Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 43 Category: Worship
Kaffarah for Missed Salah in Will

Assalamualaikum Warahmatullah

I have missed many prayers in my life. So I am praying Qadha salah with every prayer to makeup fro the missed prayers. If I were to die without making up all the prayers I missed in my life, is there a kaffarah amount I can include in my wasiyat (will) for the remaining number of prayers?

Wassalam

الجواب وباللہ التوفیق

Assalamualaikum Warahmatullah

You should estimate the total number of salats that you have missed and document it in a copy or diary and try to fulfill these right as soon as possible. In addition, keep on updating the count based on as many salats you have made up i.e. you pray qadha for. Subsequently, you should write in your will that fidiya or kaffarah for any of the remaining salats should be paid from your estate (if you pass away). To be on the safe side, the kaffarah or fidia for each salah is equal to 1.75 KG of wheat or its equivalent value (in currency). It should be noted that fardh as well as witr are considered as part of the missed salah so the total number of salats every day is considered as 6.

 Also remember that the fidia or kaffarah can be paid from only one third of one's estate and nothing more. Keeping the above details in mind, you should make every effort and be focused on fulfilling these faraidh as soon as you can.

إذَا مَاتَ الرَّجُلُ وَعَلَيْهِ صَلَوَاتٌ فَائِتَةٌ فَأَوْصَى بِأَنْ تُعْطَى كَفَّارَةُ صَلَوَاتِهِ يُعْطَى لِكُلِّ صَلَاةٍ نِصْفَ صَاعٍ من بُرٍّ وَلِلْوِتْرِ نِصْفَ صَاعٍ وَلِصَوْمِ يَوْمٍ نِصْفَ صَاعٍ من ثُلُثِ مَالِهِ(فتاویٰ ہندیہ:۱/۱۲۵)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 43 Category: Worship
وصیت میں چھوٹی ہوئی نمازوں کا ذکر

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

میں نے اپنی زندگی میں بہت سی نمازیں قضا کیں ہیں۔ میں ہر نماز کے ساتھ ایک قضا نماز بھی ادا کرتا ہوں تاکہ ان چھوٹی ہوئی نمازوں کو پورا کر سکوں۔ اگر میں اپنی تمام چھوٹی ہوئی نمازوں کو ادا کئے بغیر مر گیا تو کیا کوئی ایسا کفارہ ہے جو میں اپنی وصیت میں لکھ جاؤں تاکہ بچی ہوئی نمازوں کے عوض وہ کفارہ میری جائیداد میں سے ادا کر دیا جائے؟

والسلام

الجواب وباللہ التوفیق

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

:اپنی قضا نمازوں کا ایک اندازہ کرکے اس کو کسی ڈائری یا کاپی میں لکھ لیں،اور جلد از جلد ان سے سبکدوش ہونے کی کوشش کریں،ساتھ ہی ساتھ جتنی قضا نمازیں پڑھی جاچکی ہیں ان کا حساب گھٹایا جاتا رہے،اور یہ وصیت تحریر کردی جائے کہ باقی نمازوں کا فدیہ یا کفارہ ترکہ میں سے ادادیاجائے، ہر نماز کا کفارہ یا فدیہ احتیاطا پونے دو کلو گیہوں یا اس کی قیمت ہے۔اور نمازوں میں فرائض کے ساتھ وتر بھی شامل ہے،یعنی ہر دن کی کل نمازیں چھ ہوں گی۔

یہ بھی خیال رہے کہ کفارہ یا فدیہ کی وصیت کا نفاذ صرف تہائی مال تک ہوسکتا ہے اس سے زائد کا نہیں،اگر اس سے زائدنہیں۔مندرجہ بالا تفصیل ذہن میں رکھتے ہوئے آپ اس ذمہ داری سے فارغ ہونے کی طرف متوجہ رہیں۔

إذَا مَاتَ الرَّجُلُ وَعَلَيْهِ صَلَوَاتٌ فَائِتَةٌ فَأَوْصَى بِأَنْ تُعْطَى كَفَّارَةُ صَلَوَاتِهِ يُعْطَى لِكُلِّ صَلَاةٍ نِصْفَ صَاعٍ من بُرٍّ وَلِلْوِتْرِ نِصْفَ صَاعٍ وَلِصَوْمِ يَوْمٍ نِصْفَ صَاعٍ من ثُلُثِ مَالِهِ(فتاویٰ ہندیہ:۱/۱۲۵)

فقط واللہ اعلم بالصواب