Monday | 19 August 2019 | 18 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 150 Category: Business Dealings
Seeking Divorce to Marry Another Man

Assalamualaikum Warahmatullah

A man and women, both belonging to noble Islamic families were married together. It has been almost 14 years since they got married and have two daughters age 9 and 12. The husband is extremely caring, loving and pious person and is very courteous. Their family members recently found out that the two had been having some issues for past few years as a result of which the wife wants to end this marriage. The woman says that she has never been happy with this marriage, there are physical shortcomings due to which he had never been able to fulfill the needs of a proper marital relation. Due to this issue, she wanted to get separation. In the meantime, this woman started established a relationship with another man, and their affair has been going on for past few years, while her husband had been out of the country. This man is single, is willing to marry this woman and is ready to adopt her two daughters legally as well. According to our knowledge, the woman can demand for a divorce or Khula‘ due to the husband’s physical shortcomings, but the real question is whether Islam permits this woman after the divorce / Khula‘ and the completion of the period of ‘iddah, to marry this man who she had been having relations with while she was still married? It seems as if she had already made up her mind for this marriage but she has made the physical issue a basis for demanding the divorce. Please guide us regarding this issue.

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

This is an act of utmost shamelessness, immorality and audacity that the woman cheated on her husband and establish such heinous relations with someone other than her husband, in his absence. If she was approaching a point where she had a fear of falling in the trap of sin, she should have contacted her husband instead of contacting someone else. Similarly, the husband should not have left his wife alone for such a long period that she would be tempted towards the trap of sins. It is incumbent and mandatory upon this woman to sever all ties with this man immediately, perform firm repentance and astaghfar and make firm intention of never engaging in such an abominable act ever again.

As far as ending the Nikah due to issues, pertaining to the physical relations is concerned, your knowledge in this regard is inaccurate, since there are children from the husband, and not one but two, then it is clear and evident that there is no meaning of such an objection on him. In addition, just by making a verbal statement like that and making up one’s mind to end the Nikah, is a decision full of foolishness, temporary youth and the effect of those heinous relations out of the marriage. Even if there is merit to a claim like that, there are rules and regulations to deal with such a situation. Even if the woman’s claims are substantiated, the Nikah cannot be ended just like that. The man is given the time to get medical treatment etc. and if that does not result in any betterment, then the next steps are taken.

As far as performing Nikah with another man who a woman had marital relations even before performing Nikah, after completing the period of ‘iddah which was a result of a Talaq or Khula‘, it is permissible to perform such Nikah. However, this act will be full of shamelessness that the woman will leave her husband of so many years after cheating on him with someone else. If this woman is thinking that leading a life with the kids just because the new man is going to adopt them will become easy is daydreaming. Just by adoption, a guarantee for a bright future is not established, instead there are issues which arise later and the realization comes at that point when it is too late.

In our recommendation, it is not suitable at all to take this action at this point. If the claims you are making do have any merit at all then we recommend that you get in contact with a Darul-Qadha in your locality to get satisfaction in this issue.

 فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 150 Category: Business Dealings
دوسرے مرد سے شادی کے لئے شوہر سے طلاق کا مطالبہ

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ ،ایک عورت جس کا بہت اچھے گھرانے سے تعلق ہے اس کی شادی ایک بہت اچھے گھرانے کےمرد کے ساتھ ہوئی ،دونوں یعنی اسلامی گھرانے تھے، ان کی شادی کو قریب 14 سال ہوچکے ہیں اور دو بیٹیاں ہیں 9 اور 12 سال کی ،شوہر بہت ہی خیال رکھنے والا محبت کرنے والا اور نیک انسان ہے اور بہت ہی ادب و آداب کا بھی مالک ہے ،ابھی خاندان والوں کو یہ معلوم ہوا کہ میاں اور بیوی میں پچھلے کئی سال سے ایک مسئلہ چل رہا ہے جس کی وجہ سے عورت علیحدگی بھی چاہ رہی ہے، مرد سے اس کا یہ کہنا ہے کہ وہ اس شادی سے کبھی بھی خوش نہیں رہی ،شوہر کی جسمانی کمزوریاں ہیں جس کی وجہ سے وہ کبھی بھی شادی کے تعلقات صحیح طور پر نہیں نباہ سکا اور اسی مسئلہ اور پریشانی کے تحت وہ علیحدگی چاہتی ہے اسی اثناء میں اس کا کسی اور مرد سے تعلق بھی پیدا ہوگیا اس دوران جس کے ساتھ اس کے ساتھ محبت کا رشتہ پچھلے چند سال سے چل رہا ہے اور شوہر جو ہے بیرون ملک میں کام کررہا تھا یہ مرد جو ہے ابھی کنوارہ ہے اس عورت سے شادی کیلئے راضی ہے اوراس کی دو بیٹیوں کو اڈپٹ کرنے کو بھی تیار ہے یعنی اپنی اولاد تسلیم کرنے کو بھی تیار ہے قانونی طور پر، ہمارے علم کے مطابق   جو جسمانی مسائل ہیں اس کی بنیاد پر وہ طلاق کیلئے تقاضہ تو کرسکتی ہے لیکن یہاں جو سوال ہے کہ کیا اسلام اس عورت کو طلاق یا خلع کے بعد عدت کے مکمل ہونے کے بعدکیا اس مرد سے شادی کی اجازت دیتی ہے جس کے ساتھ اس نے تعلقات قائم کئے ہوئے تھے حالانکہ وہ اس وقت شادی شدہ تھیں ایسا لگتا ہے اس نے پہلے سے دوسری شادی کا پلان بنا لیا ہے اور اب وہ شوہر سے طلاق اس بنیاد پر حاصل کرنا چاہتی ہے تاکہ وہ دوسری شادی کرسکے اس سلسلہ میں ہماری رہنمائی فرمادیجئے ۔جزاک اللہ خیرا.

 

 

 

 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ

الجواب وباللہ التوفیق

یہ انتہائی بے حیائی ،بے غیرتی اور بے شرمی کی بات ہے کہ عورت شوہر سے خیانت کرے،اور اس کے غائبانہ میں پرائے مردوں کے ساتھ تعلقات قائم کرے،اگر اس کو گناہ تک پہنچنے کی نوبت پیش آرہی ہے تو غیروں سے رابطہ کے بجائے شوہر سے رابطہ کرنا چاہئے تھا،اور شوہر کےذمہ بھی ضروری تھا کہ عورت کو اتنے وقت کے لئے چھوڑنا ہی نہیں چاہئے تھا کہ وہ گناہ کی طرف راغب ہو،اب عورت کے ذمہ ضروری ہےکہ وہ غیر مرد سے تعلقات بالکل ختم کردے،توبہ واستغفار کرے،اور آئندہ غیر مرد سے تعلق نہ رکھنے کا عزم مصمم کرلے،رہا جسمانی مسائل کے تحت نکاح کے ختم کرنے کا مسئلہ تواس سلسلہ میں آپ کی معلومات ناقص ہیں، چونکہ شوہر سے اولاد ہے،اور ایک بھی نہیں دو دو ہے،تو ظاہر ہے کہ شوہر پر اعتراض کرنا کوئی معنیٰ نہیں رکھتا،نیز اس طرح محض زبانی دعویٰ کرکے نکاح کےختم کا فیصلہ بھی انتہائی نادانی ،وقتی جوانی ،غیروں سے تعلقات کا اثر ہے، اس کے بھی کچھ طریقے اور اصول ہیں،اگر ان سے عورت کا دعویٰ ثابت بھی ہوجاتا ہے تب بھی نکاح یوں ہی ختم نہیں کیاجاسکتا،اس کو علاج ومعالجہ کی مہلت دی جاتی ہے ،اس کے بعد بھی حل نہ نکلے تو پھر کوئی اقدام کیاجاسکتا ہے،

رہا کسی عورت کا طلاق یا خلع حاصل کرکے عدت گزارنے کے بعد کسی اجنبی مرد جس سے ناجائز تعلقات پہلے ہی سے ہوں نکاح کا مسئلہ تو شریعت میں اس کی اجازت ہے،لیکن یہ بے غیرتی ہے کہ اتنے سال شوہر کے ساتھ گزارے جائیں اور بعد میں ناجائز تعلق قائم کرکے   اس کے ساتھ خیانت کی جائے،اور پھر اولاد کے لئےمستقبل اتنا آسان نہیں جتنا وہ خاتون سمجھ رہی ہیں،محض ان کو اڈاپٹ کرنے سے ان کا مستقبل سنورنہیں جاتا ،بلکہ اور مسائل ہوتے ہیں جو وقت آنے پر سمجھ میں آتے ہیں،ہماری رائے میں فی الحال یہ اقدام بالکل بھی مناسب نہیں ہے،اگر آپ واقعتا حق بجانب ہیں تو پھر کسی قریبی دار القضاء سے رجوع کرکے مسئلہ کی یکسوئی کرلیں۔

فقط واللہ اعلم بالصواب