Saturday | 02 March 2024 | 21 Shabaan 1445

Fatwa Answer

Question ID: 1777 Category: Dealings and Transactions
Warasat related question

Asalamo alaikum

Mera sawal warasat k baaray main hai. Meray 4 betay or aik beti hai. Meray 3 betay or 1 beti america main muqeem hai jubk mera bara beta danish karachi main hai. Mera aik flat hai karachi main jis main mera bara beta rehta hsi. Kuch dino pehly meray 3 betay or aik beti nay aik doosray ko gawah bna kar apni marzi say ye bayan diya k wo log apna hissa flat main Allah ki raza k liyay apni marzi say chortay hain or meray baray betay dsnish k hawalay krty hain.or na hi (maa ki ) zindagi main unko kuch chahyay is flat main say or na he (maa k ) marnay k baad.or ye flat baray bety danish k naam krskty hsin. Ab 1.5 months baad mera aik beta jo america main rehta hai wo badal gaya or mjh say(maa say)bolta hai k zindagi main to warasat ki taqseem hoti he nhi to is liyay warasat ki maafi bhi jaiz nahi (maa ki zindagi main). Wo to (maa k ) marnay k baad warasat apply hogi. To is liyay jo mery betay nay bayan diya tha apna hissa maaf krnay ka Allah ki raza k liyay wo ab us say mukur gya hai. Or kehta hai k agar zindagi main wo flat karachi walay bhetay danush k naam kiya gya to Allah k agay meri (yani maa ki) pakar hogi. Ab mera sawal ye hai k kiya us ka mukarna gawah bananay k baad apnay bayan say jaiz hsi??? Ya main porana wala bayan ko nazar msin rakhtay hoay wo flat karachi walay bety k nasm krskti hu?? Mery baki bacho ko koi etraz nhi hai bus aik beta aetraz kr rha hsi jb k pehly usi nay shuruwaat ki thi flat ka hissa chornay main Allah ki raza k liyay apni marzi say phir baki bacho nay maaf kiya tha. Please is ka reply jaldi btadain bhut larai jhagra create ho rha hai. Jazakallah


 

 

 

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

الجواب وباللہ التوفیق:

(۱) جس مال میں اولاد کا حق ثابت نہیں اس میں دست برداری کا کیا مطلب؟ زندگی میں ابھی آپ  کا حق ہے، مرنے کے بعد وارثین کا حق متعلق ہوگا، اس وقت کے اعتبار سے جو موجود ہوں گے وہ اس کے حق دار رہیں گے۔

(۲) یہ بات بھی واضح رہےکہ میراث شرعی حق ہے محض زبانی دست برداری  کافی نہیں ہے، بلکہ کسی کی وفات کے بعد میراث تقسیم  ہو اور وہ اس کو لے کر بعد میں کسی کے حوالہ کردیں تب وہ دست برداری شمار ہوگی۔ اس لئے فی نفسہ اولاد کی جانب سے اٹھایا ہوا نکتہ درست ہے، نیز اگر وہ اپنے حق کا مطالبہ کرتے ہیں تو وہ بھی درست ہے، زندگی میں دینا ضروری نہیں ہے،کیونکہ زندگی میں   اولاد کا کوئی حصہ نہیں ہوتا ، ہاں وفات کے وقت اس کی تقسم ضروری ہوگی۔ اور ان کے مطالبہ پر دینا بھی ضروری ہوگا۔ کیونکہ ان کے دست برادی سےان کا حق معاف نہیں ہوا۔

(۳) آپ کے فرزند ہوں یا کوئی بھی مسلمان مرد ہو یا عورت اگر کوئی وعدہ یا معاہدہ کرلیں تو اس کا پورا کرنا لازم اور ضروری ہے ، عہد و پیمان کو پورا کرنا  ایک شرعی اور اخلاقی ذمہ داری ہے، قرآن مجید میں اس کی تکمیل کا حکم دیا گیا،اس لئے اس کی پاس داری آئندہ ضرور کرنی چاہیے، بلا کسی عذر کے اس سے تخلف درست نہیں ہے۔

(۴) کوئی  بھی شخص اپنی حیات میں اپنے مال اور جائیداد میں اپنی مرضی کے اعتبار سے  تصرف کرکے اپنے مال کو خرچ کرسکتا ہے لیکن اپنے پورے مال یا جائیداد کو اس طرح خرچ  کردے کہ دوسرے  وارثین بلکل  محروم ہوجائیں یہ گناہ ہے، اس لئے  زندگی میں تقسم کی صورت  میں سب کو برابراحصہ دینا چاہیے،کسی کو دینا اور کسی کو محروم کرنا زیادتی ہے، ہاں ضرورت اور مجبوری کی وجہ سے کمی بیشی کی جاسکتی ہے۔

زندگی میں اگر تقسیم نہ ہوسکے تو مرنے کے بعد  جائیداد شرعی اعتبار سے تقسیم کرنا ضروری ہے، زندگی میں نہ لینے کا عہد کافی نہیں ہے، اگر وصیت کی ہوتو وارثین کے لئے وصیت غیر معتبر ہے۔

مسئلہ کے حل کی  ایک شکل یہ ہےکہ جو جائیداد آپ تقسیم کرنا چاہیں بیٹے اور بیٹیوں  میں جائیداد کو تقسیم  کردیں ، ایک بھائی جن کو اختلاف ہے ان کا حصہ ان کو دے دیاجائے ، بقیہ بھائی اور بہن اور آپ اپنے حصے اس بھائی کو ہبہ کردیں ،ان شاء اللہ اس سے تقسیم بھی درست ہوگی اور جھگڑا بھی ختم ہوگا۔

قال للہ تعالیٰ: ’’ وَالْمُوفُونَ بِعَهْدِهِمْ إِذَا عَاهَدُوا ‘‘ (القرآن الکریم)

المالک ھوا المتصرف فی ملکہ ...... کتاب الھبۃ (رد المحتار)۔

فقط واللہ اعلم بالصواب