Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 371 Category: Worship
Praying Salatul Janaza Multiple Times

Assalamualaikum,

At one place a brother passed away in one city. All relatives performed Salatul Janazah in that city. Then they took Janazah to village where he would be buried. All people performed one more Salatul janazah and then they took Janazah to the cemetry and then performed one more Salatul janazah.

So total 3 Salat were performed for one deceased and then they buried the deceased. 

Is that right? Is it allowed in Islam? Any fatwa about performing multiple Salat ul Janazah.

And also all relatives are taking pride that their relative had 3 Janazah prayers.

الجواب وباللہ التوفیق

The Salat ul Janazah in reality is prescribed to pray one time, however, if the Wali of the deceased had not prayed the Salat ul Janazah and he wants to pray again then there is permission for it but it is necessary that those who have prayed before they should not participate again. In the situation inquired about if the Wali of the deceased had prayed the Salat ul Janazah or he had given permission then to pray several Salats this way was not correct and when the worships have no room for boasting then how it can have room for it in the incorrect actions.

It comes in the Fatawa Hindiya:

ولا یصلی علی میت  واحد الا مرۃ واحدۃ (فتاویٰ ہندیہ:  کتاب الصلاۃ، ۱ / ۱۶۳)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 371 Category: Worship
نماز جنازہ متعدد مرتبہ پڑھنا

السلام علیکم

ایک بھائی کا ایک شہر میں انتقال ہوگیا سب رشتہ داروں نے اس شہر میں اس  کی نمازِجنازہ پڑہی، پھر اس کی میت تدفین کے لیے اس کے گاؤں لے گئے اور وہاں  پھر نمازِجنازہ پڑہی، اس کے بعد میت کو قبرستان لے گئے اور وہاں ایک دفعہ پھر نماز جنازہ پڑھی، اس طرح تین دفعہ نماز جنازہ پڑہی پھر میت کو دفن کیا گیا ایسا کرنا صحیح ہے؟ کیا اس کی اسلام میں اجازت ہے؟ برائے مہربانی ایک ہی میت پر کئی دفعہ نمازِ جنازہ پڑہنے کے بارے میں فتویٰ دیجئے، اس کے علاوہ اس کے تمام رشتہ دار اس بات پر فخر جتارہے ہیں کہ ہمارے رشتہ دار کی تین نماز جنازہ ہوئیں

الجواب وباللہ التوفیق

جنازہ کی نماز اصلا  ایک دفعہ مشروع ہے،البتہ اگر میت کے ولی نے نمازہ جنازہ نہیں پڑھی تھی اور وہ دوبارہ پڑھنا چاہے تو اس کے لئے اجازت ہے،البتہ یہ ضروری ہےکہ جو پہلے پڑھ چکے ہیں وہ دوبارہ اس میں شرکت نہ کریں،صورت مسؤلہ میں اگر میت کے ولی نے نماز پڑھ لی تھی یا اس نے اجازت دے دی تھی  تو پھر اس طرح متعدد نمازیں ادا کرنا درست نہیں ہوا۔اور جب عبادات میں فخر کی گنجائش نہیں تو منکر اعمال  پر کیسے گنجائش ہوسکتی ہے؟

فتاویٰ ہندیہ میں ہے: ولا یصلی علی میت  واحد الا مرۃ واحدۃ (فتاویٰ ہندیہ:  کتاب الصلاۃ، ۱ / ۱۶۳)

واللہ اعلم  بالصواب