Saturday | 30 May 2020 | 7 Shawaal 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4861.97$351.42$878.55

Fatwa Answer

Question ID: 54 Category: Permissible and Impermissible
Is Smoking Weed Halal?

Assalamualaikum Warahmatullah

I am an Egyptian Muslim. My question is regarding marijuana (weed). Since in many States of United States of America weed has been legalized and a lot of its healing benefits have also been found, is it now halal to use it or is it haram?

Walaikumassalam warahmatullah

الجواب وباللہ التوفیق

Using the substance known as weed, as mentioned in your question which is some type of grass or plant, in such a quantity which leads to intoxication is considered haram. Even using it in such a minute quantity which does not lead to intoxication, without a need is considered impermissible. There is provision for its permissibility to use, as part of a medicine or for medical treatment.

It should be noted that things which are impermissible according to Shar‘ai teachings do not become permissible because a country’s government has legalized it.

قال اللّٰہ تعالیٰ: {اِنَّمَا الْخَمْرُ وَالْمَیْسِرُ وَالْاَنْصَابُ وَالْاَزْلاَمُ رِجْسٌ مِنْ عَمَلِ الشَّیْطٰنِ، فَاجْتَنِبُوْہُ لَعَلَّکُمْ تُفْلِحُوْنَ} [المائدۃ: ۹۰]

الف    ۔    ونقل فی الاشربۃ عن الجوھرۃ حرمۃ اکابنج وحشینۃ وافیون      .......   اما المسکرمنہ فحرام الدرالمختار باب حد شرب المحرم

ب    ۔   ویحل القلیل النافع من البنج وسائر المخدرات للتداوی ونحوہ لان حرمتہ لیست لعینہ وانما نصرر (لفقہ الاسلامی وأدلتہ :۷؍۵۰۵)

ویحرم أکل البنج والحشیشۃ والأفیون الخ۔ (مجمع الأنہر ۴؍۲۵۱ بیروت)

ویحرم أکل البنج وہو أحد نوعي شجر العنب حرام؛ لأنہ یزیل العقل وعلیہ الفتویٰ، ومثل الحشیشۃ في الحرمۃ جوزۃ الطیب، فقد أفتیٰ کثیر من علماء الشافعیۃ بحرمتہا …، اختار أئمۃ ما وراء النہر بأسرہم حرمتہ، وأفتوا بما أفتی بہ المزني۔ (طحطاوي علی الدر المختار ۴؍۲۲۶ کوئٹہ)

السکر من البنج حرام … أکل البنج حرام وإن لم یسکر، لما روي أنہ علیہ السلام نہی عن المیسر والخمر والکویۃ والعنبر الخ۔

(بنایۃ شرح الہدایۃ ۱۲؍۳۷۰ المکتبۃ النعیمیۃ دیوبند)

یحرم تناول البنج والحشیشۃ والأفیون … ویحد بالسکر من البنج في زماننا علی المفتی بہ۔ (الموسوعۃ الفقہیۃ ۲۵؍۹۴ کویت)

ویحرم أیضًا المرقد وہو ما غیّب العقل والحواس معًا کالأفیون والسیکران۔ (الموسوعۃ الفقہیۃ ۵؍۱۲۶ کویت)وأن البنج ونحوہ من الجامدات إنما یحرم إذا أراد بہ السکر، وہو الکثیر دون القلیل، المراد بہ التداوی ونحوہ کالتطیب بالعنبر وجوزۃ الطیب۔ (شامي / کتاب الحدود / باب حد الشرب المحرم، مطلب في البنج والأفیون والحشیشۃ ۶؍۷۸ زکریا)وأما الأفیون فہو حرام؛ لأنہ مضر بالبدن، وکل شيئٍ یضر بہ فأکلہ حرام۔ (تقریرات الرافعي ۶؍۴۱ زکریا)وأمّا آراء الفقہاء فی حکم تعاطي ہٰذہ المخدرات من الحشیشۃ والأفیونۃ والمورفین والکوکایین والہیرویین وجوزۃ الطیب والبنج والعنبر والزعفران، فإن فقہاء المذاہب الأربعۃ متفقون علی تحریم القدر المغیب للعقل من ہٰذہ المواد وما أشبہہا من کل ما یغطي العقل ویضر البدن … وہٰذہ المواد وغیرہا من کل مادۃ تغطي العقل وتفتک بالبدن یحرم قلیلہا وکثیرہا۔… والحکماء علی أنہا خبیئۃ ضارۃ بالجسم والفعل صادۃ عن ذکر اللّٰہ وعن الصلاۃ، وما کان ہٰذا فعلہ کان محرمًا بالإجماع؛ لأن ما یودّي إلی الحرام حرام، وہي من المخدرات المسکرات کجوزۃ الطیب والزعفران والبنج ونحو ذٰلک مما یتلف العقل والفکر۔ (حاشیۃ شامي ۶؍۷۶-۷۷ زکریا)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 54 Category: Permissible and Impermissible
کیا ویڈ حلال ہے؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

میں ایک مصری مسلمان ہوں۔ میرا سوال ویڈ سے متعلق ہے جو ایک ایسی گھاس یا پودا ہوتا ہے جس سے بھنگ وغیرہ کے انداز کا نشہ طاری ہوتا ہے۔ چونکہ امریکہ کی بہت سی ریاستوں میں اس کو قانونی طور پر لوگوں کے استعمال کے لئے کھول دیا گیا ہے ، اور اس کے بہت سے فوائد علاج وغیرہ میں بھی سامنے آئے ہیں۔ کیا اسلام کی تعلیمات کے مطابق اب یہ جائز قرار دی جائے گی یا ابھی بھی اس کو حرام کہا جائے گا؟

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

ویڈنامی جس گھاس یا پودے کا تذکرہ آپ نے کیا ہے اس کی اتنی مقدار استعمال کرنا جس سے نشہ طاری ہوجائے حرام ہے ، اور اتنی تھوڑی مقدار جس سے نشہ طاری نہ ہو بلا ضرورت استعمال کرنا جائز نہیں ہے البتہ دواء اور علاجا ًاستعمال کرنے کی گنجائش ہے۔

واضح رہےکہ جو چیز شرعی قوانین کی رو سے ناجائز ہو وہ چیز ملکی قوانین کی رو سے جائز قرار دیئے جانے سے جائز نہیں ہوجاتی ۔

قال اللّٰہ تعالیٰ: {اِنَّمَا الْخَمْرُ وَالْمَیْسِرُ وَالْاَنْصَابُ وَالْاَزْلاَمُ رِجْسٌ مِنْ عَمَلِ الشَّیْطٰنِ، فَاجْتَنِبُوْہُ لَعَلَّکُمْ تُفْلِحُوْنَ} [المائدۃ: ۹۰]

الف    ۔    ونقل فی الاشربۃ عن الجوھرۃ حرمۃ اکابنج وحشینۃ وافیون      .......   اما المسکرمنہ فحرام الدرالمختار باب حد شرب المحرم

ب    ۔   ویحل القلیل النافع من البنج وسائر المخدرات للتداوی ونحوہ لان حرمتہ لیست لعینہ وانما نصرر (لفقہ الاسلامی وأدلتہ :۷؍۵۰۵)

ویحرم أکل البنج والحشیشۃ والأفیون الخ۔ (مجمع الأنہر ۴؍۲۵۱ بیروت)

ویحرم أکل البنج وہو أحد نوعي شجر العنب حرام؛ لأنہ یزیل العقل وعلیہ الفتویٰ، ومثل الحشیشۃ في الحرمۃ جوزۃ الطیب، فقد أفتیٰ کثیر من علماء الشافعیۃ بحرمتہا …، اختار أئمۃ ما وراء النہر بأسرہم حرمتہ، وأفتوا بما أفتی بہ المزني۔ (طحطاوي علی الدر المختار ۴؍۲۲۶ کوئٹہ)

السکر من البنج حرام … أکل البنج حرام وإن لم یسکر، لما روي أنہ علیہ السلام نہی عن المیسر والخمر والکویۃ والعنبر الخ۔

(بنایۃ شرح الہدایۃ ۱۲؍۳۷۰ المکتبۃ النعیمیۃ دیوبند)

یحرم تناول البنج والحشیشۃ والأفیون … ویحد بالسکر من البنج في زماننا علی المفتی بہ۔ (الموسوعۃ الفقہیۃ ۲۵؍۹۴ کویت)

ویحرم أیضًا المرقد وہو ما غیّب العقل والحواس معًا کالأفیون والسیکران۔ (الموسوعۃ الفقہیۃ ۵؍۱۲۶ کویت)وأن البنج ونحوہ من الجامدات إنما یحرم إذا أراد بہ السکر، وہو الکثیر دون القلیل، المراد بہ التداوی ونحوہ کالتطیب بالعنبر وجوزۃ الطیب۔ (شامي / کتاب الحدود / باب حد الشرب المحرم، مطلب في البنج والأفیون والحشیشۃ ۶؍۷۸ زکریا)وأما الأفیون فہو حرام؛ لأنہ مضر بالبدن، وکل شيئٍ یضر بہ فأکلہ حرام۔ (تقریرات الرافعي ۶؍۴۱ زکریا)وأمّا آراء الفقہاء فی حکم تعاطي ہٰذہ المخدرات من الحشیشۃ والأفیونۃ والمورفین والکوکایین والہیرویین وجوزۃ الطیب والبنج والعنبر والزعفران، فإن فقہاء المذاہب الأربعۃ متفقون علی تحریم القدر المغیب للعقل من ہٰذہ المواد وما أشبہہا من کل ما یغطي العقل ویضر البدن … وہٰذہ المواد وغیرہا من کل مادۃ تغطي العقل وتفتک بالبدن یحرم قلیلہا وکثیرہا۔… والحکماء علی أنہا خبیئۃ ضارۃ بالجسم والفعل صادۃ عن ذکر اللّٰہ وعن الصلاۃ، وما کان ہٰذا فعلہ کان محرمًا بالإجماع؛ لأن ما یودّي إلی الحرام حرام، وہي من المخدرات المسکرات کجوزۃ الطیب والزعفران والبنج ونحو ذٰلک مما یتلف العقل والفکر۔ (حاشیۃ شامي ۶؍۷۶-۷۷ زکریا)

فقط واللہ اعلم بالصواب