Monday | 18 November 2019 | 21 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 479 Category: Worship
Miscarriage

Assalamualaikum,

My wife went to her parents' house and she was 3 months pregnant. There she had a miscarriage and her bleeding stopped immidiately. Is it mandatory for her to stay at her parents' house for 40 days if she wants to go to her husband because she needs him more than anyone else at a time like this? 

الجواب وباللہ التوفیق

In the situation inquired about if the baby in the womb of the mother had developed some limbs or any one limb such as hair, nails, hands, feet, fingers, etc. then the bleeding after the miscarriage would be نفاس (Nifaas). As soon as the bleeding stops the woman will be pure.

If none of the limbs had developed then the bleedings afterwards is not نفاس (Nifaas), it is either حیض (Haidh) or استحاضہ (Istihadha). If the bleeding continues for three days or more then it is حیض (Haidh) and if it is less than three days then it is استحاضہ (Istihadha).

It is impermissible for a woman to pray Salaat or fast during حیض (Haidh) and نفاس (Nifaas) while the woman will be pure during استحاضہ (Istihadha) and after having purification it will be compulsory on her to perform these acts of worship.

In regards to the issue of staying at her mother’s house, this is not a شرعی (Shara’i) issue. The woman stays at her mother’s house for resting. If she wants to return to her husband and she needs her husband then she certainly should come.  

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 479 Category: Worship
اسقاط حمل

السلام علیکم 

 میری بیوی اپنے والدین کے گھر گئی وہ تین مہینے کی حاملہ تھی، وہاں اس کا اسقاط حمل ہوگیا،لیکن اس کا خون بہنا زیادہ دیر نہیں رہا، اور فوراً تھم گیا۔

۱)کیا اب اس کے لیے لازم ہے کہ وہ اپنے والدین کے گھر چالیس دن ٹھہرے؟

۲)اگر وہ اپنے خاوند کے پاس جانا چاہے کیونکہ اس طرح کی صورت حال میں  سب سے زیادہ اسے اپنے خاوند کی ضرورت ہے

 

 الجواب وباللہ التوفیق

صورت مسؤلہ میں اگر  حمل کے کچھ اعضاء یا کوئی ایک عضو ( جیسے بال ، ناخن ، ہاتھ ، پاؤں ، انگلی و غیرہ ) ظاہر ہوچکے ہوں تو اس کے بعد آنے والا خون نفاس کاہوگا۔خون منقطع ہوتے ہی عورت پاک ہوجائے گی۔

اور اگرکوئی ایک عضو بھی ظاہر نہ ہو ، اس کے بعد آنے والا خون نفاس نہیں بلکہ حیض یا استحاضہ ہے ۔ اگر تین دن یا اس سے زائد آئے توحیض ہوگا،اور تین دن سے کم ہو تو استحاضہ ہوگا۔

حیض اور نفاس کا خون نماز روزہ وغیرہ سے مانع ہوگا اور استحاضہ میں عورت پاک ہوگی،اور پاکی حاصل کرنے کے بعدعبادتیں اس کے ذمہ میں ادا کرنا لازم ہوگا۔

رہا چالیس دن ماں کے پاس ٹہرنے کا مسئلہ تو یہ شرعی مسئلہ نہیں ہے،بغرض آرام  ماں کے پاس لڑکی کا قیام ہوتا ہے،اگر لڑکی شوہر کے پاس آنا چاہے اور اسے شوہر کی ضرورت ہوتو ضرور آنا چاہئے

واللہ اعلم بالصواب