Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 395 Category: Permissible and Impermissible
Is it permissible to only wish "Happy Christmas" to our christian friends?

Is it permissible to only wish "Happy Christmas" to our christian friends, its should be noted that I am only asking to wish not celebrate. Please repsond as soon as possible.

الجواب وباللہ التوفیق

Saying Happy Christmas though only as a prayer is not permissible due to their resemblance. Also the expression of agreement with their polytheistic action is found in it, therefore, it is mandatory to stay away from it.

ولا ترکنوٓا إلی الذین ظلموا فتمسکم النار وما لکم من دون اللّٰہ من أولیآء ثم لا تنصرون(ہود : ۱۱۳)

And incline not toward those who do wrong lest the Fire touch you, and ye have no protecting friends against Allah, and afterward ye would not be helped. (113)

عن ابن عمر قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ من تشبہ بقوم فہو منہم ‘‘ ۔ (سنن ابی داود: ص/۵۵۹ ، کتا ب اللباس)

’’ من تشبہ بقوم ‘‘ ہذا عام في الخلق والخلق والشعار وإذا کان الشعار أظہر في التشبہ ۔ (شرح الطیبی : ۸/۲۳۲، رقم :۴۳۷۴)

 (من تشبہ بقوم) أي تزیا في ظاہرہ بزیہم وفي تعرفہ بفعلہم وفي تخلقہ بخلقہم وسار بسیرتہم وہدیہم في ملبسہم وبعض أفعالہم وقال بعضہم : قد یقع التشبہ في أمور قلبیۃ من الاعتقادات وإرادات وأمور خارجیۃ ، من أقوال وأفعال قد تکون عبادات وقد تکون عادات في نحو طعام ولباس ومسکن ونکاح واجتماع وافتراق وسفر وإقامۃ ورکوب وغیرہا ، وبین الظاہر والباطن ارتباط ومناسبۃ وقد بعث اللّٰہ المصطفی ﷺ بالحکمۃ التي ہي سنۃ وہي الشرعۃ والمنہاج الذي شرعہ لہ فکان مما شرعہ لہ من الأقوال والأفعال ما یباین سبیل المغضوب علیہم والضآلّین فأمر بمخالفتہم في الہدي الظاہر في ہذا الحدیث ، وإن لم یظہر فیہ مفسدۃ لأمور - منہا أن المشارکۃ في الہدي في الظاہر تؤثر تناسبا وتشاکلا بین المتشابہین تعود إلی موافقۃ ما في الأخلاق والأعمال ، وہذا أمر محسوس ۔ اھـ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ وقال ابن تیمیۃ : ہذا الحدیث أقل أحوالہ أن یقتضي تحریم التشبہ بأہل الکتاب وإن کان ظاہرہ یقتضي کفر المتشبہ بہم فکما في قولہ تعالی : {ومن یتولّہم منکم فإنہ منہم} وہو نظیر قول ابن عمرو : من بنی بأرض المشرکین وصنع نیروزہم ومہرجانہم وتشبہ بہم حتی یموت حشر یوم القیامۃ معہم ، فقد حمل ہذا علی التشبہ المطلق فإنہ یوجب الکفر ویقتضي تحریم أبعاض ذلک ، وقد یحمل منہم في القدر المشترک الذي شابہہم فیہ فإن کان کفرا أو معصیۃ أو شعارا لہا کان حکمہ کذلک ۔ (فیض القدیر: ۶/۱۰۴ ، رقم :۸۵۹۳ ، ط : دار المعرفۃ بیروت لبنان)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 395 Category: Permissible and Impermissible
غیر مسلموں کو ہیپی کرسمس کہنا

کیا ہمارے عیسائی دوستوں کو صرف یہ کہنا کہ آپ  ہپی کرسمس خوش و خرم ہو، کیا یہ جائز ہے؟ یہ بات ملحوظ رہے کہ میں صرف انہیں دعاء دینے  کے متعلق پوچھ رہا ہوں  کہ کرسمس منانے کے بارے میں ۔برائے مہربانی جلد از جلد بتائیے۔

الجواب وباللہ التوفیق

محض دعا کی نیت سے بھی ہیپی کرسمس کہنا ان سے مشابہت کی وجہ سے جائز نہیں ہے۔اس کے علاوہ  اُن کے شرکیہ عمل پر رضامندی کا اِظہار بھی اس میں پایاجاتا ہےاس لئے  اِس سے احتِراز لازم ہے۔

ولا ترکنوٓا إلی الذین ظلموا فتمسکم النار وما لکم من دون اللّٰہ من أولیآء ثم لا تنصرون(ہود : ۱۱۳)

’’مت جھکو ان کی طرف جو ظالم ہیں پھر تم کو لگے گی آگ اور کوئی نہیں تمہارا اللہ کے سوا مددگار پھر کہیں مدد نہ پاؤگے۔‘‘  (سورۃ ہود : ۱۱۳)

عن ابن عمر قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ من تشبہ بقوم فہو منہم ‘‘ ۔ (سنن ابی داود: ص/۵۵۹ ، کتا ب اللباس)

’’ من تشبہ بقوم ‘‘ ہذا عام في الخلق والخلق والشعار وإذا کان الشعار أظہر في التشبہ ۔ (شرح الطیبی : ۸/۲۳۲، رقم :۴۳۷۴)

 (من تشبہ بقوم) أي تزیا في ظاہرہ بزیہم وفي تعرفہ بفعلہم وفي تخلقہ بخلقہم وسار بسیرتہم وہدیہم في ملبسہم وبعض أفعالہم وقال بعضہم : قد یقع التشبہ في أمور قلبیۃ من الاعتقادات وإرادات وأمور خارجیۃ ، من أقوال وأفعال قد تکون عبادات وقد تکون عادات في نحو طعام ولباس ومسکن ونکاح واجتماع وافتراق وسفر وإقامۃ ورکوب وغیرہا ، وبین الظاہر والباطن ارتباط ومناسبۃ وقد بعث اللّٰہ المصطفی ﷺ بالحکمۃ التي ہي سنۃ وہي الشرعۃ والمنہاج الذي شرعہ لہ فکان مما شرعہ لہ من الأقوال والأفعال ما یباین سبیل المغضوب علیہم والضآلّین فأمر بمخالفتہم في الہدي الظاہر في ہذا الحدیث ، وإن لم یظہر فیہ مفسدۃ لأمور - منہا أن المشارکۃ في الہدي في الظاہر تؤثر تناسبا وتشاکلا بین المتشابہین تعود إلی موافقۃ ما في الأخلاق والأعمال ، وہذا أمر محسوس ۔ اھـ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ وقال ابن تیمیۃ : ہذا الحدیث أقل أحوالہ أن یقتضي تحریم التشبہ بأہل الکتاب وإن کان ظاہرہ یقتضي کفر المتشبہ بہم فکما في قولہ تعالی : {ومن یتولّہم منکم فإنہ منہم} وہو نظیر قول ابن عمرو : من بنی بأرض المشرکین وصنع نیروزہم ومہرجانہم وتشبہ بہم حتی یموت حشر یوم القیامۃ معہم ، فقد حمل ہذا علی التشبہ المطلق فإنہ یوجب الکفر ویقتضي تحریم أبعاض ذلک ، وقد یحمل منہم في القدر المشترک الذي شابہہم فیہ فإن کان کفرا أو معصیۃ أو شعارا لہا کان حکمہ کذلک ۔ (فیض القدیر: ۶/۱۰۴ ، رقم :۸۵۹۳ ، ط : دار المعرفۃ بیروت لبنان)

واللہ اعلم بالصواب