Wednesday | 22 May 2019 | 17 Ramadhan 1440

Fatwa Answer

Question ID: 378 Category: Miscellaneous
Narrating Drama words of Divorce

Assalamualaikum,

My question is regarding divorce. My husband and me frequently watch dramas together. During the dramas there are dialogues regarding divorce my husband repeats them without intending to give divorce. For instance, we were watching a scene and I left  for a few minutes and when I came back I asked him what happened in the drama and he repeated I am divorcing you that's what the character in the drama said to his wife (main talaq deta hoon). My question is does this count as divorce?

Thank you and waiting for your reply.

الجواب وباللہ التوفیق

If these words of the husband are the copying of the drama words then it’s called a narration. Saying it this way the divorce doesn’t take effect, however, it’s better to avoid copying these words in future.

يشترط بالاتفاق القصد في الطلاق،وهو إرادة التلفظ به، ولو لم ينوه، أي إرادة لفظ الطلاق لمعناه، بألا يقصد بلفظ الطلاق غير المعنى الذي وضع له، ولايشترط في هذا الركن إلا تحقيق المراد به، فلا يقع طلاق فقيه يكرره، ولا طلاق حاكٍ عن نفسه أو غيره؛ لأنه لم يقصد معناه، بل قصد التعليم والحكاية،(الفقہ الاسلامی وادلتہ : ۹/۳۴۶)  

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 378 Category: Miscellaneous
کیا طلاق کے الفاظ حکایتًا نقل کرنے سے طلاق ہوتی ہے؟

السلام علیکم

میرا سوال طلاق کے متعلق ہے، میں اور میرے خاوند اکثر اکھٹے ڈرامے دیکھتے ہیں، ڈراموں کے دوران اداکار طلاق کے بارے میں جملے بولتے ہیں جو میرے خاوند  بغیر نیت دہرادیئے ہیں، مثال کے طور پر  ہم ڈرامے میں ایک منظر دیکھ رہے تھے میں کسی کام سے کچھ منٹ کے لیے کمرے سے باہر چلی گئی، جب میں واپس آئی تو میں نے پوچھا کہ ڈرامے میں کیا ہوا تو انہوں نے دہرایا کہ ’’میں تمہیں طلاق دے رہا ہوں، یہ ڈرامے میں ایک کردار نے اپنی بیوی سے کہا‘‘۔

میرا سوال یہ ہے کہ ان کا یہ کہنا میرے حق میں کیا طلاق قرار پائے گا؟شکریہ اور میں جواب کا انتظار کررہی ہوں۔

الجواب وباللہ التوفیق

شوہر کے یہ الفاظ اگر ڈرامے کے الفاظ کی نقل ہوں تو یہ حکایت ہوتی ہے،اس طرح کہنے سے طلاق واقع نہیں ہوتی،البتہ آئندہ اس سے احتیاط بہتر ہے۔

يشترط بالاتفاق القصد في الطلاق،وهو إرادة التلفظ به، ولو لم ينوه، أي إرادة لفظ الطلاق لمعناه، بألا يقصد بلفظ الطلاق غير المعنى الذي وضع له، ولايشترط في هذا الركن إلا تحقيق المراد به، فلا يقع طلاق فقيه يكرره، ولا طلاق حاكٍ عن نفسه أو غيره؛ لأنه لم يقصد معناه، بل قصد التعليم والحكاية،(الفقہ الاسلامی وادلتہ : ۹/۳۴۶)

واللہ اعلم بالصواب