Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 291 Category: Beliefs
Aameen ceremony allowed or Bid'aah

Assalaamualaikum, 

I wanted to ask, is doing Aameen ceremony for my child (a celebration that we do when our child finishes the first reading of Qur'aan), is allowed to do or is it a bid'aah.

Jazaak Allah Khair

الجواب وباللہ التوفیق

The completion of the Hifz ul Qur’aan is an occasion of happiness. In this regard there is room to express happiness by inviting the relatives and loved ones on the condition that there is no show off or pride in it. But the Scholars have told not to do it due to the ills comprising the customary Aameen Ceremony.

 (مستفاد از: احسن الفتاویٰ ۸؍۱۵۴)

عن أنس رضي اللّٰہ عنہ أنہ کان إذا ختم القرآن جمع أہلہ۔ (شعب الإیمان ۲؍۳۶۸ رقم: ۲۰۷۰)

ویستحب لہ أن یجمع أہلہ وولدہ عند الختم ویدعو لہم۔ (الفتاویٰ الہندیۃ، کتاب الکراہیۃ / الباب الرابع ۵؍۳۱۷ دار إحیاء التراث العربي بیروت)

لما فی ’’ الجامع لأحکام القرآن للقرطبي‘‘ : عن نافع عن ابن عمر قال : تعلم عمر البقرۃ فی اثنتی عشرۃ سنۃ فلما ختمہا نحر جزوراً ۔ (۱/۳۰)ما فی ’’ الحدیث النبوی ‘‘ : عن جابر بن عبد اللہ : ’’ أن رسول اللہ ﷺ لما قدم المدینۃ نحر جزوراً أو بقرۃً ‘‘۔ (صحیح البخاری:۱/۴۳۴)ما في ’’ أحسن الفتاوی ‘‘: وبہذا الحدیث خرج العلماء ہذہ الضابطۃ أن الدعوۃ شرعت فی السرور لا فی الشرور ۔ (۱/۳۵۴)(۳) ما فی ’’ القرآن الکریم ‘‘ : {وما أمروا إلا لیعبدوا اللہ مخلصین لہ الدین} ۔ (سورۃ البینۃ:۵) =

ویکرہ اتخاذ الطعام (إلی قولہ) واتخاذ الدعوۃ لقراء ۃ القرآن، وجمع الصلحاء، والقراء للختم، أو لقراء ۃ سورۃ الأنعام، أوالإخلاص۔ والحاصل أن اتخاذ الطعام عند قراء ۃ القرآن لأجل الأکل یکرہ۔ (شامي،کتاب الصلوۃ، باب صلوۃ الجنازۃ، مطلب في کراہۃ الضیافۃ من أہل المیت، زکریا ۳/۱۴۸، کراچی ۲/۲۴۰)وصرح الحنفیۃ: بأنہ یکرہ اتخاذ الطعام-إلی- واتخاذ الدعوۃ لقراء ۃ القرآن الخ (الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیہ ۱۶/۴۵)   

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 291 Category: Beliefs
آمین کی رسم کرنے کی اجازت یا بدعت

السلام علیکم

کیابچوں کے قرآن ختم ہونے پر آمین کی تقریب کرنا صحیح ہے؟یا پھر یہ بدعت ہے؟ جزاک اللہ خیرا۔

 

 

الجواب وباللہ التوفیق

قرآنِ پاک کے حفظ کی تکمیل خوشی کاموقع ہوتاہے، اِس مناسبت سے اپنی وسعت کے مطابق اَعزاء واَحباب کو جمع کرکے خوشی کے اظہار کی گنجائش ہے، بشرطیکہ اُس میں ریا تفاخر اور دکھلاوا نہ ہو۔لیکن مروجہ رسم آمین کے مفاسدپر مشتمل ہونے کی وجہ سے علماء نے اس سے منع کیا ہے۔

(مستفاد از: احسن الفتاویٰ ۸؍۱۵۴)

عن أنس رضي اللّٰہ عنہ أنہ کان إذا ختم القرآن جمع أہلہ۔ (شعب الإیمان ۲؍۳۶۸ رقم: ۲۰۷۰)

ویستحب لہ أن یجمع أہلہ وولدہ عند الختم ویدعو لہم۔ (الفتاویٰ الہندیۃ، کتاب الکراہیۃ / الباب الرابع ۵؍۳۱۷ دار إحیاء التراث العربي بیروت)

لما فی ’’ الجامع لأحکام القرآن للقرطبي‘‘ : عن نافع عن ابن عمر قال : تعلم عمر البقرۃ فی اثنتی عشرۃ سنۃ فلما ختمہا نحر جزوراً ۔ (۱/۳۰)ما فی ’’ الحدیث النبوی ‘‘ : عن جابر بن عبد اللہ : ’’ أن رسول اللہ ﷺ لما قدم المدینۃ نحر جزوراً أو بقرۃً ‘‘۔ (صحیح البخاری:۱/۴۳۴)ما في ’’ أحسن الفتاوی ‘‘: وبہذا الحدیث خرج العلماء ہذہ الضابطۃ أن الدعوۃ شرعت فی السرور لا فی الشرور ۔ (۱/۳۵۴)(۳) ما فی ’’ القرآن الکریم ‘‘ : {وما أمروا إلا لیعبدوا اللہ مخلصین لہ الدین} ۔ (سورۃ البینۃ:۵) =

ویکرہ اتخاذ الطعام (إلی قولہ) واتخاذ الدعوۃ لقراء ۃ القرآن، وجمع الصلحاء، والقراء للختم، أو لقراء ۃ سورۃ الأنعام، أوالإخلاص۔ والحاصل أن اتخاذ الطعام عند قراء ۃ القرآن لأجل الأکل یکرہ۔ (شامي،کتاب الصلوۃ، باب صلوۃ الجنازۃ، مطلب في کراہۃ الضیافۃ من أہل المیت، زکریا ۳/۱۴۸، کراچی ۲/۲۴۰)وصرح الحنفیۃ: بأنہ یکرہ اتخاذ الطعام-إلی- واتخاذ الدعوۃ لقراء ۃ القرآن الخ (الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیہ ۱۶/۴۵)   

واللہ اعلم بالصواب