Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 380 Category: Permissible and Impermissible
About beard?

Is it Sunnah, Wajib, or Fard to grow a beard in Islam?

If it is Wajib or Fard or Haraam (big sin) not to keep the beard or trim it then why did Allamah Iqbal, Tipu Sultan (Mysore), qari abdul basit abdus samad(egypt) have no beard?

الجواب وباللہ التوفیق

It’s Wajib on every Muslim man to keep one fist beard, to make it less than a fist is impermissible.

عن ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما عن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال: خالِفوا المشرکین ووفِّروا اللحیٰ۔ وکان ابن عمر إذا حج أو اعتمر قبض علیٰ لحیتہ فما فضل أخذہ۔(صحیح البخاري، کتاب اللباس،باب تقلیم الأظفار،رقم: ۵۸۹۲)

Translation: Hazrat Nabi Karim صلی اللّٰہ علیہ وسلم has said that: Oppose the Mushrikeen and make beards long and trim the moustaches. When Hazrat Ibne ‘Umar R.A. used to get done with the Hajj or ‘Umrah , he would hold his beard in the fist and would cut the hair below the fist.

The people who don’t keep the beard are responsible for their action, you should ask them the reason not us.

قال في الشامي: وأما الأخذ منہا وہي دون ذلک کما یفعلہ بعض المغاربۃ ومخنثۃ الرجال فلم یبحہ أحد۔ وأخذ کلہا فعل یہود الہند ومجوس الأعاجم (شامي : ۳؍۳۹۸ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 380 Category: Permissible and Impermissible
داڑھی کی شرعی حیثیت

کیا اسلام میں داڑھی رکھنا سنت ،واجب،یافرض ہے؟ اگر یہ واجب یا فرض ہے اور اس کا کاٹنا حرام، گناہ کبیرہ ہے تو علامہ اقبال، ٹیپوسلطان(میسور)،قاری عبدالباسط عبدالصمد(مصر) کی داڑھی کیوں نہیں تھی؟

الجواب وباللہ التوفیق

ہر مسلمان پر ایک مشت داڑھی رکھنا واجب ہے، ایک مشت سے کم کروانا ناجائز ہے۔

عن ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما عن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال: خالِفوا المشرکین ووفِّروا اللحیٰ۔ وکان ابن عمر إذا حج أو اعتمر قبض علیٰ لحیتہ فما فضل أخذہ۔(صحیح البخاري، کتاب اللباس،باب تقلیم الأظفار،رقم: ۵۸۹۲)

ترجمہ:- حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: مشرکوں کی مخالفت کرو اور داڑھیاں بڑھاؤ اور مونچھیں کترواؤ، اور حضرت ابن عمر جب حج یا عمرہ سے فارغ ہوتے تو اپنی داڑھی کو مٹھی میں پکڑکر جو بال نیچے رہ جاتے اُنہیں کاٹ دیتے۔

جو لوگ داڑھی نہیں رکھتے ہیں  وہ اپنے عمل کے ذمہ دار ہیں۔اس کی وجہ ان سے جانیں۔ہم سے نہیں۔

 قال في الشامي: وأما الأخذ منہا وہي دون ذلک کما یفعلہ بعض المغاربۃ ومخنثۃ الرجال فلم یبحہ أحد۔ وأخذ کلہا فعل یہود الہند ومجوس الأعاجم (شامي : ۳؍۳۹۸ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب