Saturday | 24 August 2019 | 23 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 256 Category: Worship
Correct Timing for Praying Salah

Assalamualaikum,

Every phone application shows multiple calculation methods for namaz timings under Hanafi school of thought, Which one should we use? Secondly, if a masjid follows other then hanafi where Isha time starts before the actual start timing hanafi, can we pray with such Imam in this case ?

JazakAllah,

الجواب وباللہ التوفیق 

The actual calculation of timings is done with the علامات سماویہ  heavenly signs which are mentioned in the Qur’an and Hadith and in the book of Fiqah and with these signs the applications and softwares are delevoped. Now one who is not familiar of these signs he is forced to depend on and takes help from these softwares. One point should be clear here that all the softwares or applications or جنتریاں almanacs are all estimated and based on assumptions, are not definite and absolute, i.e., the timings written in them are not 100% definite and absolute, these tools just provide benefit of convenience and dominant assumption. Today there is guidance available on the internet for the correct timings for every place in the world and the timings of salat for every place can easily be found out, and from the department of meteorology the research can be done in these issues, therefore, one should contact some religious madrasah or اہل حق معتبر (righteous credible reputable) scholars for these issues and practice according to the schedule and research told by them.

(مستفاد: فتاویٰ محمودیہ ۹؍۷۱-۷۳ میرٹھ)

As far as the issue of praying Ishaa salat behind someone before its time enters then in this situation it will not be correct for a حنفی مقتدی Hanafi follower to pray salat before its time enters, he should wait for some time, if some companions gather they should pray salat with Jama’at in the courtyard of the Masjid etc. otherwise pray salat olone.

فینبغي الاعتماد في أوقات الصلاۃ وفي القبلۃ علی ما ذکرہ العلماء الثقات في کتب المواقیت، وعلی ما وضعوہ لہا من الآلات کالربع والاصطرلاب، فإنہا و إن لم تفد الیقین، تفید غلبۃ الظن للعالم بہا، وغلبۃ الظن کافیۃ في ذٰلک۔ (شامي ۱؍۴۳۱ کراچی)

واللہ اعلم بالصواب،

Question ID: 256 Category: Worship
نماز پڑھنے کا صحیح وقت

 

 السلام علیکم

آج کل فون وغیرہ پر مختلف ایپلیکیشنز ہوتی ہیں، اور قریب ہر ایپلیکیشن میں نماز کے اوقات مختلف دکھائے جاتے ہیں ، حتی کہ حنفی اوقات بھی۔ ہمیں کس وقت کو لے کر اپنی عبادات کو سرانجام دینا چاہئے؟ دوسرا سوال یہ ہے کہ مسجد میں احناف کے وقت کے علاوہ اوقات کو لے کر چلا جاتا ہے، لہذا عشاء کا وقت پہلے داخل ہو جاتا ہے، کیا اس صور ت میں مسجد کے امام کے حساب سے چلا جا سکتا ہے؟

جزاک اللہ خیرا

 

الجواب وباللہ التوفیق

اوقات کی اصل تعیین   علامات سماویہ  سے کی جاتی ہے، جو قرآن و حدیث اور کتب فقہ میں مذکور ہے،ان علامتوں سے ایپلیکیشن اور سافٹ ویر بنائے جاتے ہیں،اب جس کو ان علامات سے واقفیت نہ ہو وہ ان سافٹ ویرس وغیرہ پر اعتماد کرنے پر مجبور ہوجاتا ہے،اور ان کا سہارا لیتا ہے، لیکن یہاں  یہ بات واضح رہنا چاہئے کہ جتنے سافٹ ویر یا اپلیکیشن یا جنتریاں ہیں وہ سب ظنی وتخمینی ہوتی ہیں، قطعی ویقینی نہیں ہوتیں، یعنی اُن میں درج  اوقات سو فیصد قطعی ویقینی نہیں ہوتے،بس یہ چیزیں سہولت اور ظن غالب کا فائدہ دیتی ہیں،اور آج کل انٹرنیٹ پر پوری دنیا کے تقریباً ہر مقام کے لئے صحیح اوقات کی رہنمائی موجود ہے،اورہر جگہ کے اوقات الصلوٰۃ بآسانی معلوم کئے جاسکتے ہیں، اورمحکمہ موسمیات سے بھی ان مسائل میں تحقیق کی جاسکتی ہے، اس لئے ان مسائل  میں اپنے علاقہ کے کسی دینی مدرسہ یا اہل حق معتبر علماء سے رابطہ کرکے ان کی بتائی ہوئی ترتیب  اور تحقیق پرعمل کرنا چاہئے۔ (مستفاد: فتاویٰ محمودیہ ۹؍۷۱-۷۳ میرٹھ)

رہا مسئلہ عشاء کی نماز کے وقت سے پہلے کسی کی پیچھے اداکرنے کا تو اس مسئلہ میں حنفی مقتدی کو قبل از وقت نماز ادا کرنا صحیح نہیں ہوگا،تھوڑی  دیر انتظار کرلیں اگر کچھ ساتھی جمع ہوجائیں صحن مسجد وغیرہ میں با جماعت نماز اداکرلیں ورنہ تنہا نماز پڑھ لیں۔

فینبغي الاعتماد في أوقات الصلاۃ وفي القبلۃ علی ما ذکرہ العلماء الثقات في کتب المواقیت، وعلی ما وضعوہ لہا من الآلات کالربع والاصطرلاب، فإنہا و إن لم تفد الیقین، تفید غلبۃ الظن للعالم بہا، وغلبۃ الظن کافیۃ في ذٰلک۔ (شامي ۱؍۴۳۱ کراچی)

فقط واللہ اعلم بالصواب