Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 36 Category: Worship
Accepting Zakat in Homeschooling Maktab

Assalamualaikum Warahmatullah

My question is regarding Sadaqa, Zakatul-Fitr and Zakat. We have recently started a homeschooling maktab for our kids who are doing hifz in the madrasah. Can the amount we receive in form of Sadaqah, Zakatul-Fitr and Zakat can be used to pay the salaries for the teachers and to help fund the tuition for the students who cannot afford pay their fees for the madrasah or homeschooling? JazakAllah Khair

 الجواب وباللہ التوفیق

Assalamualaikum Warahmatullah

  1. First of all, such small Makatibs where children are not living (like they do in boarding schools) and there is no facility for their stay and food etc. or such schools where fees and tuition is being charged, generally they should not even accept the Zakat money. This is because such places are not considered as “Masraf” (i.e. places where Zakat can be spent) and due to the fact that sometimes Zakat money is utilized by such institutions in places where Zakat money should not be utilized.
  2. If however such a Maktab or school has accepted Zakat, it is impermissible to pay the salary for teachers from it.

If there are such poor and needy students in these establishments who are eligible, can't even pay little fees and are deserving to receive Zakat, Zakat money can be given to them. If money cannot be given to them, then it is a must that the ownership of an object bought with Zakat money be given to them, without this process the Zakat will not be considered as paid. 

ولا يجوز دفعها إلى ولد الغني الصغير كذا في التبيين. ولو كان كبيرا فقيرا جاز. (الفتاوی الھندیۃ:۱؍۱۸۹، کتاب الزکاۃ)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 36 Category: Worship
ہوم اسکولنگ مکتب میں زکوۃ کا پیسہ لینا

 

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

میرا سوال صدقے، زکوۃ الفطر اور زکوۃ سے متعلق ہے۔ ہم نے حال ہی میں ہوم اسکولنگ ، مکتب اور مدرسہ ہے جس میں بچے حفظ وغیرہ کرتے ہیں ۔ ہمیں جو صدقہ، زکوۃ اور زکوۃالفطر لوگ دیتے ہیں کیا اس کو ہم اساتذہ کی تنخواہیں دینے اوران بچوں کا خرچہ اٹھانے میں خرچ کر سکتے ہیں جو مدرسہ اور مکتب کی فیس وغیرہ ادا کرنے کے قابل نہیں؟

جزاک اللہ خیرا

 

 

 

 الجواب وباللہ التوفیق

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

(۱)اولا زکوۃ کا مال چھوٹے مکاتب جہاں بچے مقیم نہ ہوں اور ان کے قیام و طعام کا نظم نہ ہو یاایسے اسکولس جہاں فیس لے کراسکول کا نظام چلایاجاتا ہوتو بالعموم زکوۃ کے مصارف نہ ہونے یا مصارف میں اس رقم کے خرچ نہ کرنے کی وجہ سےان کو زکوۃ کا مال لینا ہی نہیں چاہئیے۔ (۲)اگر لے لیں تواس کو اساتذہ کی تنخواہ میں دینا جائز نہیں ہے۔(۳)البتہ غریب اور نادار لڑکےجوزکوۃ کے مستحق ہیں اورمعمولی فیس کا بھی تحمل نہیں رکھتے ہیں تو اُن کو زکوۃ وغیرہ کا مال دیاجاسکتا ہے، یا اگر مال نہ دیاجائے تو کم ازکم زکوۃ کے مال سے کسی چیز کوخرید کر ان کو مالک بنانا ضروری ہے۔اس کے بغیر زکوۃ ادا نہیں ہوتی۔

ولا يجوز دفعها إلى ولد الغني الصغير كذا في التبيين. ولو كان كبيرا فقيرا جاز. (الفتاوی الھندیۃ:۱؍۱۸۹، کتاب الزکاۃ)

فقط واللہ اعلم بالصواب