Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 97 Category: Business Dealings
The Concept of Rukhsati in Islam

Assalamualaikum Warahmatullah

What is the meaning of Rukhsati under Islamic law? If the marriage is not consummated because the husband and wife were living separately until Rukhsati is formally performed, will it affect their marriage status under Islamic law.

الجواب وباللہ التوفیق

The meanings of the word Rukhsati is to depart or leave. After the Nikah, when a bride leaves her parents’ house, and goes to her husband’s home, this process is termed as Rukhsati. In the current circumstances, it is best to perform Rukhsati as soon as possible. Delaying this process without a legitimate reason, as it has become a trend these days in our society, is not favorable. However, if the Rukhsati does not take place and the marriage does not get consummated, that does not have any effect on the Nikah between them. Their Nikah remains valid and intact, regardless of how long they live apart. Nonetheless, if there is a valid reasonable basis in delaying the Rukhsati then there is no harm in it. For example, the Nikah between Rasulullah Sallallaho Alyhi Wasallam and Hazrat Ayesha RaziAllah Ta‘ala Anha took place when Hazrat Ayesha RaziAllah Ta‘ala Anha was 6 years old and the Rukhsati took place when she became 9 years of age.

عن عروۃ : ’’ تزوّج النبي ﷺ عائشۃ وہي ابنۃ ستّ ، وبنی بہا وہي ابنۃ تسعٍ ، ومکثت عندہ تسعاً ‘‘ ۔ (صحیح بخاری: کتاب النکاح ، باب من أحب البنا قبل الغزو ۵۱۵۸ )

عن عائشۃ رضي اللہ عنہا : أن النبي ﷺ تزوّجہا وہي بنتُ ستّ سنین ، وأدخلت علیہ وہي بنتُ تسعٍ ، ومکثت عندہ تسعاً ‘‘ ۔ (۲۰/۱۷۸ ، رقم الحدیث : ۵۱۳۳ ، کتاب النکاح ، باب إنکاح الرجل ولدہ الصغار ، مکتبہ رشیدیہ کوئٹہ)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 97 Category: Business Dealings
رخصتی کیا ہے؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

اسلام میں رخصتی کا مطلب کیا ہے؟ اگر شادی کے بعد رخصتی سے قبل صحبت نہ ہوئی ہوکیونکہ میاں اور بیوی دو مختلف ممالک میں رہ رہے ہوں اور امیگریشن وغیرہ کا پراسس چل رہا ہو تو اس کا ان کی شادی/نکاح پرکیا اثر پڑے گا؟کیا ان کا نکاح باقی رہے گا یا صحبت نہ ہونے کی وجہ سے ختم ہو جائے گا؟

 

 

الجواب وباللہ التوفیق

رخصتی کے معنیٰ وداع اور رخصت کرنے کے آتے ہیں،اور دولہن جب نکاح کے بعد اپنے ماں باپ کے گھر سے شوہر کے گھر جاتی ہے تو اسی کا نام رخصتی ہے،اور موجودہ حالات میں جتنا جلد ہوسکے رخصتی کردینی چاہیے،بلاوجہ رخصتی میں تاخیر کرنا جیساکہ معاشرہ میں ایک رسم بن چکی ہے مناسب نہیں ہے،لیکن اگر رخصتی نہ ہو یا میاں بیوی میں صحبت نہ ہوتو اس سے ان کے نکاح میں کوئی فرق نہیں پڑتا،دونوں کا نکاح بدستور قائم رہتا ہے۔چاہے کتنا ہی عرصہ کیوں نہ گزر جائے۔ہاں اگر کسی معقول عذر کی بنیاد پر رخصتی میں تاخیر ہوتو کوئی حرج کی بات نہیں ہے،جیساکہ آپ ﷺ کا حضرت عائشہؓ سے نکاح بھی چھ سال کی عمر میں ہوا تھا اور رخصتی نو سال کی عمر میں۔

عن عروۃ : ’’ تزوّج النبي ﷺ عائشۃ وہي ابنۃ ستّ ، وبنی بہا وہي ابنۃ تسعٍ ، ومکثت عندہ تسعاً ‘‘ ۔ (صحیح بخاری: کتاب النکاح ، باب من أحب البنا قبل الغزو ۵۱۵۸ )

عن عائشۃ رضي اللہ عنہا : أن النبي ﷺ تزوّجہا وہي بنتُ ستّ سنین ، وأدخلت علیہ وہي بنتُ تسعٍ ، ومکثت عندہ تسعاً ‘‘ ۔ (۲۰/۱۷۸ ، رقم الحدیث : ۵۱۳۳ ، کتاب النکاح ، باب إنکاح الرجل ولدہ الصغار ، مکتبہ رشیدیہ کوئٹہ)

فقط واللہ اعلم بالصواب