Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 290 Category: Miscellaneous
Can't trust my wife

Assalaamualaikum,

I was married before and had a wonderful life. The only issue was that I have no kids from her because of her age. The truth is that I feel very bad myself because it was my choice to marry again. Anyway, my first wife agreed and she said to go ahead and marry someone else. I am very sure she didn’t mean it but I left and married the second time. I have been married over 16 years and have two kids but my relationship with the new wife is very bad. I can’t trust her now, I don’t know what to do, please advise? I can’t leave with her as I can’t trust her. 

                                           الجواب وباللہ التوفیق

Favorable and unfavorable conditions happen in life. One should pass through with patience and courage. Especially when someone has two wives then the issue is more cumbersome. Commonly the deficiency is seen in the due fulfillment of the rights, therefore, you should fulfill both wives’ rights equally.

We can only give an opinion about the differences developed with your second wife, after knowing its reasons. It would be better if you consult with some local اہل حق (Ahl e Haq) experienced scholar letting him know your situation.  

 واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 290 Category: Miscellaneous
اپنی بیوی پر اعتماد نہیں کر سکتا

السلام علیکم

میری شادی شدہ زندگی اچھی خاصی گزر رہی تھی، صرف ایک مسئلہ تھا کہ میری بیوی کو اولاد نہیں ہوتی تھی، جس کی وجہ اس کی بڑی عمر تھی، مجھے اب بڑا  برا محسوس ہوتا ہے کیونکہ دوسری شادی کرنا میری اپنی خواہش تھی۔ بہرحال میری پہلی بیوی اس پر رضامند ہو گئی کہ میں دوسری شادی کر لوں۔ مجھے ایسا لگتا ہے کہ میری بیوی واقعی میں یہ نہیں چاہتی تھی۔ میری دوسری شادی کو ۱۶ سال ہو چکے ہیں اور میرے دو بچے ہیں لیکن میری نئی بیوی کے ساتھ تعلقات اچھے نہیں ہیں میں اس پر اعتبار نہیں کر سکتا، براہ کرم میری راہنمائی فرمائیے کہ میں کیا کروں۔

 

 

زندگی میں موافق اور مخالف حالات ہوتے ہی ہیں،اس میں صبر اور ہمت سے کام لینا چاہئے،خاص طور جب کسی کی دو بیویاں ہوتو مسئلہ اور بھی الجھن کا باعث ہوتا ہے اور عام طور پر حقوق کی ادائیگی میں بھی کوتاہی دیکھنے میں آتی ہے،اس لئے آپ دونوں کے حقوق برابر ادا کریں،اور جو دوسری بیوی سے نااتفاقی  ہوئی ہے  اس کی وجوہات جاننے کے بعد ہی اس بارے میں

کچھ کہاجاسکتا ہے،آپ براہِ راست  کسی تجربہ کار عالم دین کے سامنے حالات بیان کرکے ان سے مشورہ کرلیں تو زیادہ مناسب رہے گا۔

والسلام