Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 429 Category: Miscellaneous
Wife not covering head does husband get gunah

Assalamualaikum,

My question is if my wife doesn't cover her hair, and her hair are showing to non mehram, do I get the sin as a husband. And I also heard that if unmarried sister doesn't cover her hair as a brother I get a sin for that. Sometimes they cover their hair but the scarf move and hair showes so do I get the sin for that. I remind my wife to cover her hair so I don't get gunnah. 

 

الجواب وباللہ التوفیق

As the husband is also responsible for his wife in respect to the Deen (صحیح البخاري، ۵۲۰۰ ، باب المرأۃ راعیۃ في بیت زوجھا)

Therefore, it is incumbent on the husband that if the woman practices actions against the Shari’at then he should make efforts for her correction, caution/reprimand her, and make suitable effort to change her temperament. Its first level is to counsel her and use mutual understanding, establish تعلیمی حلقہ (Ta’leem) at home, if she doesn’t agree then separate the bedding from her and quit sleeping with her for a few days and express his anger. If she still doesn’t agree then he may give her a light beating which doesn’t leave any mark. If the woman still continues on her own way then the woman will be sinner but the husband will not get its wrath. If the husband is deficient in his responsibility and doesn’t make appropriate effort for the rectification then in front of Allaah T’aalaa he will also bear its wrath.

The same ruling is for the sister too if amongst her elders no one else is responsible.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 429 Category: Miscellaneous
بالوں کے پردہ نہ کرنے کا وبال کس پر ہوگا ؟

السلام علیکم

اگر میری بیوی بال نہیں ڈھکتی اور بال نا محرموں کو نظر آتے ہوں تو کیا خاوند کی حیثیت سے مجھے اس کا گناہ ملے گا؟ اور میں نے یہ بھی سنا ہے  کہ اگر غیر شادی شدہ  بہن بال نہیں ڈھکتی تو ایک بھائی کی حیثیت سے مجھے اس کا گناہ ملے گا۔ کبھی وہ بال ڈھکتی ہیں لیکن  دوپٹہ کھسکنے سے بال نظر آتے ہیں تو کیا مجھے اس کا گناہ ملے گا؟ میں اپنی بیوی کو بال چھپانے کی یاد دہانی کرتا ہوں تاکہ مجھے گناہ نہ ہو

الجواب وباللہ التوفیق

چونکہ شوہر دینی اعتبار سے بھی اپنی بیوی کا ذمہ دار ہے۔(صحیح البخاري، ۵۲۰۰ ، باب المرأۃ راعیۃ في بیت زوجھا)

اس لئے شوہر پر ضروری ہے کہ  اگر عورت خلاف شرع کاموں کا ارتکاب کرے تو اس کی اصلاح کی کوشش کرے، تنبیہ کرے،اوراس کے مزاج کو بدلنے کی مناسب کوشش کرے ،اس کا پہلا درجہ یہ ہےکہ اس کو سمجھائے ۔اور افہام و تفہیم سے کام لے،گھر میں تعلیمی حلقہ لگائے ،اگر نہ سمجھے تو  بستر سے علاحدہ ہوجائے ،اور چند دن ساتھ سونا چھوڑ دے، اور اپنی ناراضگی کا اظہار کرے،اگر پھر بھی نہ سمجھے تو ہلکی ضرب بھی لگاسکتا ہے،جس سے نشان نہ پڑے۔اگر  اس کے باوجود عورت اپنی روش پر چلتی ہے  تو اس صورت میں عورت تو گنہگار ہوگی ،لیکن شوہر پر اس کا وبال نہیں ہوگا۔اگر شوہر اپنی اس ذمہ داری میں کوتاہی کرتا ہے اور اصلاح کی مناسب کوشش نہیں کرتا ہے تو عند اللہ اس کا وبال اس پر بھی ہوگا۔

یہی مسئلہ بہن کے لئے بھی ہے ، اگر اس کے بڑوں میں آپ کے علاوہ کوئی  اور ذمہ دار نہ ہو۔

یجوز لہ (ای الزوج) ان یضربہا فی اربعۃ امورومافی معناہا الیٰ قولہ ومنہ مااذا کشفت وجہہا لغیر محرم ومنہ ما اذا اسمعت صوتہا للاجنبی(البحر الرائق :  فصل فی التعذیر ،۵ /۵۳)

واللہ اعلم بالصواب