Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 402 Category: Permissible and Impermissible
Beatboxing

What is the ruling on beatboxing? 

What is the ruling on making nasheeds on the same tune and beat as popular songs?

الجواب وباللہ التوفیق

Copying musical instruments with the mouth and voice and to hum on that pattern are all impermissible. It comes in the Hadith that the music produces hypocrisy in the heart just like water grows crop. In one Hadith it is stated that Hazrat Ibne ‘Umar was passing by. On the way the sound of singing and music was heard so he thrusted two fingers in his two ears and traversed the path hurriedly until the sound stopped coming. After that he stated that Nabi ﷺ also did the same as I did. It is proven from this that when listening to songs is so dangerous then how severe it is in the Shari’at to copy it or hum it.

وَمِنَ النَّاسِ مَن یَّشْتَرِیْ لَھْوَالْحَدِیْثِ لِیُضِلَّ  عَنْ سَبِیْلِ اللہ بِغَیْرِ عِلْمٍ وَّیَتَّخِذَھَا ھُزُوًا اُولٰٓئِکَ لَھُمْ عَذَابٌ مُّھِیْنٌ  (سورۃ لقمان : ۶)

الغناء ينبت النفاق في القلب كما ينبت الماء الزرع (شعب الایمان للبیہقی: ۵۱۰۰)

عَنْ نَافِعٍ مَوْلَى ابْنِ عُمَرَ أَنَّ ابْنَ عُمَرَ سَمِعَ صَوْتَ زَمَّارَةِ رَاعٍ فَوَضَعَ أُصْبُعَيْهِ فِى أُذُنَيْهِ وَعَدَلَ رَاحِلَتَهُ عَنِ الطَّرِيقِ وَهُوَ يَقُولُ يَا نَافِعُ أَتَسْمَعُ فَأَقُولُ نَعَمْ. فَيَمْضِى حَتَّى قُلْتُ لاَ فَوَضَعَ يَدَيْهِ وَأَعَادَ رَاحِلَتَهُ إِلَى الطَّرِيقِ وَقَالَ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- وَسَمِعَ صَوْتَ زَمَّارَةِ رَاعٍ فَصَنَعَ مِثْلَ هَذَا(مسند احمد ۴۶۳۳)

وفی بدائع الصنائع (۵۱۳/۶):…دلت المسئلۃ علی ان مجرد الغناء معصیۃ وکذا الاستماع الیہ  وکذا ضرب القصب والاستماع الیہ  الا تری ان اباحنیفۃ رضی اللہ عنہ سماہ ابتلاء۔وفی الدرالمختار (۳۴۸/۶)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 402 Category: Permissible and Impermissible
موسیقی گنگنانا اور اس کی نقل اتارنا

منہ اور آواز کے ذریعے موسیقی کے آلات کی موسیقی کی نقل اتارنے کے بارے میں اسلام کا کیا حکم ہے؟

۲)پسندیدہ مشہور گانوں کی طرز پر نشیدبنانے کے بارے میں کیا حکم ہے؟

 

الجواب وباللہ التوفیق

منھ اور آواز کے ذریعہ موسیقی کے آلات کی نقل اتارنا اور اس طرز پر  گنگنانا سب ناجائز ہے۔حدیث میں ہےکہ غنا دل میں نفاق کو اس طرح پیداکرتا ہے جس طرح پانی کھیتی کو۔ایک حدیث میں ہے کہ حضرت ابن عمرؓ  جارہے تھے، راستے میں گانے بجانے کی آواز آئی تو دونوں کانوں میں دو انگلیاں  رکھ لیں،اور راستے سے جلدی جلدی گزرنے لگے حتی کہ  جب آواز آنا بند ہوگئی ،اس کے بعد کہنے لگے کہ نبی مکرم ﷺ نے بھی اس طرح کیا جیساکہ میں نے کیا،اس سے ثابت ہوتا ہے کہ گاناسننا اتنا خطرناک ہے تو تو اس کی نقل یا اس کو گنگناناشریعت میں کتنا سخت ہے!

وَمِنَ النَّاسِ مَن یَّشْتَرِیْ لَھْوَالْحَدِیْثِ لِیُضِلَّ  عَنْ سَبِیْلِ اللہ بِغَیْرِ عِلْمٍ وَّیَتَّخِذَھَا ھُزُوًا اُولٰٓئِکَ لَھُمْ عَذَابٌ مُّھِیْنٌ  (سورۃ لقمان : ۶)

الغناء ينبت النفاق في القلب كما ينبت الماء الزرع (شعب الایمان للبیہقی: ۵۱۰۰)

عَنْ نَافِعٍ مَوْلَى ابْنِ عُمَرَ أَنَّ ابْنَ عُمَرَ سَمِعَ صَوْتَ زَمَّارَةِ رَاعٍ فَوَضَعَ أُصْبُعَيْهِ فِى أُذُنَيْهِ وَعَدَلَ رَاحِلَتَهُ عَنِ الطَّرِيقِ وَهُوَ يَقُولُ يَا نَافِعُ أَتَسْمَعُ فَأَقُولُ نَعَمْ. فَيَمْضِى حَتَّى قُلْتُ لاَ فَوَضَعَ يَدَيْهِ وَأَعَادَ رَاحِلَتَهُ إِلَى الطَّرِيقِ وَقَالَ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- وَسَمِعَ صَوْتَ زَمَّارَةِ رَاعٍ فَصَنَعَ مِثْلَ هَذَا(مسند احمد ۴۶۳۳)

وفی بدائع الصنائع (۵۱۳/۶):…دلت المسئلۃ علی ان مجرد الغناء معصیۃ وکذا الاستماع الیہ  وکذا ضرب القصب والاستماع الیہ  الا تری ان اباحنیفۃ رضی اللہ عنہ سماہ ابتلاء۔وفی الدرالمختار (۳۴۸/۶)

واللہ اعلم بالصواب