Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 51 Category: Worship
Crossing Meeqat Without Ihram

Assalamualaikum Warahmatullah

I want to ask ruling about passing of meeqat without ihram with no intention of Umrah. I am resident of Madinah Tayyiba and according to Sheik Makki al-Hijazi it is always compulsory to wear ihram while returning from Makkah to Madinah. 

Is it true that this ruling is only applicable for the people who have an intention to perform Umrah, as some of my friends tell me? Because I travel for work and meeting my relatives a lot of time from Madinah to Makkah and want to understand this ruling correctly to not violate any rules about Khana-e-Ka‘ba.

Also, some resident of Madinah, drive their relatives to Makkah who have intention to perform Umrah however the driver does not have an intention, does the driver has to wear ihram although he does not have intention to perform Umrah?

Please send us your response so it can benefit me and a lot of other people who have this same question.

Wassalam

Walaikumassalam warahmatullah

الجواب وباللہ التوفیق

The statement from Sheikh Makki Hijazi sahib is correct. According to the Hanafi madhab, a person who resides outside of meeqat and is visiting haram-e-Makkah for any reason, it is incorrect to enter without wearing ihram. Therefore, stating that his fatwa is only about the people who are coming to haram-e-Makah with an intention to perform umrah will be, is incorrect. Whenever you are travelling to Makkah whether for work or meeting your relatives, in every condition you will have to wear an ihram.

Reference: Badaey al-Sanaeay, Bayan Makanul-Ihram, Pg. 160, Vol.3

Alamgeeri: al-baab ath-thani fil-moqeet, Pg. 221, Vol. 1

فقط واللہ اعلم بالصواب

However, if your travel to Makkah unusually frequently, then ask a question with the specific details of your situation.

Question ID: 51 Category: Worship
احرام کے بغیر میقات سے گزرنا

 

 

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

میرا سوال میقات کے سامنے سے بلا عمرے کی نیت کے گزرنے کے بارے میں ہے۔ میں مدینہ طیبہ کا رہنے والا ہوں۔ شیخ مکی الحجازی کے مطابق مکہ سے واپس مدینہ جانے والے ہر شخص پر واجب ہے کہ وہ احرام باندھ کرجائے۔

کیا یہ صحیح ہے کہ یہ فتوی صرف ان لوگوں کے لئے ہے جو عمرے کی نیت سے آئے اور گئے؟ جیسا کہ میرے چند دوستوں کا کہنا ہے۔ چونکہ میں اکثر کام اور رشتے داروں وغیرہ سے ملنے کے سلسلے میں سفر کرتا رہتا ہوں اور یہ فتوی صحیح طرح سے سمجھنا چاہتا ہوں تاکہ حرمِ کعبہ کا تقدس مجھ سے غلطی سے پامال نہ ہو

 

 

 

 

 

 

الجواب وبااللہ التوفیق

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

شیخ مکی حجازی صاحب نے صحیح کہا ہے، حنفیہ کے نزدیک میقات سے باہر رہنے والے کیلئے کسی بھی مقصد سے حرم مکہ میں بلا احرام داخل ہونا درست نہیں ہے ، لہذا یہ کہنا کہ فتویٰ ان کیلئے ہے جو صرف عمرہ کے ارادے سے آئے صحیح نہیں ہے، اس لئے آپ جب بھی مکۃ المکرمۃ آئیں جاہے کسی کام کیلئے چاہے رشتہ داروں سے ملاقات کیلئے ہر حال میں آپ کو احرام باندھ کر آنا ہوگا۔حوالہ (بدائع الصنائع بیان مکان الاحرام : ۳ ؍ ۱۶۰)

(عالمگیری : الباب الثانی فی الموقیت: ۱ ؍۲۲۱)

فقط واللہ اعلم بالصواب

البتہ اگر آپ کابہت ہی زیادہ آناجاناہوتو اس کی تفصیل لکھ کر مسئلہ معلوم کرلیں۔