Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 400 Category: Permissible and Impermissible
Income from Insurance Job

Assalamualaikum,

I a full time employee in a software consulting company that contracted me into an Life Insurance company where I am doing my current job as programmer.  My job involves, gathering and summarizing data about insurance policy information, premiums, claims etc. from various IT systems, and do not involve any interest calculations or sending / receiving applications or signing insurance contracts etc as such.  

My question is, can I go to Haj/Umrah using this earned money from my current job?  If I perform Haj/Umrah would it become an accepted deed by Allah?

If I cannot use this money, can I borrow from someone do the Haj/Umrah and later pay back?

JazakAllah

الجواب وباللہ التوفیق

Though you are not in direct contact with the people in these matters but the information you are providing to the company is based on interest and insurance, therefore, this job is شرعاً (Shara’n) not permissible. If this responsibility is given to you temporarily as a sub part of your main job then this action of yours is impermissible, it would be better if you separate the income from the salary earned performing this duty and give in Sadaqah, and if your job actually is to perform these transactions then it is necessary to quit it as soon as possible, however, continuing this job you search for the other job, when you find the other job then quit this job.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 400 Category: Permissible and Impermissible
بیمہ سے متعلقہ آمدنی

 السلام علیکم

میں ایک سافٹ ویئر (کمپیوٹر پروگرام) بنانے والی کمپنی کے لیے کام کرتا ہوں جس نے مجھے پروگرامر کی حیثیت سے ایک زندگی کا بیمہ کرنے والی کمپنی کے پاس کام کے لیے بھیجا ہے، وہاں میرا کام ہے کہ میں زندگی کا بیمہ کرانے والوں کی بیمہ کی پالیسی کی معلومات، ان کے ذمے اس کی قیمت، اور بیمہ کی رقم وصول کرنے کے لیے ان کے دعوے وغیرہ کے بارے میں معلومات جمع کروں اور اسے مختصر انداز میں رپورٹ (پیش) کروں، ایسا کرتے ہوئے میں سود کا تخمینہ لگانے یا بیمہ کی درخواست بھیجنے ؍ وصول کرنے یا بیمہ کا معاہدہ دستخط کرنے میں ملوث نہیں ہوتا۔

میرا سوال یہ ہے کہ کیا میں اس ملازمت سے کمائی ہوئی رقم سے عمرہ؍ حج پر جاسکتا ہوں؟ اگر میں اس سے حج اور عمرہ کرتا ہوں تو کیا یہ اللہ کےہاں مقبول اعمال ہوں گے؟اگر میں یہ رقم استعمال نہیں کرسکتا تو  کیا میں کسی سے ادھار لے سکتا ہوں، حج؍ عمرہ کروں اور بعد میں انہیں ادا کردوں؟

جزاک اللہ خیرا

الجواب وباللہ التوفیق

اگرچہ بالراست آپ کا ان معاملات میں لوگوں سے رابطہ نہیں ہے لیکن، کمپنی کو جو معلومات آپ  فراہم کرہے ہیں وہ سود اور بیمہ والی ہے ،اس لئے یہ ملازمت شرعاًجائز نہیں ہے،سافٹ ویر کمپنی میں ضمنا ًیہ ذمہ داری آپ پر ڈالی گئی ہوتو یہ عمل آپ کا ناجائز ہے،اس کے بقدر تنخواہ میں سے آپ صدقہ کردیں تو بہتر ہے،اور اگر مستقل یہی ملازمت کا حصہ ہے تو جلد از جلد اس کو ترک کرنا ضرروی ہے،البتہ آپ اس کو جاری رکھتے ہوئے دوسری ملازمت تلاش کریں،جب دوسری مل جائے تو اس کو ترک کردیں

واللہ اعلم بالصواب