Tuesday | 11 December 2018 | 3 Rabiul-Thani 1440

Fatwa Answer

Question ID: 225 Category: Worship
Utilization of Sadaqah and Zakat

Assalamu Alaikum Warehmatullahi Wabarakatuhu,

May Allah SWT reward you abundantly for your efforts. Aameen

My question is regarding donation. I know we can give Sadaqa to poor or needy people, charitable organizations, masajid and to relatives in need. In my city there is an Islamic school where kids memorize Quran to become Hafidh or Hafidha. This institution provides services to children for Quran memorization and to teach them how to read Quran with proper tajweed etc. This school is having an event to raise funds, can I give donation from my Sadaqah or should it be separate from Sadaqah.


Similarly in an different Islamic school there will be a competition among kids for best quality of Quran memorization, Qirat, Tajweed i.e. a Quran competition, they are asking for money as well. If I give them money can I consider it as giving Sadaqah or just a simple donation.

Please let me know

JazakAllahu Khaira

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

In principle, the wajib sadaqat such as zakat, sadaqatul-fitr, money owed as part of a nazr or mannat, shall be utilized to help the ghurabah and fuqarah (i.e. poor and needy). It is impermissible to utilize the money meant for such sadaqat in mosques and other social welfare institutions in which the funds collected are not utilized to help ghurabah and fuqarah, because usually the masraf (i.e. means to utilize) for such sadaqat is not present there.

If these schools are spending the money in the correct masraf then it is permissible to discharge one's wajib sadaqat in such places. Otherwise, one should utilize nafl sadaqat to help them instead. It should be noted that a lot of academies and institutions do not utilize these funds (sadaqat) in the correct masraf, therefore one should take every measure to confirm and get satisfaction that their money will be used in the correct masarif.

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 225 Category: Worship
صدقات و زکوۃ کے مصارف

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

اللہ تعالی آپ لوگوں کو آپ کی محنت کے لئے بے حد جزا عطا فرمائے، آمین۔

میرا سوال چندے سے متعلق ہے۔ مجھے یہ علم ہے کہ صدقہ (مثلا نقد) غریبوں، ضرورت مندوں، رفاحی اداروں ، مساجد وغیرہ کو دے سکتے ہیں ، لیکن میں یہ جاننا چاہتی ہوں کہ ہمارے شہر میں ایک ایسا اسلامک اسکول ہے جو بچوں کو قرآن کا حافظ بناتا ہے، ان کو تجوید سے قرآن پڑھانا سکھاتا ہے ، یہ لوگ ایک فنڈ ریزنگ کا پروگرام کر رہے ہیں جہاں وہ چندہ جمع کریں گے، کیا میں ان کو صدقے کے پیسوں میں سے چندہ دے سکتی ہوں یا اس کو علحدہ رکھنا ہو گا؟ ایسے ہی ایک اور اسلامک اسکول میں بچوں کے لئے قرأت ، تجوید وغیرہ کا مقابلہ ہونے والا ہے ، وہ لوگ بھی چندہ مانگ رہے ہیں ، کیا ان کو چندہ صدقے کی نیت سے دیا جا سکتا ہے یا پھر وہ محض چندہ ہو گا؟

جزاک اللہ خیرا

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

اصلا صدقات واجبہ( زکوۃ صدقہ فظر نذر و منت کی رقم وغیرہ) کا مصداق غرباء اور فقراء ہیں،مساجد اور ایسی رفاہی ادارے جن میں غرباء پر ان صدقات کو خرچ نہیں کیاجاتاان میں دینا جائز نہیں ہے،کیونکہ عموما وہاں صدقات کے مصارف نہیں ہوتے۔

اگر اسکول میں ان پیسوں کو صحیح مصرف میں خرچ کیاجاتا ہوتو وہاں صدقۂ واجبہ دیاجاسکتا ہے،ورنہ نہیں۔البتہ نفل صدقات کے ذریعہ ان کا تعاون کیا جاسکتا ہے۔

ذہن میں رکھیں کہ بہت سی اکیڈمی اور دینی ادارے ایسے ہیں جن میں ان صدقات کو صحیح مصرف میں خرچ نہیں کیاجاتا ،اس لئے وہاں دینے سے قبل اطمنان اور تحقیق ضرور کرلیں۔

فقط واللہ اعلم بالصواب