولیوں کے استعمال کی اسلام میں اجازت ہے؟ کیوں یا، کیوں نہیں؟

الجواب وباللہ التوفیق

مانع حمل ادویہ کا استعمال ہمیشہ کے لے ہوتو یہ جائز نہیں ہے،اس میں تغیر لخلق اللہ ہے،اور اگرعارضی طور پرہو لیکن  تنگدستی اورمعاشی خوف  کی وجہ سے ہوتو یہ بھی جائز نہیں ہے،اور وجہ ظاہر ہے،اور اگر کسی عذر کی وجہ سے ہو مثلا کمزری یا شدید تکلیف یا ماں یا بچہ کے لئے خطرہ وغیرہ تو کوئی کراہت نہیں ہے،اور اگر بلاعذ ر ہوتو مکروہ ہے۔کیونکہ منشأ شریعت (امت کی کثرت)کے خلاف ہے اور احادیث میں نبی مکرم ﷺ نے اسے وأد خفي (خفیہ زندہ درگور کرنا) قرار دیا ہے۔

عن ابن محیریز أنہ قال: دخلت المسجد فرأیت أبا سعید الخدريؓ فجلست إلیہ فسألتہ عن العزل، قال أبو سعید الخدري: خرجنا مع رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم في غزوۃ بني المصطلق فأصبنا سبیا من سبي العرب فاشتہینا النساء فاشتدت علینا العزبۃ وأحببنا العزل، فأردنا أن نعزل، وقلنا: نعزل ورسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم بین أظہرنا قبل أن نسألہ، فسألناہ عن ذلک، فقال ما علیکم ألا تفعلوا ما من نسمۃ کائنۃ إلی یوم القیامۃ إلا وہي کائنۃ۔ (بخاري شریف، کتاب المغازي، باب غزوۃ بني المصطلق من خزاعۃ، النسخۃ الہندیۃ ۲/ ۵۹۳، رقم: ۳۹۸۹، ف: ۴۱۳۸)

عن جُدامۃ بنت وہب قالت: حضرتُ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم في أناس وہو یقول: لقد ہممتُ أن أنہی عن الغیلۃ فنظرت في الروم وفارس، فإذا ہم یغیلون أولادہم فلا یضرُّ أولادہم ذٰلک شیئًا ثم سألوہ عن العزل، فقال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: ذٰلک الواد الخفي، وہي: {وَاِذَا الْمَوْئٗ دَۃُ سُئِلَتْ} (صحیح مسلم، مشکاۃ المصابیح ۲۷۶)

قال ابن الہمام: وصح عن ابن مسعود أنہ قال: ہي الموء ودۃ الصغریٰ، وصح عن أبي أمامۃ أنہ سئل عنہ، فقال: ما کنت أری مسلمًا یفعلہ۔ وقال نافع عن ابن عمر ضرب عمر علی العزل بعض بنیہ۔ وعن عمر وعثمان أنہما کانا ینہیان عن العزل، والظاہر أن النہي محمول علی التنزیہ۔ (مرقاۃ المفاتیح شرح مشکاۃ المصابیح ۶؍۳۱۸ دار الکتب العلمیۃ بیروت)

قال ابن الہمام: العزل جائز عند عامۃ العلماء، وکرہہ قوم من الصحابۃ وغیرہم، والصحیح الجواز۔ (فتح القدیر ۳؍۲۷۲ دار الفکر بیروت) 

واللہ اعلم بالصواب