Friday | 03 July 2020 | 11 Dhul-Qidah 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4993.31$354.77$886.92

Fatwa Answer

Question ID: 997 Category: Permissible and Impermissible
Pants under the ankles

Assalamualaikum, 

It is known that pants or shalwar below the ankles is prohibited in Islam, but some say that Abu Bakr R.A. was told that, "Even your clothes are below the ankles but you are not from those who have arrogance (or as said something like that ) so the people now get excuse that if some one has no arrogance then it is fine to have clothes under the ankles. What do the Ulama say about this?

الجواب وباللہ التوفیق

After the noble sayings of Nabi Kareem S.A.W. and stern warnings there is no room for any person claiming Faith that he would dare اسبالِ ازار hanging his lower dress under his ankles without any strong excuse. And any Muslim having دینی (religious) prudency in competition with the noble saying of Nabi Kareem S.A.W. cannot make excuse of customary practice, or habit, or the absence of pride. Nabi Kareem S.A.W. himself refrained from this action throughout his life and forbid his Sahabah R.A. about it, hence if hanging lower garment under one’s ankles would have been permissible due to not having pride then it should have been permissible for Nabi Kareem S.A.W. and all صحابہٴ کرام R.A.  (companions).

عَنْ جَابِرٍ وَایَّاکَ وَاسْبَالَ الْازَارِ؛ فانَّہ مِنَ الْمَخِیْلَةِ وَانَّ اللّٰہَ لاَ یُحِبُّ الْمَخِیْلَةَ․ (ابوداوٴد، کتاب اللباس ،باب ما جاء فی اسبال الازار)  

It is narrated from Hazrat Jabir R.A. that Nabi Kareem S.A.W. said: Refrain from hanging lower garment below ankles! Because it occurs due to pride and Allaah Ta’alaa does not like pride.        

Nabi Kareem S.A.W.’s prohibiting Sahabas from hanging lower garment below ankles despite their innerself purity is a clear proof that this action of hanging lower garment below ankles itself is vile and مکروہ (abominable) though a person may claim that he does not have pride in him.

            The condition of خیلاء i.e., pride mentioned in the Ahadith does not mean that the warning is for the one who does it with pride and the one who does not have pride there is permission of hanging lower garment below ankles, rather the meaning of this is that the very base reason of hanging lower garment below ankles is pride, i.e., only those people do this action who have pride in them. Due to this Hadith the writer of Fathul Bari, Hafiz Ibne Hajr R.A. says:  

”وَحَاصِلُہ أنَّ الْاسْبَالَ یَسْتَلْزِمُ جَرَّ الثَّوْبِ، وَجَرُّ الثَّوْبِ یَسْتَلْزِمُ الْخُیَلاَءَ، وَلَوْ لَمْ یَقْصِدِ اللَّابِسُ الْخُیَلاَءَ“

(فتح الباری :کتاب اللبا س )

i.e., the inevitable result of hanging one’s lower garment below ankles is dragging it and dragging clothes is the inevitable result of pride, no matter the person wearing clothes makes intention of pride or not.

            A big Jamaa’t of Ulama have declared hanging lower garment below ankles to be Haram without differentiating between having pride or not having pride, and have not accepted the claim of not having pride, rather they have declared the hanging lower garment below ankles after the noble sayings of Nabi S.A.W. the proof of pride. (For details please see Fathul Bari: Book of Clothing). However, if there is Shara’n excused then he is exempt.

            As far as the matter of Hazrat Abu Bakr R.A., it is particular with him. He would make the utmost effort that his lower garment would be above the ankles, but it would still slip below. He mentioned it to Nabi S.A.W. He said, “You are not from amongst them, therefore, there is flexibility for you in this matter”. We come to know from this that Hazrat Abu Bakr R.A. did not keep the lower garment below ankle intentionally, rather he would keep it above, while the people of present day time do it intentionally. There Hazrat Abu Bakr R.A. neither became his own witness not did he vindicate himself, rather the Nabi of Allaah S.A.W. gave his witness, and here the people themselves vindicate selves from pride.

            Hence, the noble Ahadith of the truthful Nabi S.A.W. are fully clear and evident in this matter that hanging lower garment below ankles is sign of pride, therefore, to claim not to have pride after this is deception from inner self and Shaitan. When the chosen and sacred Jamat like the Sahabah R.A. were ordered to refrain from it then where do we stand, therefore, every Muslim should fully abstain from it.

قال أبو بكر يا رسول الله إن أحد شقي إزاري يسترخي إلا أن أتعاهد ذلك منه ؟ فقال النبي صلى الله عليه و سلم ( لست ممن يصنعه خيلاء )(صحیح بخاری:کتاب اللباس)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 997 Category: Permissible and Impermissible
ٹخنوں سے نیچے پتلون

السلام علیکم

یہ بات معلوم ہے کہ اسلام میں پتلون یا شلوار ٹخنوں سے نیچے ممنوع ہے لیکن کچھ کہتے ہیں کہ ابو بکرؓ کو کہا گیا تھا کہ اگر آپؓ کے کپڑے  ٹخنوں سے نیچے بھی ہیں مگر آپؓ ان میں سے نہیں ہیں جن میں  کبر ہے (یا اس  جیسی بات کہی گئی تھی) تو لوگ اس سے عذر نکال لیتے ہیں کہ اگر کسی کو تکبر نہیں ہے تو  ٹخنوں سے نیچے کپڑے ہونا ٹھیک ہے۔ علماء اس بارے میں کیا کہتے ہیں؟

الجواب وباللہ التوفیق

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشاداتِ عالیہ اور سخت وعیدوں کے بعد کسی ایمان کا دعویٰ کرنے والے کے لیے یہ گنجائش نہیں رہ جاتی کہ وہ بلا کسی عذرِ شدیدکے اسبالِ ازار کی جرأت کرسکے، اور ادنیٰ بھی دینی غیرت رکھنے والا کوئی مسلمان حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان عالی کے مقابلہ میں عرف وعادت یا  عدم تکبر  کا بہانہ نہیں بنا سکتا، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے خوداس عمل سے پوری زندگی اجتناب فرمایا اور اپنے صحابہ کو اس سے منع فرمایا،لہٰذا اگر کبر نہ ہونے کی بناء پر اسبالِ ازار جائز ہوتا، توحضور صلی اللہ علیہ وسلم اور تمام صحابہٴ کرام کے لیے جائز ہونا چاہیے تھا۔ 

عَنْ جَابِرٍ وَایَّاکَ وَاسْبَالَ الْازَارِ؛ فانَّہ مِنَ الْمَخِیْلَةِ وَانَّ اللّٰہَ لاَ یُحِبُّ الْمَخِیْلَةَ․ (ابوداوٴد، کتاب اللباس ،باب ما جاء فی اسبال الازار)  

حضرت جابر سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: اسبالِ ازار سے بچو! کیوں کہ یہ تکبر کی وجہ سے ہوتا ہے، اور اللہ تعالیٰ تکبر کو پسند نہیں فرماتے۔صحابہ کی طہارتِ باطنی کے باوجود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا اسبالِ ازار سے ان کو منع فرمانا، اس بات کی کھلی دلیل ہے کہ اسبالِ ازار کا یہ عمل ہی شریعت کے نزدیک قبیح اور مکروہ ہے، چاہے کوئی یہ دعویٰ کرے کہ اس کے اندر کبر نہیں ہے۔

بعض احادیث کے اند ر”خیلاء“ یعنی کبر کی جو قید آئی ہے، تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ جو تکبراً ایسا کرے، اس کے لیے وعید ہے،اور جس میں تکبر نہیں ہے اس کے لیے اسبالِ ازار کی اجازت ہے؛بلکہ اس لفظ کا مطلب یہ ہے کہ اسبالِ ازار کا سبب ہی کبر ہے، یعنی جن کے اندر کبر ہوتا ہے وہی یہ حرکت کرتے ہیں، اسی حدیث کی وجہ سے صاحب فتح الباری علامہ ابن حجر فرماتے ہیں: 

”وَحَاصِلُہ أنَّ الْاسْبَالَ یَسْتَلْزِمُ جَرَّ الثَّوْبِ، وَجَرُّ الثَّوْبِ یَسْتَلْزِمُ الْخُیَلاَءَ، وَلَوْ لَمْ یَقْصِدِ اللَّابِسُ الْخُیَلاَءَ“

  یعنی اسبالِ ازار کپڑے گھسیٹنے کو مستلزم ہے اور کپڑا گھسیٹنا تکبر کو مستلزم ہے، چاہے پہننے والا تکبر کا ارادہ نہ کرے۔(فتح الباری :کتاب اللبا س) علماء کی ایک بڑی جماعت نے تکبر اور عدمِ تکبر کے درمیان فرق کیے بغیر اسبالِ ازار کو حرام قرار دیا ہے، اور عدمِ تکبر کے دعوے کو تسلیم نہیں کیا ہے؛ بلکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات کے بعد اسبالِ ازار کرنے کو تکبر کی دلیل قرار دیا ہے (تفصیل کے لیے دیکھیے: فتح الباری: کتاب اللباس)  ہاں اگر کوئی شرعی معذور ہے، تووہ اس سے مستثنیٰ ہے۔

رہا حضرت ابو بکر کا مسئلہ تو وہ ان کے ساتھ خاص ہے،وہ اہتمام   یہی کرتے تھے کہ ان کی ازارٹخنوں سے اوپرہو ،لیکن پھر بھی وہ ڈھلک کر نیچے آجاتی تھی،انہوں نے حضور سے اس کا ذکر کیا تو آپ نے فرمایاکہ تم ان میں سے نہیں ہو،اس لئے تمہارے لئے اس کی گنجائش ہے۔ اس سے معلوم ہوتا ہےکہ حضرت ابو بکر بالقصد اپنی ازار ٹخنوں سے نیچے نہیں رکھتے تھے،بلکہ اوپر ہی رکھتے تھے،اورموجودہ زمانے میں لوگ بالقصد رکھتے ہیں ،حضرت ابو بکر نے وہاں خوداپنی شہادت اور تزکیہ نہیں کیا تھا،بلکہ اللہ کے نبی نے ان کی شہادت دی تھی،اور یہاں لوگ خود اپنی ذات تکبر کی نفی کرتے ہیں ۔

غرض صادق ومصدوق نبیِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیثِ مبارکہ اس مسئلہ میں بالکل صریح اور واضح ہیں کہ اسبالِ ازار علامتِ تکبر ہے، لہٰذا اس کے بعد تکبر نہ ہونے کا دعویٰ کرنا نفسانی اور شیطانی دھوکہ ہے، جب صحابہ جیسی برگزیدہ اور مقدس جماعت کو اس سے گریز کرنے کا حکم دیا گیا، تو ہم اور آپ کس شمار میں آتے ہیں، لہذا ہر مسلمان کو  اسبالِ ازارسے پورے طور پر اجتناب کرنا چاہیے۔

قال أبو بكر يا رسول الله إن أحد شقي إزاري يسترخي إلا أن أتعاهد ذلك منه ؟ فقال النبي صلى الله عليه و سلم ( لست ممن يصنعه خيلاء )(صحیح بخاری:کتاب اللباس)

واللہ اعلم بالصواب