Thursday | 09 December 2021 | 4 Jamadiul-Awal 1443
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$5015.81$441.39$1103.48

Fatwa Answer

Question ID: 1316 Category: Rights
Wife’s rights on a husband

Assalamualaikum wa rahmatullahi wa barakatuhu. I hope this reaches you in the best of health and iman. 
I have 3 questions 

  1. Is it Sunnah for the husband to listen to his wife?
  2. What are the things a wife does that makes her sinful
  3. What are the rights of the husband and wife 

الجواب وباللہ التوفیق

1. The first clause of the question is not clear.

2. Violation of the rules of sharee'ah makes the wife and even every woman a sinner.

3. As for The Rights of the wife and the husband, which you probably want to know, some of the basic rights are mentioned below:

A. The Rights of the husband over his wife:

a. In every legitimate matter, she is required to treat him with obedience, respect, solace, kindness and ensuring her consent.

b. Never be rude or insolent towards him.

c. She should not demand anything beyond his capacity or status.

d. Never betray him.
e. She is not allowed to spend his wealth anywhere without his permission.

f. In consideration of husband’s respect, the wife is expected to maintain cordial relations with his parents and sisters.

g. If the husband scolds the wife or blames her for something, the wife should not retaliate in a tit for tat manner even if his behavior was totally unjust.
The appropriate response on the part of the wife should be to wait until his anger has subsided, and then explain the right thing so that his misunderstanding is cleared.

B. Below are some ahaadith regarding the responsibilities of a wife.

Hazrat Mohammad (SAW) said:

لو كنت آمر أحداً أن يسجد لأحد لأمرت المرأة أن تسجد لزوجها» .
رواه الترم.(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ )

a. If I could order someone to prostrate to someone other than Allah, I would order the wife to prostrate to her husband.

In another narration:

إذا دعا الرجل امرأته إلى فراشه فأبت فبات غضبان لعنتها الملائكة حتى تصبح»"
.)مشکاۃ المصابیح،باب عشرۃ النساء، 2/280)

b. If the husband calls the wife to his bed and she refuses, and the husband becomes angry with her, the angels curse her until morning.

 

المرأة إذا صلت خمسها وصامت شهرها وأحصنت فرجها وأطاعت بعلها فلتدخل من أي أبواب الجنة شاءت» .
رواه أبو نعيم في الحلية".(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ النساء)

There is a similar narration:
c. If a woman prays five times a day (during her days of purification), fasts during the month of Ramadan (and makes up for missed fasts of menstruation period), guards her chastity, and obeys her husband, (then is good news for this woman.) that she may enter from any of the gates of Paradise she wants.

While the Shari'ah places certain responsibilities on wives, it also imposes certain responsibilities on husbands, the fulfillment of which is as important as the responsibility of the husband over the wife.

B. Below are the rights of the wife over her husband:

a. The husband should try his best to manage his wife's alimony according to his capacity and status.

b. Arrange suitable accommodation for her.

c. Pay her the dower.

d. Spend the night with her.

e. Be kind and gentle towards her.

f. Treat her as a mate and life partner instead of a maid.

g. Do not deal with undue strictness and hardship.

h. If something originates from her contrary to temperament and nature of the husband, he must show restraint and patience as much as possible.

i. Avoid beating her for disobedience or in illegal matters, rather explain gently. if she doesn’t come to terms, separate her bed, and if there is still no correction and it is necessary to apply a beating, do not use wood stick etc., just hit by hand, but do not hit the head and other vital organs. The hitting should be so light that the body is not hurt or injured.

j. Keep teaching her shariah rules, religious issues and Islamic etiquettes and keep urging her to take care of Shariah, especially compliance with the Shariah veil etc

k. The husband must give her permission to visit her parents and her other mahram relatives from time to time as per occasion and convenience.

In summary, the wife should consider her husband superior to her, be faithful and obedient to him, do not diminish his benevolence and pleasure, consider the good of her world and the hereafter as related to his happiness, The husband should consider his wife as a blessing from Allah, value her and love her, if she makes a mistake he should turn a blind eye, try to correct her with patience and wisdom. He should fulfill her needs as much as he can, try to comfort and entertain her.

Below are some verse from the Quraan and Ahadith related to the responsibilities of husbands.

The Almighty said:


وعَاشِرُوهُنَّ بِالْمَعْرُوفِ فَإِنْ كَرِهْتُمُوهُنَّ فَعَسَى أَنْ تَكْرَهُوا شَيْئًا وَيَجْعَلَ اللَّهُ فِيهِ خَيْرًا كَثِيرًا (النساء: ۱۹)

And have good time with these women, and if you dislike them, you may dislike one thing and Allah will put a great benefit in it.

The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: The best person among you is the one who is best for his family (wife, children, relatives and servants), and I am the best among you for my family

.... The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said:


:" أكمل المؤمنين إيماناً أحسنهم خلقاً، وخياركم خياركم لنسائهم(مشکاۃ المصابیح، 2/282، باب عشرۃ النساء)

The most perfect of the believers is the one who is the most virtuous of them, and the best of you is the one who is best to his wives.

In another Hadith, The Prophet (SAW) said:


خيركم خيركم لأهله وأنا خيركم لأهلي”.(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ النساء)

The best amongst you is the best towards his wife and children and I am the best amongst you towards my family.

No Muslim man should hate a Muslim woman. If in his eyes any trait or habit of this woman is disliked, then any other trait and habit will also be preferred

The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: The most perfect of the believers is the one who is the most virtuous of them, and the best of you is the one who is best to his wives

There is another hadith Mubarak:

قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «لا يفرك مؤمن مؤمنةً إن كره منها خلقاً رضي منها آخر ۔

(مشکاۃ المصابیح، 2/280، باب عشرۃ النساء)


No Muslim man should hate a Muslim woman. If, in his view, any trait and habit of this woman is disliked, then another trait and habit will also be preferred
فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 1316 Category: Rights
عورت کا مرد پر حق

 

میرے مندرجہ ذیل تین سوالات ہیں :
۱- کیا یہ سنت کی تعلیمات میں سے ہے کہ اپنی بیوی کو بھی سنا جائے؟
۲- وہ کیا چیزیں ہیں جو ایک بیوی کو گناہگار بنا دیتی ہیں؟
۳- خاوند اور بیوی کے ایک دوسرے کے حوالے سے کیا حقوق ہیں؟

 

الجواب وباللہ التوفیق 

سوال کی پہلی شق واضح نہیں ہے۔
(۲)احکامِ شرع کی خلاف ورزی بیوی بلکہ ہر عورت کو گنہگار بناتی ہے۔
(۳)رہے بیوی اور شوہر کے حقوق جس کو شاید آپ جاننا چاہتے ہیں ان میں سے چند بنیادی حقوق ذیل میں ذکر کئے جارہے ہیں ،ان کو ملاحظہ کریں ،بیوی کے ذمہ شوہر کے حقوق یہ ہیں:
(۱) ہرجائز کام میں اس کی اطاعت، ادب، خدمت، دلجوئی اور رضاجوئی کا بھرپور اہتمام کرے۔
(۲) اس کے ساتھ کبھی بھی بے ادبی اور گستاخی کا انداز اختیار نہ کرے۔
(۳) اس کی وسعت وحیثیت سے زیادہ کسی چیز کی فرمائش نہ کرے۔
(۴) اپنی ذات کے سلسلہ میں اس کے حق میں ہرگز کوئی خیانت نہ کرے۔
(۵) اس کا مال اس کی اجازت کے بغیر کہیں خرچ نہ کرے۔
(۶) شوہر کی رعایت میں اس کے ماں باپ اور بہنوں کے ساتھ اچھے سلوک کا اہتمام کرے۔
(۷) شوہر اگر کسی بات پر ڈانٹ ڈپٹ کرے اور کچھ کہے تو ترکی بہ ترکی اس کو جواب نہ دے اگرچہ وہ ناحق پر ہو، البتہ غصہ ختم ہونے کے بعد کسی موقع سے صحیح بات کی وضاحت کردے تاکہ اس کا دل صاف ہوجائے۔
ذیل میں چند احادیث مبارکہ بیوی کی ذمہ داریوں سے متعلق ملاحظہ فرمائیں۔
آپ ﷺ نے فرمایا:
لو كنت آمر أحداً أن يسجد لأحد لأمرت المرأة أن تسجد لزوجها» . رواه الترمذي".(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ )
کہ اگر میں اللہ کے علاوہ کسی کوسجدہ کا حکم کرسکتا تو بیوی کو حکم دیتا کہ وہ اپنے شوہر کو سجدہ کرے۔
ایک روایت میں ہے : إذا دعا الرجل امرأته إلى فراشه فأبت فبات غضبان لعنتها الملائكة حتى تصبح»".(مشکاۃ المصابیح،باب عشرۃ النساء، 2/280)
کہ اگر شوہر بیوی کو بستر پر بلائے اور وہ انکار کردے تو اورشوہراس پر غصہ ہوتو فرشتے صبح تک اس پر لعنت کرتے ہیں۔ایسے ہی ایک روایت میں ہے:
المرأة إذا صلت خمسها وصامت شهرها وأحصنت فرجها وأطاعت بعلها فلتدخل من أي أبواب الجنة شاءت» . رواه أبو نعيم في الحلية".(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ النساء)
جس عورت نے (اپنی پاکی کے دنوں میں پابندی کے ساتھ) پانچوں وقت کی نماز پڑھی، رمضان کے (ادا اور قضا) رکھے، اپنی شرم گاہ کی حفاظت کی اور اپنے خاوند کی فرماں برداری کی تو (اس عورت کے لیے یہ بشارت ہےکہ) وہ جس دروازہ سے چاہے جنت میں داخل ہوجائے۔
جہاں شریعت نے بیویوں پر شوہروں سے متعلق کچھ ذمہ داریاں رکھیں ہیں تو وہیں شوہر وں پر بھی کچھ ذمہ داریاں عائد کی ہیں،جن کی ادائیگی بھی اتنی ہی ضروری ہے جتنا کہ بیوی پر شوہر کی ذمہ داری ہے۔
شوہر کے ذمہ بیوی کے حقوق یہ ہیں:
(۱) اپنی حیثیت ووسعت کے موافق بیوی کے نان ونفقہ کا بہتر سے بہتر انتظام کی کوشش کرے۔
(۲)اس کے لئے مناسب رہائش کا انتظام کرے۔
(۳) مہر ادا کرے۔
(۴) اس کے ساتھ شب باشی کی جائے۔
(۴)حسن اخلاق اور نرمی سے پیش آئے۔
(۵) خادمہ ونوکرانی کے بجائے رفیقہٴ حیات سمجھے۔
(۶) بلاضرورت سختی وڈانٹ ڈپٹ کا معاملہ نہ کرے۔
(۷) اس کی جانب سے خلافِ مزاج وطبیعت امور پیش آنے پر حتی الامکان صبر سے کام لے۔
(۸)نافرمانی اور خلافِ شرع امور پر مارنے پیٹنے سے گریز کرے، نرمی سے سمجھائے ، اگر نہ سمجھے تو بستر میں علاحدگی اختیار کرلے، اور اگر پھر بھی اصلاح نہ ہو اور مارنناناگزیر ہو جائےتو لکڑی وغیرہ کا استعمال نہ کرے صرف ہاتھ سے مارے اور سر اور دیگر اہم اعضاء پر نہ مارے۔اور ضرب بھی اتنی ہلکی ہوکہ جسم پر چوٹ نہ آئے۔
(۹) اس کو دینی احکام، مسائل وآداب سکھاتا رہے اور اس کو شریعت بالخصوص پردہ شرعی وغیرہ کے اہتمام کی تاکید کرتا رہے۔
(۱۰) گاہے گاہے حسب موقع وسہولت ماں باپ اور دیگر محرم رشتہ داروں سے ملاقات کی اجازت دیدیا کرے۔
خلاصہ یہ ہے کہ بیوی کو چاہیے کہ وہ اپنے شوہر کو اپنے سے بالاتر سمجھے، اس کی وفادار اور فرماں بردار رہے، اس کی خیرخواہی اور رضا جوئی میں کمی نہ کرے، اپنی دنیا اور آخرت کی بھلائی اس کی خوشی سے وابستہ سمجھے، اور شوہر کو چاہیے کہ وہ اپنی بیوی کو اللہ کی عطا کی ہوئی نعمت سمجھے، اس کی قدر اور اس سے محبت کرے، اگر اس سے غلطی ہوجائے تو چشم پوشی سے کام لے، صبروتحمل اور دانش مندی سے اس کی اصلاح کی کوشش کرے، اپنی استطاعت کی حد تک اس کی ضروریات اچھی طرح پوری کرے، اس کی راحت رسانی اور دل جوئی کی کوشش کرے۔
ذیل میں شوہروں کی ذمہ داریوں سے متعلق چند احادیث مبارکہ ملاحظہ کریں،حق تعالیٰ نے فرمایا:
وعَاشِرُوهُنَّ بِالْمَعْرُوفِ فَإِنْ كَرِهْتُمُوهُنَّ فَعَسَى أَنْ تَكْرَهُوا شَيْئًا وَيَجْعَلَ اللَّهُ فِيهِ خَيْرًا كَثِيرًا (النساء: ۱۹)
اور ان عورتوں کے ساتھ خوبی کے ساتھ گزران کرو، اور اگر وہ تم کو ناپسند ہوں تو ممکن ہے کہ تم ایک شے کو ناپسند کرو اور اللہ تعالیٰ اس کے اندر کوئی بڑی منفعت رکھ دے۔
حدیث میں ہے:" أكمل المؤمنين إيماناً أحسنهم خلقاً، وخياركم خياركم لنسائهم(مشکاۃ المصابیح، 2/282، باب عشرۃ النساء)
ایک اور حدیث مبارک میں ہے:" خيركم خيركم لأهله وأنا خيركم لأهلي".(مشکاۃ المصابیح، 2/281، باب عشرۃ النساء)
رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: تم میں بہترین شخص وہ ہے جو اپنے اہل (بیوی، بچوں، اقرباء اور خدمت گزاروں) کے حق میں بہترین ہو، اور میں اپنے اہل کے حق میں تم میں بہترین ہوں۔
رسول کریم ﷺ نے فرمایا: مؤمنین میں سے کامل ترین ایمان اس شخص کا ہے جو ان میں سے بہت زیادہ خوش اخلاق ہو، اور تم میں بہتر وہ شخص ہے جو اپنی عورتوں کے حق میں بہتر ہے۔
ایک اور حدیث مبارک میں ہے:"قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «لا يفرك مؤمن مؤمنةً إن كره منها خلقاً رضي منها آخر ۔(مشکاۃ المصابیح، 2/280، باب عشرۃ النساء)
کوئی مسلمان مرد کسی مسلمان عورت سے بغض نہ رکھے، اگر اس کی نظر میں اس عورت کی کوئی خصلت وعادت ناپسندیدہ ہوگی تو کوئی دوسری خصلت وعادت پسندیدہ بھی ہوگی۔
فقط واللہ اعلم بالصواب