Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 434 Category: Worship
Preferred Salaat time Women

Assalamualaikum,

People say "awwal waqt par namaz parhna.. ye Allah ko zyada pasand he." Is that true? Also is there any ثواب كا فرق if we pray a while later than awwal waqt? Is there any ayat or ahadeeth about awwal waqt par namaz? 

Jazakallah

 

الجواب وباللہ التوفیق

Praying Salaat when the prescribed time enters is Afzal (more rewarding) for women. It is related by Hazrat Umm e Farwa R.A. in Sunan Abi Daood that Nabi S.A.W. has told praying Salaat when the time enters to be one of the most Afzal ‘Amal among the Afzal A’amaal.

As far as the reward is concerned, the reward of Salaat itself is the same whether one prays when the prescribed time enters or little later, however, the reward of Afzaliyat will not be achieved by delaying.

It is to be noted that, for the men, praying Salaat early or late is told in the Ahadith keeping in view the Salaat with Jamaat and other prudent measures.

عَنْ أُمِّ فَرْوَةَ قَالَتْ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَىُّ الأَعْمَالِ أَفْضَلُ قَالَ « الصَّلاَةُ فِى أَوَّلِ وَقْتِهَا(سنن ابی داؤد: ۴۲۶ ، کتاب الصلاۃ ، باب فِى الْمُحَافَظَةِ عَلَى وَقْتِ الصَّلَوَاتِ)

ولهذا كان أولى للنساء أن يصلين في أول الوقت لأنهن لا يخرجن إلى الجماعة كذا في مبسوطي شمس الأئمة وفخر الإسلام ا هـ (رد المحتار:۱/۳۶۷)   

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 434 Category: Worship
عورتوں کے لئے نمازوں کا افضل وقت

 لوگ کہتے ہیں کہ اول وقت پر نماز پڑھنا یہ اللہ کو زیادہ پسند ہے، کیا یہ صحیح ہے؟ مزید براں اول وقت کے بعد تھوڑی دیر سے پڑھنے سے کیا ثواب میں  کچھ فرق ہوتا ہے؟ کیا اول وقت پر نماز پڑھنے کے بارے میں کوئی آیت یا احادیث ہیں؟

جزاک اللہ

الجواب وباللہ التوفیق

عورت کا اول وقت میں نماز پڑھنا افضل ہے،سنن ابی داؤد  میں حضرت امِ فروہؓ سے مروی ہےکہ آپ نے افضل اعمال میں ایک سب سے افضل  عمل نماز کو اول وقت پر پڑھنا بتلایا ہے۔

رہا ثواب کا مسئلہ تو نفس نماز کا ثواب اول وقت میں پڑھیں یا کچھ مؤخر کرکے برابر ہے،البتہ اول وقت میں ادا کرنے سےافضلیت  کا ثواب تاخیر  کرنے سے نہیں ملے گا۔

واضح رہےکہ مرد حضرات کے لئے جماعت اور دیگر مصالح کے پیش نظر احادیث میں اوقاتِ نماز سے متعلق تقدیم و تاخیر بتلائی گئی ہے۔

عَنْ أُمِّ فَرْوَةَ قَالَتْ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَىُّ الأَعْمَالِ أَفْضَلُ قَالَ « الصَّلاَةُ فِى أَوَّلِ وَقْتِهَا(سنن ابی داؤد: ۴۲۶ ، کتاب الصلاۃ ، باب فِى الْمُحَافَظَةِ عَلَى وَقْتِ الصَّلَوَاتِ)

ولهذا كان أولى للنساء أن يصلين في أول الوقت لأنهن لا يخرجن إلى الجماعة كذا في مبسوطي شمس الأئمة وفخر الإسلام ا هـ (رد المحتار:۱/۳۶۷)

واللہ اعلم ابالصواب