Monday | 18 November 2019 | 21 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 495 Category: Worship
Zakat on land

Assalamualaikum

I have purchased a land some years ago with the intention of selling it once I will get good profit on selling it. This land is barren land and so we are not able to perform any cultivation and farming activity on it and since 8 yrs we are not getting anything out of it.

Do I need to pay Zakat for this land? Looking forward for immediate response. 

Jazakallah

 

الجواب وباللہ التوفیق

As your intention at the time of buying the property was to sell it when it’s profitable to sell, therefore, this piece of land will be counted as a business wealth and it will be mandatory to annually calculate its market value and pay Zakat on it.

عن سمرۃ بن جندب رضي اللّٰہ عنہ قال: أما بعد، فإن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کان یأمرنا أن نخرج الصدقۃ من الذي نعد للبیع۔ (سنن أبي داؤد رقم: ۱۵۶۲)

 وشرطہ، أي شرط افتراض أدائہا حولان الحول وہو فی ملکہ إلی قولہ: أونیۃ التجارۃ في العروض، إما صریحا ولابد من مقارنتہا لعقد التجارۃ۔(الدر المختار ۳؍۱۸۶ زکریا)

ثم نیۃ التجارۃ لا تعمل ما لم ینضم إلیہ الفعل بالبیع أو الشراء أو السوم فیما یسام ۔ (الفتاویٰ التاتارخانیۃ ۳؍۱۶۶ زکریا)

وتشترط نیۃ التجارۃ في العروض، ولابد أن تکون مقارنۃ للتجارۃ۔ (الاشباہ والنظائر ۳۸)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 495 Category: Worship
زمین پر زکوٰۃ

السلام علیکم

کچھ سال پہلے میں نے اس نیت سے زمین خریدی تھی کہ جب اچھا منافع ہوگا توا سے بیچ دوں گا، یہ زمین بنجر ہے اس لیے ہم اس پر کوئی کاشت نہیں کرسکتے ہیں ، آٹھ سال سے ہمیں اس زمین سے کچھ حاصل نہیں ہورہا ہے ۔ کیا مجھے اس زمین پر زکوٰۃ ادا کرنی ہوگی؟

جزاک اللہ خیرا

الجواب وباللہ التوفیق

چونکہ مذکورہ جائیداد کی خریداری کے وقت آپ کی نیت نفع ہونے پر بیچنے کی تھی اس لئے اس زمین کا شمار تجارتی مال میں ہوگا اور ہرسال اس کی بازاری قیمت لگاکر زکوٰۃ نکالنی ضروری ہوگی۔

عن سمرۃ بن جندب رضي اللّٰہ عنہ قال: أما بعد، فإن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کان یأمرنا أن نخرج الصدقۃ من الذي نعد للبیع۔ (سنن أبي داؤد رقم: ۱۵۶۲)

 وشرطہ، أي شرط افتراض أدائہا حولان الحول وہو فی ملکہ إلی قولہ: أونیۃ التجارۃ في العروض، إما صریحا ولابد من مقارنتہا لعقد التجارۃ۔(الدر المختار ۳؍۱۸۶ زکریا)

ثم نیۃ التجارۃ لا تعمل ما لم ینضم إلیہ الفعل بالبیع أو الشراء أو السوم فیما یسام ۔ (الفتاویٰ التاتارخانیۃ ۳؍۱۶۶ زکریا)

وتشترط نیۃ التجارۃ في العروض، ولابد أن تکون مقارنۃ للتجارۃ۔ (الاشباہ والنظائر ۳۸)

واللہ اعلم بالصواب