Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 318 Category: Worship
Abnormal Menstrual Bleeding

Asalaamualaikum,

I have prolonged bleeding for the past 3-4 months. Though the blood stops flowing after 5-6 days, the spotting and slight brown discharge remain for 13 days. Please let me know with reference to Hadith as to when I can start praying and be closer to my husband.

JazakallahuKhair

الجواب وباللہ التوفیق

In the inquired situation, during the habitual number of days (the number of days of your normal period) you will remain in menstruation and impure/unclean. After that you will not be impure/unclean due to the spots you are seeing, rather you will remain pure/clean. During these days (after the habitual number of days) it will be compulsory on you to pray Salaat.

As far as the cohabitation with your husband is concerned, so when you had taken a bath after the conclusion of the period or duration time of one Salaat has passed, i.e., as much time passes in which you can take bath, put on clothes, and start Salaat then after passing of this much time it is permissible to establish marital relations with your husband.

عن علی قال اذاطہرت المرأۃ من المحیض ثم رأت بعد الطہر ما یریبہا فانما ہی رکضۃ من الشیطان فی الرحم فاذا رأت مثل الرعاف اوقطرۃ الدم اوغسالۃ اللحم توضأت وضوء ہا للصلوۃ ثم تصلی فان کان دما عبیطاً الذی لا خفاء بہ فلتدع الصلوۃ وعن علی فی المرأۃ تکون حیضہا ستۃ ایام اوسبعۃ ایام ثم تری کدرۃ اوصفرۃ اوتری القطرۃ اوالقطرتین من الدم ان ذلک باطل ولایضرہا شئیاً۔(سنن دارمی۱/۲۳۵) 

فی المعراج عن فخرالائمۃ: لو افتی مفتٍ بشیء من ھذہ الاقوال فی مواضع الضرورۃ طلباً للتیسیرکان حسناً، وخصہ بالضرورۃ لان ھذہ الالوان کلہا حیض فی ایامہ۔(شامی۱/ ۲۸۹)

ولیست الصفرۃ والکدرۃ بعد العادۃ حیضاً لقول ام عطیۃ ؓکنا لانعد الصفرۃ والکدرۃ بعد الطہرشئیا۔رواہ ابوداؤد والبخاری ولم یذکربعد الطہروالحاکم۔(الفقہ الاسلامی وادلتہ۱/ ۴۵۹)

وکان الشیخ ابومنصورالماتریدی ؒمرۃ یقول:فی الصفرۃ اذا رأتہا ابتداء فی زمان الحیض انہا حیض، وأما اذا رأتہا فی زمان الطہرواتصل ذلک بزمان الحیض فانہا لاتکون حیضاً۔ومرۃ یقول:اذا اعتادت المرأۃ ان تری ایام الطہرصفرۃ وایام الحیض حمرۃ فحکم صفرتہا یکون حکم الطہرحتی لوامتدت الطہرہی بہا لم یحکم بہا بالحیض فی شیء  فی ھذہ الصفرۃ،وحکمہاحکم الطہرعلی قول اکثرالمشایخ رحمہم اللّٰہ۔(الفتاوی التاتارخانیۃ ۱/ ۳۲۸)۔

وان لاقلہ الخ لایحل حتی تغتسل او تیمم بشرطہ او یمضی علیھا زمن یسع الغسل ولبس الثیاب الخ (الدر المختار علی ہامش ردالمحتارباب الحیض ج۱ ص ۲۷۲۔ط۔س۔ج۱ص۲۹۴)

ومن جملۃ ذلک التربیۃ … وکان الفقیہ محمد بن ابراہیم المیدانی یقول: ان التربیۃ لیست بشیء لان موضع الفرج اذا اشتدت فیہ الحرارۃ یخرج منہ ماء رقیق وہوالتربیۃ ۔(تاتارخانیہ۱/۳۲۹ )

الفقہ الاسلامی میں ہے :ولیست الصفرۃ والکدرۃ بعد العادۃ حیضاً ۔(الفقہ الاسلامی۱/۴۵۸)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 318 Category: Worship
عادت سے زیادہ ماہواری خون آنا

السلام علیکم

تین چار مہینے سے مجھے وقت سے زیادہ خون جاری رہتا ہے، حالانکہ خون ۵ – ۶ دن میں بند ہوجاتا ہے مگر (سپاٹنگ) دھبہ ۱۳ دن تک آتا رہتا ہے اور (براؤن ڈسچارج) بھورا  مادہ بھی.  برائے مہربانی مجھے حدیث کی روشنی میں بتائیے کہ میں نماز کب پڑھنا شروع کرسکتی ہوں اور اپنے خاوند کے قریب کب جاسکتی ہوں؟  

جزاک اللہ خیرا

 

الجواب وبااللہ  التوفیق

صورت مسئولہ میں ایام عادت کے مطابق آپ حائضہ  اور ناپاک رہیں گی، اس کے بعد جو دھبے نظر آرہے ہیں ان سے آپ ناپاک نہیں ہوں گی بلکہ پاک رہیں گی،ان میں(ایام عادت کے بعد) نماز ادا کرنا  آپ  کے لئےضروری ہوگا۔

رہا صحبت کا مسئلہ تو حیض منقطع ہونے کے بعد جب آپ غسل کرلیں یا ایک نماز کا وقت گزرجائے یعنی اتنا وقت گذر جاوے کہ اس میں غسل کر کے کپڑے پہن کر نماز شروع کر سکیں تو پھر شوہر کے ساتھ اتناوقت گرزنے کے بعد صحبت کرنا درست ہے۔

عن علی قال اذاطہرت المرأۃ من المحیض ثم رأت بعد الطہر ما یریبہا فانما ہی رکضۃ من الشیطان فی الرحم فاذا رأت مثل الرعاف اوقطرۃ الدم اوغسالۃ اللحم          توضأت وضوء ہا للصلوۃ ثم تصلی فان کان دما عبیطاً الذی لا خفاء بہ فلتدع الصلوۃ وعن علی فی المرأۃ تکون حیضہا ستۃ ایام اوسبعۃ ایام ثم تری کدرۃ اوصفرۃ اوتری القطرۃ اوالقطرتین من الدم ان ذلک باطل ولایضرہا شئیاً۔(سنن دارمی۱/۲۳۵) 

فی المعراج عن فخرالائمۃ: لو افتی مفتٍ بشیء من ھذہ الاقوال فی مواضع الضرورۃ طلباً للتیسیرکان حسناً، وخصہ بالضرورۃ لان ھذہ الالوان کلہا حیض فی ایامہ۔(شامی۱/ ۲۸۹)

ولیست الصفرۃ والکدرۃ بعد العادۃ حیضاً لقول ام عطیۃ ؓکنا لانعد الصفرۃ والکدرۃ بعد الطہرشئیا۔رواہ ابوداؤد والبخاری ولم یذکربعد الطہروالحاکم۔(الفقہ الاسلامی وادلتہ۱/ ۴۵۹)

وکان الشیخ ابومنصورالماتریدی ؒمرۃ یقول:فی الصفرۃ اذا رأتہا ابتداء فی زمان الحیض انہا حیض، وأما اذا رأتہا فی زمان الطہرواتصل ذلک بزمان الحیض فانہا لاتکون حیضاً۔ومرۃ یقول:اذا اعتادت المرأۃ ان تری ایام الطہرصفرۃ وایام الحیض حمرۃ فحکم صفرتہا یکون حکم الطہرحتی لوامتدت الطہرہی بہا لم یحکم بہا بالحیض فی شیء  فی ھذہ الصفرۃ،وحکمہاحکم الطہرعلی قول اکثرالمشایخ رحمہم اللّٰہ۔(الفتاوی التاتارخانیۃ ۱/ ۳۲۸)۔

وان لاقلہ الخ لایحل حتی تغتسل او تیمم بشرطہ او یمضی علیھا زمن یسع الغسل ولبس الثیاب الخ (الدر المختار علی ہامش ردالمحتارباب الحیض ج۱ ص ۲۷۲۔ط۔س۔ج۱ص۲۹۴)

ومن جملۃ ذلک التربیۃ … وکان الفقیہ محمد بن ابراہیم المیدانی یقول: ان التربیۃ لیست بشیء لان موضع الفرج اذا اشتدت فیہ الحرارۃ یخرج منہ ماء رقیق وہوالتربیۃ ۔(تاتارخانیہ۱/۳۲۹ )

الفقہ الاسلامی میں ہے :ولیست الصفرۃ والکدرۃ بعد العادۃ حیضاً ۔(الفقہ الاسلامی۱/۴۵۸)

واللہ اعلم بالصواب