Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 75 Category: Miscellaneous
Intent to Get Married

Assalamualaikum Warahmatullah

I am a 21 year old woman about to graduate from my undergrad college. I have been getting to know this boy who is the same age as mine and also about to graduate and has a job in a respective field. Through time we have both realized that we would like to get married. The only problem is that I am from Senegal and he is from Pakistan and both are parents are very cultural. We are not exactly sure how to bring this topic up to our parents without causing problems. We would really like to have a relationship in the halal manner and make sure that at the end of the day we are considering Islam as our top most priority and make any decision in the light of its teachings. Your advice will be extremely helpful in this matter.

JazakAllah Khair

Walaikumassalam Warahmatullah

الجواب وباللہ التوفیق

Regarding this issue, we recommend that you try and involve any of your father or mother’s relatives, who are respected in your parents’ eyes, and have them convey this detail to your parents in the best manner possible. It is possible that this leads to a beneficial solution of this issue.

والسلام

Question ID: 75 Category: Miscellaneous
شادی کی خواہش

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

میں ایک ۲۱، سالہ لڑکی ہوں اور مستقبل قریب میں کالج سے پڑھائی مکمل کرنے والی ہوں۔ میرے ساتھ ایک لڑکا پڑھتا ہے جو میری ہی عمر کا ہے اور وہ بھی کالج میرے ساتھ ہی مکمل کرنے والا ہے اور پہلے سے اپنی پڑھائی کی فیلڈ میں جاب بھی کرتا ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ہم دونوں کو یہ احساس ہوا ہے کہ ہم شادی کرنا چاہتے ہیں۔ مسئلہ یہ ہے کہ میں سینیگال کی رہنے والی ہوں اور اس کا تعلق پاکستان سےہے۔ ہم دونوں کو یہ نہیں معلوم کہ اپنے والدین کے سامنے ایسی بات کیسے کی جائے چونکہ دونوں والدین روایتی لوگ ہیں۔ ان کو کسی پریشانی میں ڈالے بغیر ایسی بات کیسے کی جائے۔ ہم کسی بھی قسم کے رشتے کو حلال رکھنا چاہتے ہیں اور یہ چاہتے ہیں کہ اسلام ہماری بنیادی اور سب سے اہم ضرورت رہے اور اسی کی روشنی میں ہی ہمارے سارے فیصلے ہوں۔ اس سلسلے میں آپ کی راہنمائی بے حد کارآمد ہو گی۔جزاک اللہ خیرا ۔

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

اس سلسلہ میں آپ لوگ والد یا والدہ کے اعزہ واقارب یا دوست و احباب جن کی وقعت اور اہمیت والدین کے دل میں ہو ان کے ذریعہ اپنی بات اچھے انداز میں پیش کرنے کی کوشش کریں۔ہوسکتا ہےکہ کوئی سبیل نکل جائے۔

والسلام