Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 351 Category: Miscellaneous
Divorce

Assalamualaikum,

We have beem married for over 20 years. I divorced my wife two times liong time ago. I just learned that after saying divorce 1-2 times we should have 3 months 'Iddat period but we didn't follow that rulling due to not knowing and started living like husband and wife within few days. Please advise how we make up that islamic rulling?

Jazaakallaah

الجواب وباللہ التوفیق

If by two times you mean that, at a time you gave two divorces to your wife or after giving one divorce you gave second divorce before the wife’s ‘Iddat completed, and you both started living together before the completion of the wife’s ‘Iddat, i.e., before the completion of three menstrual periods, then this re-establishment of matrimonial relationship is Shar’an correct, however, you only own the right of one more divorce, as soon as you give one more divorce, three divorces will take effect on your wife, and she will become Haraam on you forever.

And if you had given divorce after long interval or those had been more than two then total how many divorces were given? And please clarify how much time interval was there after giving one divorce till you gave the second divorce because in this situation the nature of the issue will be different, the ruling about it can only be advised after knowing its detail.

As to your statement that there should be an interval of three months or three menstrual periods after one or two divorces, what it means is that during this ‘Iddat the husband has the choice that if he wants to keep his wife then he makes Rujoo’ with his wife and starts living with her, if he wants to leave her then he should leave her and don’t take his wife back in his matrimonial relationship.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 351 Category: Miscellaneous
وقفہ وقفہ سے دوطلاق

السلام علیکم

ہماری شادی کو بیس سال سے زیادہ ہوگئے ہیں، بہت عرصہ  ہوا میں دو دفعہ اپنی بیوی کو طلاق دے چکا ہوں، حال ہی میں مجھے پتہ چلا کہ ایک یا دو دفعہ طلاق کہنے کے بعد ہمیں ۳ مہینے کا عدت کا ٹائم رکھنا چاہئے، لیکن ہم نے اس اصول کا لحاظ نہیں رکھا ،کیونکہ ہمیں پتہ نہیں تھا اور کچھ دنوں کے اندر ہم نے خاوند اور  بیوی کی طرح رہنا شروع کردیا۔ برائے مہربانی بتائیے کہ ہم اس اسلامی حکم پورا نہ کرنے کا کیا کفارہ کریں؟

 

الجواب وباللہ التوفیق

اگر دو دفعہ سے  آپ  کی مراد یہ ہوکہ آپ نے اپنی بیوی کوایک ساتھ دو طلاقیں دی تھیں یا ایک طلاق  دینےکے بعد عورت کی عدت گزرنے سے قبل دوسری طلاق دی، اورپھر آپ دونوں عورت کی عدت یعنی  تین حیض گزرنے سے قبل ساتھ رہنے لگے تھے  تو یہ ملنا  شرعا صحیح ہے،البتہ اب آپ صرف ایک ہی طلاق کے مالک رہیں گے،ایک طلاق دیتے ہی آپ کی بیوی پر تین طلاقیں وقع ہوجائیں گی،اور وہ ہمیشہ کے لئے حرام ہوجائے گی۔

اور اگر طویل وقفہ سے آپ نے طلاق دی ہوں  یا دو سے زائد ہوں تو کل کتنی طلاقیں ہوئیں،اور ایک دفعہ طلاق دینے کے بعد دوسری طلاق میں کتنا وقفہ گزرا اس کو واضح کریں،کیونکہ اس صورت میں مسئلہ کی الگ نوعیت ہوگی،اس کی تفصیل سامنے آنے کے بعد اس کا حکم بتایاجاسکتا ہے۔

رہی سوال میں ذکر کردہ یہ بات کہ ایک یا دو طلاقوں کے بعد تین ماہ یا  تین حیض کا وقفہ ہونا چاہیے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ  اس عدت میں آدمی کو اختیار ہوتا ہے کہ وہ رکھنا چاہے تو بیوی سے رجوع کرلے اور ساتھ رہنا شروع کردے اگر چھوڑنا چاہے تو چھوڑدے۔اور دوبارہ بیوی کو  زوجیت میں واپس نہ لے۔

واللہ اعلم بالصواب