Thursday | 21 November 2019 | 24 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 437 Category:
If married to a Shia

I went against my better judgement and married a Shia man. We have been married for years and have 4 kids. I now realize my mistake but I'm already in this situation. He is a nice man and he is good to me. Will I be punished for marrying him for the rest of my life? Will Allah forgive my mistake or is it too late because I already am married to him and cannot leave?

He is a good father and a good husband. I do not want to leave him. Is there anything I can Do? My kids are Sunni. I am raising them 100% Sunni and he is ok with that.

 الجواب وباللہ التوفیق

If a Shia is mild-tempered and doesn’t have corruption in his beliefs then the Nikah done with him is valid, however, it is better to avoid. But if a Shia has the Kufriyah beliefs, e.g., he is convinced of the Ifk of Hazrat ‘Aaishah R.A., or is convinced of the Uloohiyat of Hazrat ‘Ali R.A., or is a believer of Hazrat Jibrael A.S. to make mistake in bringing the revelation, or has the belief of the changes in the Qur’aan then the Jurists have declared these beliefs to be the reasons for his Kufr and Irtidad (going out of the fold of Islam) and have written that a Sunni woman’s Nikah with such a man doesn’t take effect, it’s isn’t valid and it’s not correct for her to live with him and it’s necessary for her to have immediate separation from him. In such circumstance, the only way they could live together is to have him do repentance from such Kufriyah beliefs, do Nikah again, and then live together.

وبہذا ظہر أن الرافضي إن کان ممن یعتقد الألوہیۃ في علي، أوأن جبرئیل غلط في الوحي، أو کان ینکر صحبۃ الصدیق، أویقذف السیدۃ الصدیقۃ، فہو کافر لمخالفتہ القواطع المعلومۃ من الدین بالضرورۃ بخلاف ما إذاکان یفضل علیاً ویسب الصحابۃ، فإنہ مبتدع لاکافر۔ (شامي، کتاب النکاح، فصل في المحرمات، کراچي ۳/۴۶، زکریا ۴/۱۳۵) 

ولایجوز للمرتد أن یتزوج مرتدۃ ولامسلمۃ، ولاکافرۃ أصلیۃ، وکذا لایجوز نکاح المرتد مع أحد۔ (ہندیۃ، زکریا قدیم۱/۲۸۲)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 437 Category:
شیعہ سے اگر نکاح ہوجائے تو ۔۔۔

میں نے اپنی حسن تدبیر کے خلاف قدم اٹھا کر ایک شیعہ مرد سے شادی کرلی ہم سالوں سے شادی شدہ ہیں اور ہمارے چار بچے ہیں مجھے اب  اپنی غلطی کا احساس ہوتا ہے  لیکن اب میں پہلے سے اس صورتحال میں ہوں ،وہ ایک اچھا آدمی ہے اور مجھ سے اچھا ہے، کیا مجھے اس سے شادی کرنے پر باقی زندگی میں سزا ملے گی؟ کیا اللہ میری غلطی کو معاف کریں گے یا اب بہت دیر ہوگئی  ہے کیونکہ میں پہلے سے ہی شادی شدہ ہوں اس سے اور چھوڑ نہیں  سکتی؟ وہ ایک اچھا باپ اور ایک اچھا خاوند ہے، میں اسے چھوڑنا نہیں چاہتی، مجھے بتائیے اب میں کیا کرسکتی ہوں ؟ میرے بچے سنی ہیں، میں انہیں سو فیصد سنی پروان چڑھا رہی ہوں اور وہ اس سے مطمئن ہے۔

الجواب وباللہ التوفیق

جو شیعہ معتدل مزاج ہو اور عقائد میں گڑ بڑ نہ ہوتو اس  سے نکاح منعقد ہوجاتا ہے،تا ہم احتیاط بہتر ہے،لیکن جس کے عقائد کفریہ ہوں مثلا حضرت عائشہ ؓ کے افک کا قائل ہو، یا حضرت علی ؓ کی الوہیت کا قائل ہو، یا حضرت جبرائیل ‘ کی طرف وحی میں غلطی ہونے کا معتقد  ہے،یا قرآن میں تحریف کا عقیدہ رکھتا ہو  تو فقہاء نے ان چیزوں کو موجبِ کفر اور باعث ارتداد قرار دیا ہے،اور لکھا ہےکہ  ایسے شخص کے ساتھ سنی عورت کا نکاح ہی منعقد نہیں ہوتا، اس کے ساتھ رہنا بھی درست نہیں ہے؛ اور فورًااس سے علیحدگی بھی ضروری ہے۔ایسی صورت میں ساتھ رہنے کی یہی ایک شکل ہےکہ کفریہ عقائد سے توبہ کروائی جائے ،اور دوبارہ نکاح کرکے  ساتھ رہا جائے۔

وبہذا ظہر أن الرافضي إن کان ممن یعتقد الألوہیۃ في علي، أوأن جبرئیل غلط في الوحي، أو کان ینکر صحبۃ الصدیق، أویقذف السیدۃ الصدیقۃ، فہو کافر لمخالفتہ القواطع المعلومۃ من الدین بالضرورۃ بخلاف ما إذاکان یفضل علیاً ویسب الصحابۃ، فإنہ مبتدع لاکافر۔ (شامي، کتاب النکاح، فصل في المحرمات، کراچي ۳/۴۶، زکریا ۴/۱۳۵) 

ولایجوز للمرتد أن یتزوج مرتدۃ ولامسلمۃ، ولاکافرۃ أصلیۃ، وکذا لایجوز نکاح المرتد مع أحد۔ (ہندیۃ، زکریا قدیم۱/۲۸۲)

واللہ اعلم بالصواب