Tuesday | 22 October 2019 | 23 Safar 1441

Fatwa Answer

Question ID: 450 Category: Worship
Urine Drops During Salat or While in Ihraam

Assalamualaikum,

I have a problem of having urine drops after passing it. Sometimes drops come during Salat. What is the ruling on this. I am planning to go for Hajj this year. What should I do if drops come while I am in Ehram and pollute the Ehram.

Jazakallah

 الجواب وباللہ التوفیق

We recommend treatment for this ailment from an expert doctor or Hakeem.

If the urine drops come out during salah, the salah will be invalid. Whenever this happens, wash the body parts and clothes effected, make wudu and pray salah again.

If the urine drops fall on the ihram clothes, that part has to be washed and purified. However, if someone is excused by a valid excuse (ma’zoor), he may pray salah in the same clothes or ihram. The person may also put cotton (or its like) around the urine path or a bag to collect the urine to safeguard the ihram clothes from the urine drops.

The ruling of the ma’zoor (excused) is applicable when there is a calid exuse like the urine drops continuously flow in such a way that the person is not able to pray salah within the prescribed time and the complete duration of salah time passes yet the urine drops do not stop flowing. Such a person is considered ma’zoor.  The concession provided for the ma’zoor is that after performing wudu once, he may pray salah (and other such ibadat which require wudu) until another salah time comes, even though the urine continuously flows. 

Furthermore, it would be helpful if the person wears an underwear and keeps cotton or an absorbent pad in it.

Note: The Shar’i ruling is that if the urine drops come out during Tawaf the wudu will break and wudu must be made again. The person should stop tawaf, make wudu, and then complete the remainder of the tawaf. However, if the person is ma’zoor as explained above, he may complete tawaf without re-making wudu.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 450 Category: Worship
نماز یا حالت احرام میں پیشاب کے قطروں کا آنا

جھے پیشاب کرنے کےبعد قطرے آنے کا مسئلہ ہے ،کبھی پیشاب کرنے کے کچھ دیر کے بعد جب میں نماز پڑہتا ہوں تو تب قطرے آتے ہیں، اس کے بارے میں  کیا حکم ہے؟ میرا اس سال حج کرنے کا ارادہ ہے، اگر احرام میں اس طرح قطرے آئیں تو مجھے کیا کرنا چاہئے ؟ اگر احرام پر کچھ قطرے لگ جائیں تو مجھے کیا کرنا چاہئے؟

الجوا ب وباللہ التو فیق:

اس سلسلہ میں ماہر ڈاکٹر یا حکیم سے  علاج کروائیں ۔نماز پڑھتے وقت اگرقطرے آئیں تو اس سے نماز فاسد ہوجاتی ہے،بدن اور کپڑے صاف کرکے  باوضو  ہوکر دوبارہ نماز ادا کریں ،اگر احرام کے کپڑوں میں پیشاب کے قطرے لگ جائیں تو اسےبھی پاک کرنا پڑےگا،اگر کوئی معذور ہو تو وہ انہیں کپڑوں اور اسی احرام میں نماز وغیرہ ادا کرسکتا ہے۔ اور احرام میں پیشاب کے قطرات سے  بچنے  کے لئے پیشاب کی نالی میں روئی یا  پیشاب کی  تھیلی کا بھی  استعمال کرسکتے ہیں۔

 معذور ہونے کا حکم اس وقت لگتا ہے جبکہ کسی شخص کو کوئی عذر یا پیشاب کے قطرات اس طرح جاری ہوں  کہ  اسے پاک ہوکر فرض نماز پڑھنے کا بھی موقع نہ ملے اور مکمل نماز کا وقت   اسی طرح گذر جائے توایساشخص معذور ہے، معذور کے لئے شرعی سہولت یہ ہے کہ وہ صرف  ہرنماز کے وقت  وضو کر لے اور آئندہ نماز کے وقت کے آنے تک نماز اور باقی عبادتیں اسی عذر کے ساتھ انجام دیتا رہے۔

نیز حالت احرام میں لنگوٹ اور اس کے اندر روئی یا ٹشو کا استعمال بھی معاون ثابت ہوسکتا ہے۔

واضح رہےکہ اگر طواف کی حالت میں قطرے نکل آئیں تو  وضو ٹوٹنے کی وجہ سے  دوبارہ  وضو واجب ہوگا،طواف روک کر  وضو کریں اس کے بعد بقیہ طواف مکمل کرلیں۔ہاں اگر آپ شرعا معذور ہوں  جس کی وضاحت اوپر آچکی ہے تو اس حالت میں طواف مکمل کرسکتے ہیں

واللہ اعلم بالصواب