Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 448 Category: Permissible and Impermissible
Dying hair

Assalamualaikum,

If woman has too many white hair is it permissible for a woman to dye (color) her hair?

Jazakallah

الجواب وباللہ التوفیق

Severe warnings have been mentioned in Hadith for using black hair dye. It is mentioned in one Hadith that such people will be deprived of even the fragrance of Jannat on the day of Judgement.

یکون قوم یخضبون في آخر الزمان بالسَّوداء کحواصل الحمام لا یریحون رائحة الجنة (أبوداوٴود، رقم: ۴۲۱۲، باب في الخضاب)

In the views of many Ulama, this ruling applies to both men and women. Hence, in the situation inquired about it is not permissible for you to dye your hair black whether it’s done using black myrtle (mehndi powder) or any other dyeing product. You may use dyes of any other color.

اختضب لأجل التزین للنّساء الجواري جاز في الأصحّ ویکرہ بالسواد․․․ ومذہبنا أن الصبغ بالحناء والوسمة حسن کما في الخانیة، قال النووي:ومذہبنا استحباب خضاب الشیب للرّجل والمرأة بصفرة أو حُمرة وتحریم خضابہ بالسواد علی الأصحّ لقولہ علیہ السلام: غیّروا ہذا الشیب واجتنبوا السّواد اھ قال الحموي وہذا في حق غیر الغزاة ولا یحرم في حقّہم للإرہاب ولعلّہ محمل من فعل ذلک من الصحابة ط․ (درمختار مع رد المحتار: ۱۰/ ۴۸۸، ط: زکریا)

 

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 448 Category: Permissible and Impermissible
عورت کا سیاہ خضاب لگانا

 کیا عورت کو اس بات کی اجازت ہے کہ وہ اپنے بالوں کو رنگے، اگر اس کے بہت زیادہ بال سفید ہیں ؟ کیا وہ بال رنگ سکتی ہے؟

جزاک اللہ

الجواب وباللہ التوفیق:

احادیث میں سیاہ خضاب استعمال کرنے پر سخت وعید آئی ہے، ایک حدیث میں ہے کہ جو لوگ سیاہ خضاب استعمال کرتے ہیں وہ بہ روزِ قیامت جنت کی خوشبو تک سے محروم رہیں گے۔

 یکون قوم یخضبون في آخر الزمان بالسَّوداء کحواصل الحمام لا یریحون رائحة الجنة (أبوداوٴود، رقم: ۴۲۱۲، باب في الخضاب)

اور اکثر علماء کے نزدیک یہ حکم مرد اور عورت دونوں کے لیے ہے؛ لہٰذا صورتِ مسئولہ میں آپ کے لئے بالوں کو کالا رنگ کرنا جائز نہیں ہے، خواہ کالی منہدی سے رنگا جائے، یا کسی اور  رنگ سے؛ ہاں خالص سیاہ کے علاوہ دیگر رنگ کا خضاب آپ استعمال کرسکتی ہیں۔

اختضب لأجل التزین للنّساء الجواري جاز في الأصحّ ویکرہ بالسواد․․․ ومذہبنا أن الصبغ بالحناء والوسمة حسن کما في الخانیة، قال النووي:ومذہبنا استحباب خضاب الشیب للرّجل والمرأة بصفرة أو حُمرة وتحریم خضابہ بالسواد علی الأصحّ لقولہ علیہ السلام: غیّروا ہذا الشیب واجتنبوا السّواد اھ قال الحموي وہذا في حق غیر الغزاة ولا یحرم في حقّہم للإرہاب ولعلّہ محمل من فعل ذلک من الصحابة ط․ (درمختار مع رد المحتا ر: ۱۰/ ۴۸۸، ط: زکریا)

واللہ اعلم بالصواب